فرانسیسی عدالت نے 2009 میں مہلک حادثہ پریمن کی فضائی کمپنی کو مجرم قرار دے دیا - Baithak News

فرانسیسی عدالت نے 2009 میں مہلک حادثہ پریمن کی فضائی کمپنی کو مجرم قرار دے دیا

فرانس کی ایک عدالت نے یمن کی قومی فضائی کمپنی (الیمنیہ ایئرویز) کو2009 میں طیارے کیایک مہلک حادثے پرغیررضاکارانہ قتلِ عام کی مرتکب قراردیا ہے۔میڈیارپورٹس کے مطابق ایک عدالتی ترجمان نے بتایاکہ عدالت نے فیصلے میں الیمنیہ ایئرلائن کو 2لاکھ 25ہزاریورو (2لاکھ 25ہزار45ڈالر) جرمانہ ادا کرنے کا حکم دیا ہے۔
اس کے علاوہ اسے ہرجانے اور قانونی اخراجات کی مد میں دس لاکھ یورو سے زیادہ رقم بھی ادا کرنا ہوگی۔الیمنیہ ایئرویز نے فوری طور پر فرانسیسی عدالت کے اس فیصلے پرتبصرہ نہیں کیاہے۔یادرہے کہ یمن کی قومی فضائی کمپنی کا طیارہ خراب موسم کی وجہ سے بحرہند کے جزیرہ نما کوموروس کے قریب سمندر میں گر کر تباہ ہوگیاتھا۔ایئربس اے 310-300 کی یہ مسافر پرواز یمن سے روانہ ہوئی تھی۔اس میں 66 فرانسیسی شہریوں سمیت 153 افراد سوار تھے۔اس مہلک حادثے میں طیارے میں سوار صرف ایک مسافرلڑکی زندہ بچ سکی تھی۔اس وقت اس کی عمر 12 سال تھی۔

بھارتی طیارے میں اڑان بھرنے کی تیاری کے دوران آگ لگ گئی

Shakira could face 8 years in jail

عمران خان کی ڈھابوں سے کھانا کھاتے ویڈیوز وائرل

مزید جانیں

مزید پڑھیں

صارفین کو ریلیف کی فراہمی کیلئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں:محمد ارشد

حکومت پنجاب کی ہدایت پراشیاء ضروریہ کی مقررہ نرخوں پرفراہمی کو یقینی بنایاجائے لیہ( بیٹھک رپورٹ )ضلع میں صارفین کو ریلیف کی فراہمی کے لئے اقدامات اُٹھائے جارہے ہیں تاکہ صارفین کو سستی اشیاء خورد نوش فراہم کی جاسکیںاس سلسلہ مزید پڑھیں

اپنا تبصرہ بھیجیں