قومی سلامتی پالیسی کا قوم سے تعلق - Baithak News

قومی سلامتی پالیسی کا قوم سے تعلق

جویریہ اسلم سپرا

سنگاپور میں امتحانات سے قبل ایک اسکول کے پرنسپل نے بچوں کے والدین کو خط بھیجا جس کا مضمون کچھ یوں تھا۔ ” محترم والدین!آپ کے بچوں کے امتحانات جلد ہی شروع ہونےوالے ہیں میں جانتی ہوں آپ سب لوگ اس چیز کو لے کر بہت بے چین ہیں کہ آپ کا بچہ امتحانات میں اچھی کارکردگی دکھائے لیکن یاد رکھیں یہ بچے جو امتحانات دینے لگے ہیں ان میں (مستقبل کے) آرٹسٹ بھی بیٹھے ہیں جنہیں ریاضی سمجھنے کی ضرورت نہیں ہے۔ اس میں بڑی بڑی کمپنیوں کے ترجمان بھی ہونگے جنہیں انگلش ادب اور ہسٹری سمجھنے کی ضرورت نہیں۔ ان بچوں میں (مستقبل کے) موسیقار بھی بیٹھے ہونگے جن کیلئے کیمسٹری کے کم مارکس کوئی معنی نہیں رکھتے۔ ان سے انکے مستقبل پر کوئی اثر نہیں پڑنے والا۔ ان بچوں میں اتھلیٹس بھی ہو سکتے ہیں جن کے فزکس کے مارکس سے زیادہ انکی فٹنس اہم ہے لہذا اگر آپ کا بچہ زیادہ مارکس لاتا ہے تو بہت خوب لیکن اگر وہ زیادہ مارکس نہیں لا سکا تو خدارا اسکی خوداعتمادی اور اسکی عظمت اس بچے سے نہ چھین لیجئے گا۔ اگر وہ اچھے مارکس نہ لا سکیں تو انھیں حوصلہ دیجئے گا کہ کوئی بات نہیں یہ ایک چھوٹا سا امتحان ہی تھا وہ زندگی میں اس سے بھی کچھ بڑا کرنے کےلئے بنائے گئے ہیں!!!”۔میں یہ پڑھ کر حیران رہ گئی کہ کس طرح قومیں اپنے مستقبل کی فکر اور تیاری کرتی ہیں اور ایک ہم ہیں کہ ہمیں تجربات ہی سے فرصت نہیں ملتی اور سالوں کے بعد پتہ چلتا ہے کہ جس سمت ہم گامزن ہیں وہ تو سمت ہی غلط ہے۔ آجکل حالیہ قومی سلامتی پالیسی کا چرچا ہر جانب ہے۔ سنا ہے کہ پہلی بار قومی سلامتی سے مراد واقعتاً قوم کی سلامتی لیا جا رہا ہے۔ یاد رکھیے سلامتی کا مطلب فقط زندہ رہنا نہیں ہوتا بلکہ عزت اور حفاظت کیساتھ زندہ رہنا ہوتا ہے اور جب بات قوموں کی ہو تو سلامتی کے معانی اور بھی وسیع ہوا کرتے ہیں۔ قومی سلامتی پالیسی سے بطور پاکستانی شہری میری بہت سی توقعات وابستہ ہیں اور میں امید کرتی ہوں کہ اس میں میرے لئے خوراک کی فراہمی، میری تعلیم، صحت اور بنیادی انسانی حقوق کے ساتھ ساتھ اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ میں اپنے ملک میں مکمل طور پر محفوظ اور آزاد شہری ہوں اور کسی بھی ناگہانی آفت یا حادثے کی صورت میں مجھ پر اپنے ہی ملک کے کسی فرد، ادارے یا کسی غیر ملکی آفیشل کو ترجیح نہیں دی جائے گی۔ سانحہ ساہیوال جیسے کسی دردناک سانحے سے دوبار کسی شہری کو طاقت کے زور پر ظالم کیلئے معافی پر مجبور نہیں کیا جائے گا۔ سیاسی مفادات کیلئے کوئی ماڈل ٹاو¿ن نہیں کروایا جائے گا اور کوئی ریمنڈ ڈیوس ہمیں نہیں کچلے گا۔ کوئی خاتون اگر اکیلی ڈرائیو کرنا چاہے تو یہ اس کا جرم نہیں سمجھا جائے گا۔ سزا اور جزا کا عمل بلا تفریق ہوگا اور کوئی یہ نہ کہہ سکے گا کہ بھئی یہاں تو کچھ بھی ممکن ہے۔ اگر میں سردی میں کسی سیاحتی مقام پر پھنس جاو¿ں تو میری حفاظت کیلئے وہ ادارے موجود ہوں گے جو میرے بجٹ سے تنخواہ لیکر اس کام پر مامور ہیں اور مجھے یہ نہیں کہا جائے گا کہ برفباری کے دنوں میں برفباری ٹی وی پر بیٹھ کر دیکھ لیتے ، وہاں جانے کی کیا ضرورت تھی- حکومت میں آنے کے بعد کوئی سیاسی جماعت اپنی ناکامی کی ذمہ دار گزشتہ حکومت کو نہیں ٹھہرائے گی بلکہ آگے کا پلان بتاے گی اور میری قومی سلامتی یہ بھی ہے کہ گزشتہ حکومت کی غلط کاریوں کو ان کیمرہ انوسٹی گیشن کے ذریعے نمٹایا جائے تاکہ ہماری سیاست میں بلی چوہے کا کھیل کھیل کر حکومتی مدت پوری کرنے کا تماشہ ختم ہو اور ہم آگے بڑھ سکیں۔ گزشتہ کئی دہائیوں سے پالیسیوں کے بننے اور عملدرآمد نہ ہونے کی وجہ سے عوام میں ان پالیسیوں سے متعلق ایک مایوسی پائی جاتی ہے لیکن میں امید کرتی ہوں کہ اس بار کی قومی سلامتی پالیسی محض فائلوں تک محدود ہونے کی بجائے عملی طور پر قوم کی سلامتی کا باعث ہوگی-

مزید جانیں

مزید پڑھیں

صارفین کو ریلیف کی فراہمی کیلئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں:محمد ارشد

حکومت پنجاب کی ہدایت پراشیاء ضروریہ کی مقررہ نرخوں پرفراہمی کو یقینی بنایاجائے لیہ( بیٹھک رپورٹ )ضلع میں صارفین کو ریلیف کی فراہمی کے لئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں تاکہ صارفین کو سستی اشیاء خورد نوش فراہم کی جاسکیںاس سلسلہ مزید پڑھیں

اپنا تبصرہ بھیجیں