یوکرین کے شہر اوڈیوکا کا زوال؛ بائیڈن نے کانگریس کو شکست کا ذمہ دار ٹھہرایا

امریکی صدر جو بائیڈن نے اپنے ملک کی کانگریس کو روس کے ہاتھوں یوکرین کے شہر اوڈیوکا کے زوال کا ذمہ دار ٹھہرایا۔ مسٹر بائیڈن نے اپنے یوکرائنی ہم منصب ولادیمیر زیلنسکی کے ساتھ ٹیلی فون پر بات چیت میں کہا کہ واشنگٹن کی فوری کارروائی سے یوکرائنی افواج کے پاس کافی گولہ بارود نہیں ہے۔ یوکرین نے گزشتہ روز اعلان کیا تھا کہ اپنے فوجیوں کی جان بچانے کے لیے اس نے یوکرین کے مشرق میں واقع شہر اُدیوکا سے اپنی تمام افواج واپس بلا لی ہیں، جس کا کئی ماہ سے روسی افواج نے محاصرہ کر رکھا ہے۔ یوکرین کے ولادیمیر زیلنسکی کے ساتھ اس ٹیلی فون پر بات چیت کے بعد، جو بائیڈن نے کہا، انہیں یقین ہے کہ کانگریس دانشمندانہ فیصلہ کرے گی۔ اپنی تقریر میں انہوں نے یوکرین کو امریکہ کی حمایت پر زور دیا۔ ریاستہائے متحدہ امریکہ کے صدر نے اپنے ملک کے سیاستدانوں سے کہا کہ وہ کیف کے لیے فوجی امداد کے پیکج کی منظوری دیں جسے ریپبلکنز نے روک دیا ہے۔ اس سے قبل امریکی نائب صدر کملا ہیرس نے میونخ سیکیورٹی کانفرنس میں کہا تھا کہ واشنگٹن کو یوکرین پر سیاسی کھیل نہیں کھیلنا چاہیے۔
مشرقی یوکرین میں اوڈیوکا، مقبوضہ ڈونیٹسک کے علاقے کا گیٹ وے، مہینوں سے شدید لڑائی کا منظر ہے اور تقریباً مکمل طور پر تباہ ہو چکا ہے۔ شہر کی تقریباً 30,000 آبادی جنگ سے پہلے ہی وہاں سے چلی گئی تھی۔ ولادیمیر زیلینسکی نے کہا کہ اپنے فوجیوں کی جان بچانے کے لیے انہوں نے اس شہر سے اپنی افواج واپس بلانے کا فیصلہ کیا ہے۔ روس نے کہا ہے کہ اس نے اودیوکا شہر پر مکمل قبضہ کر لیا ہے اور روسی صدر ولادیمیر پوتن نے شہر پر قبضہ کرنے والے فوجیوں کو مبارکباد دی۔ شہر کا زوال حالیہ مہینوں میں روس کی سب سے بڑی فتح ہے۔ یوکرین کے صدر نے اس شہر کے زوال کا ذمہ دار مغرب سے ہتھیاروں کی ترسیل میں تاخیر کو قرار دیا۔ روس نے 24 فروری 2022 کو یوکرین پر حملہ کرنا شروع کر دیا، یوکرین کے صدر نے میونخ سیکیورٹی کانفرنس میں کہا، “یوکرین سے یہ مت پوچھو کہ جنگ کب ختم ہو گی، بلکہ اپنے آپ سے پوچھو کہ وہ اب بھی یہ جنگ کیوں لڑ رہا ہے؟”

اپنا تبصرہ لکھیں