امریکہ 52 سال بعد چاند پر اترا، کمپنی نے لینڈر لینڈ کر کے تاریخ رقم کر دی

ایک نجی امریکی کمپنی نے پہلی بار چاند کی سطح پر اپنا مون لینڈر اتار کر تاریخ رقم کر دی ہے۔ ہیوسٹن میں قائم یہ Intuitive Machines نامی کمپنی پہلی نجی کمپنی بن گئی ہے جس نے اپنے لینڈر کو کامیابی کے ساتھ چاند پر اتارا ہے۔ کمپنی نے اوڈیسیئس نامی اپنے مون لینڈر کو چاند کے جنوبی قطب کی طرف اتارا ہے۔ لینڈر کو اتارتے وقت کنٹرولرز کا اس سے کچھ لمحوں کے لیے رابطہ منقطع ہو گیا لیکن پھر جلد ہی اسے سگنل ملنا شروع ہو گئے۔ فلائٹ ڈائریکٹر ٹم کرین نے تصدیق کی، “ہم بغیر کسی شک کے تصدیق کر سکتے ہیں کہ ہمارا آلہ چاند کی سطح پر پہنچ گیا ہے اور وہاں سے ہمیں سگنل بھیج رہا ہے۔” کمپنی کے سی ای او سٹیو آلٹیمس نے اپنی ٹیم کو بتایا، “چاند میں خوش آمدید، اوڈیسیئس کو ایک نیا گھر مل گیا ہے۔” Odysseus کو گزشتہ ہفتے فلوریڈا کے کیپ کیناویرل لانچ اسٹیشن سے لانچ کیا گیا تھا۔ یہ گاڑی 3 لاکھ 84 ہزار کلومیٹر (238،855 میل) کا فاصلہ طے کرنے کے بعد چاند پر پہنچی ہے۔

”امریکی خلائی پروگرام کے لیے اہم کامیابی”
مون لینڈر کے چاند کی سطح کو چھونے کی خبر آئی تو کمپنی کے ملازمین خوشی سے تالیاں بجانے لگے۔ اسے نہ صرف کمپنی اور تجارتی استعمال بلکہ امریکی خلائی پروگرام کے لیے بھی ایک اہم کامیابی قرار دیا جا رہا ہے۔ امریکہ نے 1972 میں اپالو مشن کے بعد سے اپنا مشن چاند پر نہیں بھیجا تھا۔ تقریباً پانچ دہائیوں میں پہلی بار، Intuitive Machines نے یہ ریکارڈ توڑا ہے اور اپنے Odysseus لینڈر کو چاند پر اتارا ہے۔ امریکی خلائی ایجنسی ناسا نے اوڈیسیئس لینڈر کے ذریعے چاند پر چھ سائنسی آلات بھیجے ہیں۔ ناسا کے ایڈمنسٹریٹر بل نیلسن نے کمپنی کو مبارکباد دیتے ہوئے اسے ایک بڑی فتح قرار دیا ہے۔ انہوں نے کہا، “امریکہ چاند پر واپس آ گیا ہے۔ آج انسانی تاریخ میں پہلی بار ایک تجارتی کمپنی، ایک امریکی کمپنی نے چاند کا سفر مکمل کیا ہے۔ آج کا دن ظاہر کرتا ہے کہ ناسا کی تجارتی شراکت کتنی مضبوط اور پرجوش ہے۔”

”لینڈنگ سے ٹھیک پہلے پریشانی ہوئی”
لینڈنگ سے عین قبل کنٹرولرز کو ایک بڑی پریشانی کا سامنا کرنا پڑا جس کی وجہ سے مشن کے ناکام ہونے کا خطرہ تھا۔ چاند کی سطح سے اوڈیسیئس کے فاصلے اور رفتار کی پیمائش کے لیے خلائی جہاز میں نصب لیزر ٹھیک سے کام نہیں کر رہے تھے۔ جس کی وجہ سے مشن کی کامیابی پر شکوک و شبہات بڑھنے لگے۔ لیکن اچھی بات یہ ہے کہ خلائی جہاز میں ناسا کی جانب سے بھیجے گئے کچھ تجرباتی لیزر بھی تھے اور سائنسدانوں نے اس کا فائدہ اٹھاتے ہوئے انہیں نیوی گیشن سسٹم سے جوڑ دیا۔اوڈیسیئس نے 23:23 (GMT) پر چاند کی سطح کو چھوا۔ پہلے تو سائنسدانوں کو اس میں رکھے روبوٹ سے کوئی سگنل نہیں ملا۔ کچھ دیر بعد گاڑی سے رابطہ بحال ہو گیا، حالانکہ یہ ایک کمزور سگنل تھا۔ اس کی وجہ سے لینڈر کی حیثیت کو لے کر کچھ دیر تک الجھن پیدا ہو گئی۔ لیکن پھر چند ہی گھنٹوں میں، بدیہی مشینوں نے اطلاع دی کہ اوڈیسیئس چاند کی سطح پر ہے اور وہاں سے ڈیٹا زمین پر بھیج رہا ہے۔

اپنا تبصرہ لکھیں