باکس رجسٹریشن لا کالج کی تحقیقات پراثرا نداز ہونے کی کوشش - Baithak News

باکس رجسٹریشن لا کالج کی تحقیقات پراثرا نداز ہونے کی کوشش

ملتان (ارشد ملک )جامعہ زکریا، ایل ایل بی 3 سالہ پروگرام سالانہ امتحان 2019سیکنڈل میں شامل بوگس لا کالج کی رٹ پٹیشن کے ذریعے یونیورسٹی انتظامیہ کی مبینہ ملی بھگت سے حقائق کے برعکس پروب کمیٹی کی کارروائی پر اثر انداز ہونے کی کوشش ۔ تفصیل کے مطابق۔ پاکستان سکول آف لا پاکپتن جس کا الحاق No.AFF/16537/REGd 29دسمبر2018کے تحت نہیں کیا گیا جسے دانستہ طور پر رٹ پٹیشن میں ظاہر ہی نہ کیاگیابلکہ ایک اور بوگس لیٹر نمبر 2364، 15فروری 2019کا حوالہ دےکر جعلسازی سے پروب کمیٹی کی سفارشات پر اثر انداز ہونے کی کوشش کی گئی ہے۔واضح رہے کہ 31 دسمبر 2018تک رجسٹرار آفس نے صرف 8لا کالجز کو الحاق دیا مگر پاکستان سکول آف لا پاکپتن کو جاری کیا گیا 15فروری 2019کا لیٹر مکمل طور پر بوگس اور نا جائز ہے۔ مذکورہ جعلی لیٹر کو نہ کنٹرولر آفس اور نہ ہی ڈائریکٹر کالجز ساہیوال کو جاری کیا گیا۔اس سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ اس کی تمام بوگس انرولمنٹ 31دسمبر 2018کے بعد 2019میں کی گئی ہیں۔علاوہ ازیں ایل ایل بی پارٹ فرسٹ دوسراسالانہ امتحان جو ابھی ہونا باقی ہے اس میں منصوبہ بندی کے تحت اس کالج کی بھی تقریبا 250طلبہ کی بوگس طریقے سے 2020اور 2021میں انرولمنٹ کی گئی جو قطعی طور پر غیرقانونی ہے ۔اس کا رجسٹریشن برانچ میں سرے سے ریکارڈ ہی نہیں ۔پاکستان سکول آف لا پاکپتن کے طلبہ جن کی بوگس انرولمنٹ کی گئی ان میں سے رولنمبر 2645، رجسٹریشن نمبر 2018، PSLP348،PST کاشف نور،رولنمبر 2663رجسٹریشن نمبر 2018، PSLP 312PSLP348 محمد شفیق ناز،رولنمبر 2907رجسٹریشن نمبر 2018، PSLP 363PSLP348 علی رضا،رولنمبر 2908 رجسٹریشن نمبر 2018، PSLP 391PSLP348 منصور علی سمیت تقریبا 250 طلبہ کے نام شامل ہیں ۔اس جعلسازی پر تعلیمی سماجی حلقوں نے گورنر و چانسلر ،وزیر اعلیٰ پنجاب ، چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ ،ڈی جی اینٹی کرپشن پنجاب اور وزیراعظم پاکستان سے مطالبہ کیا ہے کہ اس میگا کرپشن سیکنڈل میں ملوث ذمہ داروں کے خلاف فوری کارروائی عمل میں لائی جائے۔

مزید جانیں

مزید پڑھیں

صارفین کو ریلیف کی فراہمی کیلئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں:محمد ارشد

حکومت پنجاب کی ہدایت پراشیاء ضروریہ کی مقررہ نرخوں پرفراہمی کو یقینی بنایاجائے لیہ( بیٹھک رپورٹ )ضلع میں صارفین کو ریلیف کی فراہمی کے لئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں تاکہ صارفین کو سستی اشیاء خورد نوش فراہم کی جاسکیںاس سلسلہ مزید پڑھیں

اپنا تبصرہ بھیجیں