افغان حکومت جلد یا بدیر تسلیم دوسرا آپشن نہیں:پاکستان - Baithak News

افغان حکومت جلد یا بدیر تسلیم دوسرا آپشن نہیں:پاکستان

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک):وزیراعظم عمران خان نے کہاہے کہ افغانستان میں طالبان حکومت کو تسلیم کرنے کا فیصلہ پاکستان اکیلے نہیں کر سکتا اور اس بارے پاکستان افغانستان کے اردگرد موجود تمام علاقائی ممالک کوساتھ لے کرچلنا چاہتا ہے، بھارت کو کشمیر کی حیثیت بحال کرنا ہو گی ، 5 اگست 2019ءسے پہلے والی پوزیشن پر جانے کے بعد ہی بھارت کے ساتھ بات چیت کر سکتے ہیں، اس وقت مذاکرات کرنا کشمیر کے لوگوں کے ساتھ غداری کے مترادف ہو گا، سنکیانگ چین کا حصہ ہے کوئی تنازع نہیں اور اس کو چین کے حصہ کے طور پر تسلیم کیا جاتا ہے، افغانستان میں امن اوراستحکام پاکستان اورامریکا دونوں کے مشترکہ مفاد میں ہیں، امن میں امریکا کے شراکت دار ہیں لیکن تنازعات میں نہیں۔ منگل کو فرانسیسی اخبار لی فگارو کو انٹرویو میں وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ہندوستان میں جوکچھ ہورہاہے اس پر وہ اپنے تمام ہندوستانی دوستوں کیلئے پریشان ہیں ، ایک تعلیم یافتہ ہندوستانی کیلئے اس وقت ہندوستان میں پلنابڑھناباعث تشویش ہوگا۔ افغانستان سے متعلق سوال پر وزیراعظم نے کہا کہ پہلے پاکستان افغانستان کے اردگردموجود تمام علاقائی ممالک کوساتھ لیکرچلنا چاہتاہے، ہم ان کے ساتھ مل کرمشترکہ قدم اٹھاناچاہتے ہیں۔

اگرپاکستان تنہاکوئی قدم اٹھاتاہے تو اس سے پاکستان پربہت زیادہ بین الاقوامی دباﺅآجائے گا۔ پاکستان اس وقت معاشی طور پر اپنے پیروں پرکھڑاہونے کی کوشش کررہاہے، جب ہماری حکومت آئی توملک دیوالیہ تھا، ہمارے پاس واجبات اداکرنے کیلئے پیسے نہیں تھے، ہماری توجہ کامرکز اس وقت معیشت ہے اورہم اپنی معیشت کواسی صورت میں اوپرلے جاسکتے ہیں جب دنیا کے ساتھ ہمارے اچھے تعلقات ہوں۔وزیراعظم نے کہاکہ آخری چیز جوہم نہیں چاہیں گے وہ عالمی تنہائی ہے،یعنی ہم واحدملک ہوں جوانہیں(طالبان حکومت) کوتسلیم کرے لیکن یہ کہتے ہوئے میرایقین ہے کہ آگے بڑھنے کاواحدراستہ یہ ہے کہ اگرتقریباًچارکروڑ افغانوں کی فلاح وبہبودکے خواہاں ہیں توافغان حکومت کوجلدیابدیرتسلیم کرنا ہے کیونکہ اس وقت کوئی دوسرامتبادل دستیاب نہیں۔وزیراعظم نے کہاکہ جب پچھلی بارطالبان کی حکومت تھی تو ان کاشمالی اتحاد کے ساتھ تنازعہ چل رہاتھا۔افغانستان میں اب کوئی تصادم نہیں جوکہ 40 سال بعدپہلاموقع ہے، سوائے چندچھوٹی موٹی دہشت گردتنظمیوں کے ملک تنازعات سے پاک ہے۔افغانستان میں جتنازیادہ استحکام ہوگا، اتناہی ان بین الاقوامی دہشت گردوں کے پنپنے کاامکان کم ہوگا لہذامیں محسوس کرتا ہوں کہ آگے بڑھنے کاواحدراستہ طالبان حکومت کوتسلیم کرناہے، پاکستان اکیلاایسانہیں کرسکتا، ہم تمام علاقائی ممالک سے مشاورت کررہے ہیں لیکن افغانستان کے عوام کی فلاح کیلئے جلد یابدیرانہیں افغانستان کوتسلیم کرنا پڑے ہوگا۔ وزیراعظم نے کہاکہ اس بات پربین الاقوامی اتفاق رائے ہے افغانستان میں ایک جامع حکومت ہونی چاہیے، دوسراانسانی حقوق خاص طورپرخواتین کے حقوق کاتحفظ ہونا چاہیے ، طالبان کی حکومت نے دونوں کاوعدہ کیاہے، انہوں نے انسانی حقوق اورانہوں نے جامع حکومت کی بات کی ہے۔

اب سوال یہ ہے کہ طالبان ایساکیا کرے جس سے دنیامطمن ہو کہ طالبان نے شرائط پوری کردی ہیں، اس وقت یہ صورتحال ہے کہ وہ اب تک دونوں شرائط پرراضی ہوچکے ہیں۔وزیراعظم نے کہاکہ امیرمتقی کے دورہ میں کوئی ٹھوس یقین دہانی تو نہیں کرائی مگرانہوں نے اس اصول پراتفاق کیا کہ وہ اس بابت آگے کیسے بڑھیں گے۔ اگرکوئی افغانوں کے کردارسے واقف ہے تو اسے یہ ادراک ہونا چاہئے کہ وہ بہت فاخرلوگ ہیں اورآپ انہیں مجبورنہیں کرسکتے، وہ بیرونی مداخلت سے نفرت کرتے ہیں، 2001 میں پاکستان ان تین ممالک میں سے ایک تھاجنہوں نے افغانستان کوتسلیم کررکھاتھا،اس کے باوجود جب پاکستان نے طالبان سے یہ کہنے کی کوشش کی کہ وہ اسامہ بن لادن کو امریکاکے حوالے کردے تو انہوں نے صاف انکار کردیا۔ اس لئے ایک حد تک بیرونی دباﺅ کسی حکومت پر اثر اندازہو سکتا ہے۔ خاص طور پر ایسی حکومت پر جو طالبان کی طرح بہت زیادہ آزادی پسند ہے۔ صرف متنبہ کرنے کے لئے اگر کوئی یہ سوچتا ہے کہ اس عمل کے لئے آپ انہیں مجبور کر سکتے ہیں تو ایسا نہیں ہونے والا ہے اور ہمیں توقع بھی نہیں کرنی چاہئے کیونکہ خواتین کے حقوق کے متعلق افغانستان کے لوگ کیاسوچتے ہیں اور مغرب میں خواتین کو کیا حقوق حاصل ہیں ان دونوں کے درمیان ایک بڑی خلا ہے۔ خواتین کے لئے مغربی طرزکے حقوق کی اگرکوئی توقع کررہاہوں توافغانستان میں ایسا نہیں ہوگا تاہم وہ اس بات سے متفق ہے کہ لڑکیوں کو تعلیم حاصل کرنے کی اجازت ہونی چاہیے۔ کم از کم یہ ایک ایسا نقطہ ہے جس پر جب وہ یہاں آئے تو انہوں نے اتفاق کیا۔ وزیراعظم نے کہا کہ دو خدشات موجود ہیں پہلا تو پناہ گزین ہیں۔ پاکستان میں پہلے ہی چالیس لاکھ سے زیادہ پناہ گزین موجود ہیں اور تشویش ناک بات یہ ہے کہ اگر افغانستان میں حالات بگڑتے ہیں ، اگر یہ انسانی بحران بد تر ہوتا ہے تو ملک میں پناہ گزینوں کاایک سیلاب آئے گا۔ پاکستان مزید پناہ گزینوں کا متحمل نہیں ہو سکتا۔ ہمارے پاس وسائل نہیں ہیں۔ دوسرا یہ کہ سقوط کابل سے قبل افغانستان سے تین گروہ کاررائیاں کررہے تھے پہلے نمبر پر ٹی ٹی پی پاکستانی طالبان، دوسرا بلوچ دہشت گرد تھے اور تیسرے نمبر پر داعش تھی۔

اس لئے ہمارا پختہ یقین ہے کہ جتنی زیادہ مستحکم افغان حکومت ہوتی جائے گی ان گروہوں کو وہاں سے کارروائیاں کرنے کے مواقع کم ملیں گے، اس لئے ہمارے پاس مضبوط دلائل ہیں۔ پاکستان کے پاس افغانستان میں استحکام کی مضبوط ترین دلیل ممکنہ مہاجرین اور دہشتگردی ہے۔طالبان حکومت کی جانب سے اپنی سر زمین کو دیگر ممالک کے خلاف دہشت گردی کے استعمال نہ کرنے کے سوال پر وزیراعظم نے کہا کہ انہیں طالبان حکومت پر بھروسہ ہے۔ عالمی برادری نے کشمیرکو پاکستان اور بھارت کے درمیان ایک تنازعہ کے طور پر تسلیم کیا ہے، کشمیر کے لوگوں کو ضمانت دی گئی تھی ،جو بھارت نے بھی تسلیم کیا تھا ،کہ وہ استصواب رائے کے ذریعے فیصلہ کریں گے کہ آیا وہ پاکستان کے ساتھ جانا چاہتے ہیں یا بھارت کے ساتھ، وہ استصواب رائے آج تک نہیں ہوا، کشمیر کو بھارتی آئین میں خصوصی حیثیت حاصل تھی، 2019ءمیں بھارت نے یکطرفہ طور پر یہ حیثیت ختم کر دی، کشمیر مکمل طور پر مختلف معاملہ ہے، یہ پاکستان اور بھارت کے درمیان ایک متنازعہ علاقہ ہے، یہی وجہ ہے کہ پاکستان کشمیر کے لوگوں کی بات کرتا ہے کیونکہ ایک تہائی کشمیر پاکستان کے پاس ہے، بھارت کے زیر قبضہ کشمیر سے آئے ہوئے بہت سے پناہ گزین پاکستان میں رہائش پذیر ہیں، اس لئے یہ معاملہ براہ راست پاکستان سے متعلق ہے، دنیا بھر میں شام سے لے کر لیبیا، صومالیہ اور عراق میں مسلمانوں کے ساتھ بہت کچھ ہو رہا ہے لیکن اس وقت میرے خصوصی تحفظات کشمیر کے حوالہ سے ہیں جو پاکستان اور بھارت کے درمیان ایک متنازعہ معاملہ ہے۔ پاک۔امریکا تعلقات سے متعلق سوال پر وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان کے امریکہ کے ساتھ بہت اچھے تعلقات ہیں، ہمارے امریکا کے ساتھ ہمیشہ اچھے تعلقات رہے ہیں، پاک۔امریکا تعلقات کے بعض پہلووں پر میں نے ہمیشہ تنقید کی ہے، جس پہلو کو میں نے سب سے زیادہ تنقید کا نشانہ بنایا ہے وہ دہشت گردی اور افغانستان میں ہونے والی جنگ ہے، میں نے کبھی نہیں سوچا تھا کہ افغانستان کے مسئلہ کا فوجی حل نکلے گا، ابتداءمیں کچھ واضح نہ تھا کہ وہ افغانستان میں کس مقصد کے تحت آئے ہیں، کیا ان کے پیش نظر قوم کی تعمیر تھی یا خواتین کو حقوق دلانے کی بات تھی یا انسانی حقوق کا معاملہ تھا، وہ وہاں جمہوریت لانے کیلئے کیا کر رہے ہیں کیونکہ ان کے مقاصد واضح نہیں تھے، کسی کو معلوم نہ تھا کہ وہ افغانستان میں کیا کر رہے ہیں، میں نہیں سمجھتا کہ امریکیوں کو بھی معلوم تھا کہ وہ کیا کر رہے ہیں، افغانستان میں کیا کامیابی تھی کسی کو معلوم نہ تھا، میں نے ہمیشہ افغانستان میں ہونے والی اس مہم جوئی پر تنقید کی، وہ جو کچھ بھی حاصل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں

اس کا کوئی فوجی حل نہیں ہے، دوسری بات دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی شرکت ہے، میں نہیں چاہتا تھا کہ پاکستان اس جنگ میں حصہ لے اور اس کی ایک وجہ تھی، 80ءکی دہائی میں افغانستان میں سوویت یونین کے خلاف جنگ میں پاکستان نے امریکہ کی مدد کی تھی، مجاہدین کو مسلح کیا اور جہاد میں شرکت کرنے والوں کو ہیرو قرار دیا گیا کیونکہ وہ سوویت یونین کے قبضہ کےخلاف برسر پیکار تھے، ہم نے سی آئی اے کے ہمراہ ان کی تربیت کی تھی، 10 سال بعد 1989ءمیں سوویت فوجیں افغانستان سے چلی گئیں، پھر 2001ءمیں امریکی افغانستان میں آ گئے، اب انہی لوگوں کو جن کو ہم نے غیر ملکی قبضہ کے خلاف جنگ کی تربیت دی تھی، ہم یہ بتا رہے تھے کہ امریکی قبضہ کے خلاف جنگ دہشت گردی ہے تو وہ ہمارے خلاف ہو گئے، میرا نکتہ نظر یہ تھا کہ ہمیں غیر جانبدار رہنا چاہئے تھا، اس لئے پاکستانی طالبان ہمارے خلاف ہو گئے کیونکہ سوویت فوجوں کے خلاف ساری کارروائیاں ہمارے قبائلی علاقوں سے کی گئی تھیں جو افغانستان کے ساتھ ملحقہ اضلاع ہیں، وہاں کے لوگ پاکستانی طالبان بن گئے اور ہمارے خلاف ہو گئے، دوسری بات یہ ہے کہ مجاہدین کے پرانے گروپ جیسے کہ القاعدہ بھی پاکستان کے خلاف ہو گئے ج اور اس کے نتیجہ میں پاکستان کو 80 ہزار قیمتی جانوں کا نقصان اٹھانا پڑا۔ وزیراعظم نے کہا کہ امریکا کے کس اتحادی نے اتنے زیادہ لوگوں کا نقصان اٹھایا ہے، اس کے باوجود افغانستان میں ناکامی پر پاکستان کو ذمہ دار ٹھہرایا گیا، میں نے اس سے اتفاق نہیں کیا تھا لیکن اس کے علاوہ اس وقت امریکا کے ساتھ ہمارے مشترکہ مقاصد ہیں، ہم افغانستان سے کسی قسم کی دہشت گردی نہیں چاہتے، ہم عالمی دہشت گردی کے خلاف ہیں، امریکا بھی یہی چاہتا ہے اس لئے ہمارے مفادات مشترک ہیں، میں امید کرتا ہوں کہ امریکہ بھی اس بات کا احساس کرے گا۔ وزیراعظم نے کہا کہ امریکہ ابتداءمیں عالمی دہشت گردی یعنی القاعدہ کا مقابلہ کرنے کیلئے افغانستان آیا تھا، اب اگر وہاں بحران کی کیفیت پیدا ہو جاتی ہے تو ایک بار پھر وہاں وہی صورتحال پیدا ہو جائے گی اس لئے ہمارا مفاد مشترک ہے جو کہ افغانستان میں استحکام ہے۔ افغانستان میں فضاءسے نگرانی و آپریشن کی پالیسی حکمت عملی میں شمولیت کے سوال پر وزیر اعظم نے کہا کہ ایسا صرف طالبان کی حکومت کی اجازت سے ہو سکتا ہے اگر وہ اجازت دے تو تبھی ایسا ہو سکتا ہے بصورت دیگر یہ ہماری آخری خواہش ہو گی کہ افغان حکومت کے ساتھ کوئی تنازعہ ہو، 80 ہزار جانوں کا نقصان اٹھانے کے بعد پاکستان ایک اور تنازعہ کا متحمل نہیں ہو سکتا، ہم امن میں امریکہ کے شراکت دار ہیں لیکن تنازعات میں نہیں۔

ایک سوال پر وزیراعظم نے کہا کہ وہ امریکہ پر الزام نہیں لگاتے بلکہ اپنی ملکی قیادت کو ذمہ دار سمجھتے ہیں، ملکی قیادت کا کام یہ ہے کہ وہ اپنے لوگوں کے مفادات کا تحفظ کرے یہ امریکا کا کام نہیں ہے کہ وہ پاکستانی عوام کے مفادات کا تحفظ کرے، پاکستان نے خود کو استعمال کرنے کی اجازت کیوں دی، یہ واضح ہے کہ ہم 80ءکی دہائی میں افغانستان میں سوویت یونین کے خلاف امریکا کی جنگ کا حصہ بنے، اس جنگ کے خاتمہ کے ایک سال بعد ہم پر پابندیاں عائد کر دی گئیں، پاکستان کو اس وقت سیکھنا چاہئے تھا، یہی وجہ ہے کہ میں نے 2001ئے بعد امریکا کی دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کی شمولیت کی مخالفت کی تھی، اس کی پہلی وجہ یہ کہ ہم نے ان مجاہدین کو غیر ملکی قبضہ کے خلاف جنگ کی تربیت دی تھی، اب ہم انہیں کیسے روکتے اور جب ہم نے امریکا کا ساتھ دیا تو ہمارے خلاف ہو گئے، دوسری بات یہ کہ ہمیں لگا کہ ہمیں استعمال کیا گیا ہے، جب 1991ءمیں پاکستان پر پریسلر ترمیم کے ذریعے پابندیاں لگائی گئیں اس وقت ہمارے ہاں 40 لاکھ پناہ گزین رہائش پذیر تھے، پاکستان میں پہلی بار ہمیں لگا کہ ہمیں استعمال کیا گیا ہے، جب 1991میں پاکستان پر پریسلر ترمیم کے ذریعے پابندیاں لگائی گئیں اس وقت ہمارے ہاں 40 لاکھ پناہ گزین رہائش پذیر تھے، پاکستان میں پہلی بار کلاشنکوف کی آمد ہوئی اور مذہبی منافرت پھیلانے والے عسکری گروہ سامنے آئے، یہ 80ءکی دہائی میں ہونے والے افغان جہاد کا نتیجہ تھا، اس وقت میں نے ان کا ساتھ دینے کی مخالفت کی، میرا خیال تھا کہ ہمیں غیرجانبدار رہنا چاہئے تھا، مجھے آج بھی جارج بش کا بیان یاد ہے جس میں انہوں نے کہا تھا کہ وہ دوبارہ پاکستان کو نہیں چھوڑیں گے لیکن انہوں نے ایک بار پھر وہی کیا۔ فرانس کے دورہ سے متعلق سوال پر وزیراعظم نے کہا کہ ابھی نہیں لیکن وہ یقیناً فرانس کا دورہ کرنا چاہیں گے۔

مزید جانیں

مزید پڑھیں

صارفین کو ریلیف کی فراہمی کیلئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں:محمد ارشد

حکومت پنجاب کی ہدایت پراشیاء ضروریہ کی مقررہ نرخوں پرفراہمی کو یقینی بنایاجائے لیہ( بیٹھک رپورٹ )ضلع میں صارفین کو ریلیف کی فراہمی کے لئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں تاکہ صارفین کو سستی اشیاء خورد نوش فراہم کی جاسکیںاس سلسلہ مزید پڑھیں

اپنا تبصرہ بھیجیں