پاکستان میں اپنی مشہور بہن کا گلا دبانے والے شخص کو بری کر دیا گیا ہے۔ - Baithak News

پاکستان میں اپنی مشہور بہن کا گلا دبانے والے شخص کو بری کر دیا گیا ہے۔

اسلام آباد — اپنی بہن کو گلا دبا کر قتل کرنے والے شخص کی بریت کے بعد پاکستان میں غم و غصہ پایا جاتا ہے۔

ایک ایسے ملک میں جہاں نام نہاد “غیرت کے نام پر” قتل عام ہے، قندیل بلوچ کا معاملہ 2016 میں سوشل میڈیا اسٹار کے قتل کے بعد بین الاقوامی سرخیوں میں آیا، اور ایسے معاملات میں سخت سزاؤں کے لیے رفتار پیدا ہوئی۔

بلوچ نے قدامت پسند پاکستانیوں کو اسکینڈل کیا کیونکہ وہ ملاؤں کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کرتی تھی اور اگر اس کا ملک کرکٹ میں جیت گیا تو وہ کپڑے اتارنے کی پیشکش کرتی تھی۔ اپنی موت میں، بلوچ پاکستانی حقوق نسواں کے لیے ایک آئیکن بن گئی — کچھ تو خواتین کے دن کے مارچ میں اپنے چہرے کے ماسک بھی پہنتی ہیں۔ وہ اسے ایک ایسی عورت کے طور پر دیکھتے ہیں جس نے زندگی اپنی شرائط پر گزاری، اور اس کی قسمت کو اپنے پدرانہ معاشرے کے تشدد کی علامت کے طور پر دیکھتے ہیں۔

پاکستان کے قلب میں خواتین کے تحفظ کے لیے ‘رکاوٹوں کا ایک بہترین طوفان’

بلوچ، جو اپنی اصلیت کے بارے میں متضاد تھا، کا تعلق وسطی پاکستان کے ایک گہری قدامت پسند پٹی سے تھا۔ یہ اتنا قدامت پسند ہے کہ خواتین صرف اپنے چہروں پر نقاب ڈال کر گھر سے نکلتی ہیں۔ کچھ کو ننگے پاؤں چلنے کے لیے بنایا جاتا ہے تاکہ وہ ٹھوکریں کھانے سے بچنے کے لیے اپنی آنکھیں نیچے رکھنے پر مجبور ہوں۔ اس تفصیل کی اطلاع دینے والی صحافی صنم مہر نے بلوچ کی زندگی پر ایک کتاب لکھی جس کا نام اے وومن لائک ہر ہے جو 2020 میں شائع ہوئی۔

بلوچ کے بھائی کو 2019 میں عمر قید کی سزا سنائی گئی جب اس نے آزادانہ طور پر اسے قتل کرنے کا اعتراف کیا، مقامی میڈیا کو بتایا کہ اس کا رویہ “ناقابل برداشت” تھا اور اس نے اپنے خاندان کی بے عزتی کی۔
اس کے والدین نے شروع میں کہا کہ وہ اپنے بیٹے کو کبھی معاف نہیں کریں گے، لیکن بعد میں انہوں نے اپنا ارادہ بدل دیا۔ اس نے ان کے وکیل کو ان کی بریت کا مطالبہ کرنے کی اجازت دی، جسے پیر کو منظور کر لیا گیا۔

ملک میں حقوق نسواں کے علمبرداروں کے لیے، بری ہونا اس بات کی نشاندہی کرتا ہے کہ پاکستان میں خواتین کے لیے کتنا مضحکہ خیز انصاف ہے۔

“وہ اب ایک آزاد آدمی ہے،” بلوچ کے بھائی کی پاکستانی مصنفہ نزہت صدیقی نے ایک انسٹاگرام اسٹوری میں لکھا۔ “اگر یہ آپ کو یہ نہیں بتاتا ہے کہ یہ ملک خواتین سے نفرت کرتا ہے تو مجھے نہیں معلوم کہ کیا ہوگا۔”

مزید جانیں

مزید پڑھیں

صارفین کو ریلیف کی فراہمی کیلئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں:محمد ارشد

حکومت پنجاب کی ہدایت پراشیاء ضروریہ کی مقررہ نرخوں پرفراہمی کو یقینی بنایاجائے لیہ( بیٹھک رپورٹ )ضلع میں صارفین کو ریلیف کی فراہمی کے لئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں تاکہ صارفین کو سستی اشیاء خورد نوش فراہم کی جاسکیںاس سلسلہ مزید پڑھیں

اپنا تبصرہ بھیجیں