یوکرین میں جنگ: امریکہ نے خبردار کیا ہے کہ یوکرین ایک اہم شہر کھو سکتا ہے

امریکہ نے خبردار کیا ہے کہ روس یوکرین کے مشرق میں واقع اہم شہر اودیوکا پر قبضہ کر سکتا ہے۔ حالیہ مہینوں میں دونوں فریقوں کے درمیان شدید جھڑپیں ہوئی ہیں۔ امریکہ کی قومی سلامتی کونسل کے ترجمان جان کربی نے یوکرین میں ہتھیاروں اور گولہ بارود کی کمی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا، ’’اوڈیوکا کو روس کے ہاتھوں میں جانے کے خطرے کا سامنا ہے۔‘‘ یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی نے وعدہ کیا ہے کہ زیادہ سے زیادہ یوکرائنیوں کی زندگیاں بچانے کے لیے “ہر ممکن حد تک” کریں گے۔ اطلاعات کے مطابق روسی افواج نے ادیوکا میں پیش قدمی کی ہے اور اس شہر کے محاصرے کا خدشہ ہے۔ تقریباً مکمل طور پر تباہ شدہ شہر اُدیوک ڈونیٹسک کے قریب ہے، جس پر 2014 میں روس نواز ملیشیا نے قبضہ کر لیا تھا اور بعد میں اسے روس نے غیر قانونی طور پر الحاق کر لیا تھا۔
روسی صدر ولادیمیر پوتن نے 24 فروری 2022 کو یوکرین پر مکمل حملے کا حکم دیا۔ مسٹر کربی نے جمعرات کو واشنگٹن میں ایک میٹنگ میں بتایا کہ اوڈیوکا گر سکتا ہے کیونکہ “یوکرینی افواج کے توپ خانے کا گولہ بارود کم ہو رہا ہے۔” انہوں نے کہا کہ “روس یوکرائنی پوسٹوں پر یکے بعد دیگرے حملہ کرنے کے لیے متحرک افواج بھیج رہا ہے اور چونکہ کانگریس نے ابھی تک بل کی منظوری نہیں دی ہے، اس لیے ہم روسی حملوں کو روکنے کے لیے یوکرین کو میزائل فراہم نہیں کر سکتے۔” مسٹر کربی نے مزید کہا، “روسی افواج اڈیوکا میں خندقوں تک پہنچ گئی ہیں۔اس ہفتے کے آغاز میں امریکی کانگریس نے کئی ماہ کے سیاسی تنازعے کے بعد 95 ارب ڈالر کے غیر ملکی امدادی پیکج کی منظوری دی تھی، جس میں سے 60 ارب یوکرین کے لیے ہیں، لیکن اس منصوبے کو ایوان نمائندگان میں رکاوٹوں کا سامنا ہے۔ روس کے ساتھ جنگ ​​میں، جس کی بہت بڑی فوجی طاقت ہے، یوکرین امریکہ اور دیگر مغربی ممالک کے ہتھیاروں اور گولہ بارود پر بہت زیادہ انحصار کرتا ہے۔ نیٹو کے سیکرٹری جنرل جینز سٹولٹن برگ نے جمعرات کو خبردار کیا کہ یوکرین کو جاری فوجی امداد کی منظوری میں امریکہ کی ناکامی کا اثر میدان جنگ پر پہلے ہی پڑا ہے۔ مسٹر زیلینسکی نے جمعرات کو ایک ویڈیو تقریر میں کہا کہ “ہم یوکرینیوں کی جان بچانے کے لیے ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں۔” وہ جمعے کو برلن اور پیرس جائیں گے۔توقع ہے کہ وہ جرمن وزیر اعظم اولاف شلٹز اور فرانسیسی صدر ایمانوئل میکرون کے ساتھ سیکیورٹی معاہدے پر دستخط کریں گے۔ یوکرین کے ایک جنرل، اولیکسینڈر ترنافکسی نے جمعرات کو دیر گئے اعتراف کیا کہ اڈیوکا میں “سخت لڑائی” جاری ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم یوکرین کے تمام علاقے کی قدر کرتے ہیں لیکن ہمارے لیے پہلی قدر اور ترجیح یوکرین کے فوجیوں کی جان بچانا ہے۔ یوکرین کے کچھ فوجیوں نے نجی طور پر اعتراف کیا ہے کہ شہر کسی بھی وقت گر سکتا ہے۔

اپنا تبصرہ لکھیں