اداریہ: ملتان و بہاولپور کینٹ بورڈ میں غیرقانونی ٹیکسوں کی وصولی اور توہین عدالت - Baithak News

اداریہ: ملتان و بہاولپور کینٹ بورڈ میں غیرقانونی ٹیکسوں کی وصولی اور توہین عدالت

سپریم کورٹ آف پاکستان کے واضح احکامات کے باوجودکنٹونمنٹ بورڈ ملتان اور بہاولپور میں سالہا سال سے غیرقانونی طور پہ تشہیری اور پارکنگ فیس کی مد میں شہریوں سے کروڑوں روپے وضول کیے جارہے ہیں اور اس مد میں ٹھیک ٹھیک کتنا پیسہ اکٹھا ہورہا ہے اس کا کسی کو کچھ پتا نہیں ہے کیونکہ اس حوالے سے کو‏ئی ریکارڈ کہیں موجود نہیں ہے۔ سپریم کورٹ پاکستا نے 2015ء میں ایس سی ایم آر 1385 میں تفصیلی فیصلہ دیا تھا دیا تھا کہ کینٹونمنٹ بورڈز ایکٹ 1924ء میں تشہیری اور پارکنگ فیس کی وصولی کی کوئی شق موجود نہیں ہے اور یہ عمل غیرقانونی ہے۔ جبکہ لاہور ہائیکورٹ ملتان بنچ نے بھی ملتان کینٹ بورڈ اور بہاولپور کینٹ بورڈ میں تشہیری فیس اور پارکنگ فیس کی وصولی کو غیرقانونی قرار دیا تھا۔ لیکن ملتان کینٹ بورڈ اور بہاولپور کینٹ بورڈ عدالتی فیصلوں کی کھلی خلاف ورزی کرتے ہوئے تشہیری فیس اور پارکنگ فیس کی وصولی کا عمل جاری رکھے ہوئے ہیں۔ دو ہزار اٹھارہ میں اس وقت ملتان بنچ کے جسٹس علی باقر نجفی کے پاس ایک رٹ پیٹشن دائر ہوئی جس کا فیصلہ 2020ء میں سامنے آیا جس میں انھوں تشہیری مقامات ،سائن بورڈز اور تشہیری مقصد کے لیے کھڑے کیے گئے کھمبوں کی نیلامی کا عمل روک دیا تھا۔ لیکن ملتان کینٹ بورڈ نے اس فیصلے کی بھی کھلی خلاف ورزی جاری رکھی ۔ 17 اکتوبر 2018ء میں سپریم کورٹ نے سوموٹو ایکشن لیتے ہوئے پورے پاکسان میں پبلک پراپرٹی پہ تشہیری مواد کی تنصیب کو خلاف قانون قرار دے ڈالا تھا لیکن اس قانون کی پابندی ملتان کینٹ بورڈ اور بہاولپور بورڈ نے نہیں کی اور تشہیری مواد کے ساتھ سائن بورڈ اور کھمبوں کی تنصیب پبلک پراپرٹی پہ کی جاتی رہی – ملتان کینٹ بورڈ ملتان کینٹ کی اہمم سڑکوں اور چوراہوں پہ پبلک پراپرٹی پہ پشہیری مواد کے ساتھ کھمبے جابجا کھڑے ہیں اور ڈیوائیڈر تک پہ تشہری بورڈ نصب ہیں – سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ سپریم کورٹ اور ہائی کورٹ کے واضح فیصلوں کی کھلی خلاف ورزی کیا توہین عدالت نہیں ہے؟ کیا توہین عدالت کا قانون ڈائریکٹر جنرل ملٹری لینڈز اینڈ کنٹونمنٹس ، ڈائریکٹر کنٹونمنٹس اور کینٹ کے ای او وغیرہ پہ لاگو نہیں ہوتا؟ کیا کینٹ بورڈ کے حکام کو عدالتوں کے فیصلوں کا مذاق اڑانے کا حق حاصل ہے؟ کئی سالوں سے جاری تشہیری اور پارکنگ فیس کی مد میں اربوں روپے جو وصول کیے گئے ان کا کوئی ریکارڈ بھی موجود نہیں ہے۔ ملتان اور بہاول پور کینٹ بورڈ کے اعلی افسران سے لیکر نچلے اہلکارووں تک سب بہتی گنگا میں ہاتھ دھوئے چلے جاتے ہیں۔ حیرت انگیز طور پہ ملتان کینٹ بورڈ کے اسٹنٹ سیکرٹری بورڈ تک کو یہ علم نہیں ہے کہ اس مد میں کہاں سے ٹیکس اکٹھا ہورہا ہے اور اس کا ریکارڈ کیپر کون ہے؟ کیا چیف جسٹس سپریم کورٹ یا چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ عدلیہ کے فیصلوں کی کھلی توہین پہ نوٹس لیں گے؟ کیا ذمہ دارانہ کے خلاف توہین عدالت کے تحت مقدمہ چلایا جاسکے گا؟

مزید جانیں

مزید پڑھیں

صارفین کو ریلیف کی فراہمی کیلئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں:محمد ارشد

حکومت پنجاب کی ہدایت پراشیاء ضروریہ کی مقررہ نرخوں پرفراہمی کو یقینی بنایاجائے لیہ( بیٹھک رپورٹ )ضلع میں صارفین کو ریلیف کی فراہمی کے لئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں تاکہ صارفین کو سستی اشیاء خورد نوش فراہم کی جاسکیںاس سلسلہ مزید پڑھیں

اپنا تبصرہ بھیجیں