سب سے پہلے، UAE نے ویک اینڈ کو بدل کر ہفتہ اتوار کر دیا۔ اب، ایک بڑا نیا اصول - Baithak News

سب سے پہلے، UAE نے ویک اینڈ کو بدل کر ہفتہ اتوار کر دیا۔ اب، ایک بڑا نیا اصول

دبئی: متحدہ عرب امارات 2023 کے وسط سے کارپوریٹ ٹیکس متعارف کرائے گا، وزارت خزانہ نے پیر کو کہا کہ ایک بڑی تبدیلی کے طور پر یہ ملک اپنی آمدنی میں تنوع لانا چاہتا ہے۔
ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ خلیجی مالیاتی مرکز، جو طویل عرصے سے ٹیکس کی پناہ گاہ کے طور پر جانا جاتا ہے اور کثیر القومی کمپنیوں کے لیے علاقائی ہیڈکوارٹر ہے، اگلے سال جون سے 375,000 AED ($102,000) سے زیادہ کے کاروباری منافع پر 9.0 فیصد ٹیکس لگائے گا۔

یہ اعلان متحدہ عرب امارات کا تازہ ترین اہم اقدام ہے، جس نے عالمی منڈیوں کے ساتھ ہم آہنگ ہونے کے لیے اس سال جمعہ-ہفتہ کے اختتام ہفتہ سے ہفتہ اور اتوار کو تبدیل کر دیا ہے۔

“متحدہ عرب امارات کا کارپوریٹ ٹیکس نظام دنیا میں سب سے زیادہ مسابقتی ہوگا،” سرکاری خبر رساں ایجنسی ڈبلیو اے ایم کے ذریعہ جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے۔ نو فیصد دنیا بھر میں کارپوریٹ ٹیکس کے نچلے سرے پر ہے۔

وزارت نے کہا کہ رئیل اسٹیٹ یا دیگر سرمایہ کاری سے ذاتی انکم ٹیکس یا کیپٹل گین ٹیکس متعارف کرانے کا کوئی منصوبہ نہیں ہے۔

متحدہ عرب امارات، تیل کا ایک بڑا برآمد کنندہ بلکہ کاروبار، تجارت، نقل و حمل اور سیاحت کا ایک بڑا کھلاڑی، خام تیل پر انحصار کم کرنے کے لیے تنوع پیدا کر رہا ہے۔

اسے پڑوسی ملک سعودی عرب سے بڑھتے ہوئے مسابقت کا بھی سامنا ہے، جو دنیا کا سب سے بڑا تیل برآمد کنندہ ہے، جو اپنی معیشت کو متنوع بنانے اور غیر ملکی کاروباروں کو راغب کرنے کے لیے اپنی مہم چلا رہا ہے۔

وزارت خزانہ کے انڈر سیکرٹری، یونس حاجی الخوری نے بیان میں کہا، “کارپوریٹ ٹیکس کے تعارف کے ساتھ، متحدہ عرب امارات ٹیکس کی شفافیت کے لیے بین الاقوامی معیارات پر پورا اترنے اور نقصان دہ ٹیکس کے طریقوں کو روکنے کے لیے اپنے عزم کا ارادہ کرتا ہے۔”

مزید جانیں

مزید پڑھیں

صارفین کو ریلیف کی فراہمی کیلئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں:محمد ارشد

حکومت پنجاب کی ہدایت پراشیاء ضروریہ کی مقررہ نرخوں پرفراہمی کو یقینی بنایاجائے لیہ( بیٹھک رپورٹ )ضلع میں صارفین کو ریلیف کی فراہمی کے لئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں تاکہ صارفین کو سستی اشیاء خورد نوش فراہم کی جاسکیںاس سلسلہ مزید پڑھیں

اپنا تبصرہ بھیجیں