افغانستان میں خواتین کی یونیورسٹیاں دوبارہ کھل گئیں۔ - Baithak News

افغانستان میں خواتین کی یونیورسٹیاں دوبارہ کھل گئیں۔

کابل: اگست میں طالبان کے اقتدار پر قبضے کے بعد پہلی بار بدھ کے روز افغانستان میں کچھ سرکاری یونیورسٹیاں دوبارہ کھل گئیں، خواتین کی کلاسوں میں شرکت کے لیے حکام کا کہنا تھا کہ انہیں جنسی طور پر الگ کیا جائے گا۔

لڑکیوں کے زیادہ تر ثانوی اسکولوں اور تمام سرکاری یونیورسٹیوں کو بند کر دیا گیا جب گروپ دوبارہ اقتدار میں آیا، اس خوف کو جنم دیا کہ خواتین کو دوبارہ تعلیم سے روک دیا جائے گا – جیسا کہ طالبان کے پہلے دور حکومت میں، 1996-2001 کے دوران ہوا تھا۔

ننگرہار یونیورسٹی میں قانون اور سیاسیات کی تعلیم حاصل کرنے والی زرلشتہ حقمل نے اے ایف پی کو بتایا، “یہ ہمارے لیے خوشی کا لمحہ ہے کہ ہماری کلاسز شروع ہو گئی ہیں۔”

“لیکن ہمیں اب بھی خدشہ ہے کہ طالبان انہیں روک سکتے ہیں۔”

ایک تجزیہ کار نے کہا کہ یونیورسٹیوں کا دوبارہ کھلنا طالبان کی بین الاقوامی شناخت کے راستے پر ایک “اہم نشان” ہے۔

حکام نے بتایا کہ لغمان، ننگرہار، قندھار، نمروز، فراہ اور ہلمند صوبوں میں یونیورسٹیاں بدھ کو کھل گئیں۔

مزید اس مہینے کے آخر میں ملک میں کہیں اور کام دوبارہ شروع کرنے کا شیڈول تھا۔

اے ایف پی کے ایک نمائندے نے بدھ کے اوائل میں خواتین کے ایک چھوٹے سے گروپ کو، جس نے پورے ڈھانپے ہوئے برقعے پہن رکھے تھے، لغمان یونیورسٹی میں داخل ہوتے دیکھا۔

وہ لوگ جنہوں نے شرکت کی — مقامی ٹیکسیوں اور بسوں میں کیمپس لے جایا گیا — وہ روایتی لباس میں ملبوس تھے جنہیں شلوار قمیض کہا جاتا تھا۔

حاضری بہت ہلکی تھی اور طالبان جنگجوؤں نے داخلی دروازے کی حفاظت کی، ایک تپائی پر نصب مشین گن بوم گیٹ پر ٹکی ہوئی تھی۔

زیادہ تر طلباء نے کلاس میں واپس آنے کے بارے میں اپنے خیالات پیش کرنے سے انکار کر دیا، کچھ کا کہنا تھا کہ انہیں حکام نے متنبہ کیا تھا کہ وہ پریس سے بات نہ کریں۔

صحافیوں کو لغمان کیمپس اور دیگر صوبوں کی یونیورسٹیوں میں داخلے سے روک دیا گیا۔

مزید جانیں

مزید پڑھیں

صارفین کو ریلیف کی فراہمی کیلئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں:محمد ارشد

حکومت پنجاب کی ہدایت پراشیاء ضروریہ کی مقررہ نرخوں پرفراہمی کو یقینی بنایاجائے لیہ( بیٹھک رپورٹ )ضلع میں صارفین کو ریلیف کی فراہمی کے لئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں تاکہ صارفین کو سستی اشیاء خورد نوش فراہم کی جاسکیںاس سلسلہ مزید پڑھیں

اپنا تبصرہ بھیجیں