مدنی چوک فلائی اوور: خلاف ضابطہ فنڈز کے اجرا پر رپورٹ طلب - Baithak News

مدنی چوک فلائی اوور: خلاف ضابطہ فنڈز کے اجرا پر رپورٹ طلب

ملتان(سٹی رپورٹر) مدنی چوک فلائی اوور کے تعمیراتی منصوبے پر ایم ڈی اے کی سیلف انکم سے خلاف ضابطہ فنڈز جاری ہونے پر وفاقی حکومت نے متعلقہ اداروں سے رپورٹ طلب کرلی۔ مدنی چوک فلائی اور کی تعمیر کےلئے فنڈز وفاقی وزیر شاہ محمود کے دباو¿ پر جاری کئے گئے۔ میگا پراجیکٹ کےلئے فنڈز کے اجراءسے متعلق کسی بھی مجاز اتھارٹی سے منظوری نہ لی گئی۔ دوسری طرف اس منصوبے کا ٹھیکہ ایم ڈی اے کے رہائشی منصوبے فاطمہ جناح ٹاو¿ن کے ترقیاتی منصوبوں کی ٹھیکیدار کمپنی ”سارکو“ کو دیا گیا جس نے اس منصوبے کو طویل تاخیر کا شکار کیا اور جاری کام چھوڑ کر بھاگ گئی۔جس کی وجہ سے ایم ڈی اے کو ناقابل تلافی نقصان ہوا اور کالونی کے الاٹیوں کو بھی سخت پریشانی کاسامنا کرنا پڑا۔ اس کمپنی کے بھاگ جانے کے بعد سکیم میں پراپرٹی کی مارکیٹ ویلیو بھی تیزی سے گر گئی۔ اس پریشان کن صورتحال سے نکلنے کےلئے ایم ڈی اے نے سارکو کا ٹھیکہ کینسل کرکے اسکو رسک اینڈ کاسٹ کی بنیاد پر نئی کمپنی کو الاٹ کرنے کا فیصلہ کیا مگر بعد میں سارکو نے عدالت میں کیس کردیا۔ اسکے بعد ایم ڈی اے نے کمپنی کے ساتھ ڈیل کرکے فاطمہ جناح فیزII کا دوبارہ ٹھیکہ دےدیا۔ اس طرح کمپنی نے ٹھیکہ لینے کے ساتھ اپنی 4 کروڑ روپے کی سیکورٹی بھی ضبط ہونے سے بچا لی۔ اس منصوبے کے بعد سارکو کمپنی نے خراب ٹریک ریکارڈ کے باوجود مدنی چوک فلائی اوور کا ٹھیکہ ایک مرتبہ پھر حاصل کرلیا۔ دوسری طرف ایم ڈی اے حکام نے بھی کمپنی کے ساتھ بھرپور تعاون کرکے اسکا فلائی اوور کا ٹھیکہ لینے میں راستہ ہموار کیا۔ اس حوالے سے جب کمپنی کو پچھلے خراب ٹریک ریکارڈ کے باوجود مزید ٹھیکہ دینے بارے مو¿قف لیاگیا تو ایکسیئن رانا وسیم نے کہا کہ اس کمپنی کے ریٹس سب سے کم تھے ۔ہمارے پاس اسکے علاوہ کسی اور کمپنی کو ٹھیکہ دینے کا کوئی قانونی راستہ نہ تھا۔ انہوں نے مزید بتایاکہ فاطمہ جناح ٹاو¿ن کا اسکو دوبارہ ٹھیکہ عدالت کے فیصلے کی روشنی میں دیا گیا۔

مزید جانیں

مزید پڑھیں

صارفین کو ریلیف کی فراہمی کیلئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں:محمد ارشد

حکومت پنجاب کی ہدایت پراشیاء ضروریہ کی مقررہ نرخوں پرفراہمی کو یقینی بنایاجائے لیہ( بیٹھک رپورٹ )ضلع میں صارفین کو ریلیف کی فراہمی کے لئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں تاکہ صارفین کو سستی اشیاء خورد نوش فراہم کی جاسکیںاس سلسلہ مزید پڑھیں

اپنا تبصرہ بھیجیں