مالدیپ سے ہندوستانی فوجی واپس آنے کو تیار، چین کو کتنا فائدہ ہوگا؟

“اس اتوار، 10 مارچ کو ہندوستان اور مالدیپ کے تعلقات میں ایک اہم سنگ میل آرہا ہے۔”
ہندوستان اس اتوار سے مالدیپ سے اپنی فوجیں ہٹانا شروع کر رہا ہے۔ ہندوستانی فوجی پہلے سے طے شدہ ڈیڈ لائن کے مطابق مالدیپ سے واپس چلے جائیں گے۔ گزشتہ چند مہینوں میں مالدیپ اور چین کھل کر ایک دوسرے کے قریب آئے ہیں۔ Muizzu کے اس قدم کو چین کی طرف جھکاؤ کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔اپنی انتخابی مہم کے بعد سے گزشتہ چند دنوں میں موجو مالدیپ سے ہندوستانی فوجیوں کو ہٹانے کے معاملے پر جارحانہ رویہ اپنائے ہوئے ہیں۔ مالدیپ کے صدر نے حال ہی میں کہا تھا کہ ہندوستانی فوج کا ایک بھی سپاہی وردی میں نہیں ہوگا۔ 10 مئی کے بعد مالدیپ، سادہ یا سادہ۔
“مالدیپ میں بھارتی فوجی کیا کر رہے ہیں؟”
بھارت کا کہنا ہے کہ مالدیپ میں مدد کے لیے بھیجے گئے ہیلی کاپٹروں اور چھوٹے طیاروں کی دیکھ بھال کے لیے بھارتی فوجی وہاں موجود ہیں۔ یہ ہیلی کاپٹر مالدیپ کو بھارت نے برسوں پہلے دیے تھے۔ مالدیپ جغرافیائی اور اسٹریٹجک نقطہ نظر سے ہندوستان کے لیے بہت اہم ہے۔ ہندوستان بحر ہند کے علاقے میں اپنی موجودگی کے بارے میں محتاط رہ سکتا ہے۔لیکن معیز کے صدر بننے کے بعد ہندوستان اور مالدیپ کے تعلقات میں تلخی آ گئی ہے۔ ہندوستان اور مالدیپ کے تعلقات میں واضح دراڑ کے درمیان، چین خطے میں اپنی گرفت مضبوط کرنے کے مواقع کی تلاش میں ہے۔ حال ہی میں یہ خبریں آئی تھیں کہ ہندوستان اور مالدیپ نے فوجیوں کے بجائے تکنیکی عملے کو تعینات کرنے پر اتفاق کیا ہے۔ اس کے تحت تکنیکی عملے کی ایک ٹیم مالدیپ پہنچ گئی ہے۔ اس حوالے سے معیز کا بیان آیا ہے۔Muizzu نے حال ہی میں کہا تھا، “جو ہندوستانی فوجی جا رہے ہیں وہ اپنی وردی نہیں بدل رہے ہیں اور سادہ کپڑوں میں واپس آ رہے ہیں۔” ہمیں ان باتوں پر کان نہیں دھرنا چاہئے جو ہمارے اندر شکوک و شبہات اور جھوٹ پیدا کرتی ہیں۔” 10 مئی کے بعد ملک میں کوئی ہندوستانی فوجی نہیں ہوگا، نہ ہی وردی میں اور نہ ہی سویلین کپڑوں میں،” موئزو نے کہا۔ ایسا نہیں ہو گا۔
“مالدیپ چین کے قریب آ رہا ہے۔”
ہندوستان کے سابق سکریٹری خارجہ شیام سرن نے کہا کہ ’طیارہ مالدیپ میں ہی رہے گا۔ ہندوستانی شہری مالدیپ میں ہی رہیں گے۔ ایسا لگتا ہے کہ دونوں فریقوں کے درمیان معاہدہ طے پا گیا ہے۔ اس جگہ کو عام شہریوں یعنی سادہ کپڑوں میں تعینات لوگوں کی تعیناتی کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔” ملازمین۔ بی بی سی نے اس سلسلے میں میوزو کے دفتر سے رابطہ کیا، لیکن کوئی جواب نہیں مل سکا۔بعض ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ مالدیپ جو کہ ایک چھوٹا ملک ہے، دو ایشیائی طاقتوں بھارت اور چین کے درمیان پھنس جانے کا خطرہ ہے۔ گزشتہ برسوں میں چین نے مالدیپ کو اربوں ڈالر کے قرضے فراہم کیے ہیں۔ ان میں سے زیادہ تر قرضے اقتصادی ترقی اور تعمیراتی شعبے کے لیے ہیں۔ چین اور مالدیپ کے درمیان تعلقات اس وقت گہرے ہوئے جب موئزو نے صدر بننے کے بعد شی جن پنگ کی دعوت پر چین کا دورہ کیا۔مالدیپ کے صدر منتخب ہونے کے بعد سے وہ ہندوستان کا دورہ کر رہے ہیں۔ لیکن Muizzu کے ساتھ ایسا نہیں ہے. Muizzu نے ترکی، متحدہ عرب امارات اور چین کا دورہ کیا ہے، لیکن ابھی تک بھارت کا دورہ نہیں کیا ہے. چین سے واپس آنے کے بعد موئیز نے کہا – ‘ہم ایک چھوٹا ملک ہیں، اس کا یہ مطلب نہیں کہ انہیں ہمیں دھمکی دینے کا حق ہے۔’ موئیز کے بیان کو ہندوستان کے حوالے سے دیکھا گیا۔ حالانکہ معیز نے ہندوستان کا نام نہیں لیا۔
مالدیپ کی حکومت اور چین کے درمیان اس ہفتے کے شروع میں ایک فوجی معاہدہ ہوا تھا۔ اس معاہدے کی وجہ سے بھارت کے خدشات بھی بڑھ گئے ہیں۔ مالدیپ کی وزارت دفاع نے کہا ہے کہ یہ معاہدے بغیر کسی ادائیگی کے کیے گئے ہیں۔ تاہم مالدیپ کی حکومت نے اس حوالے سے مزید کوئی معلومات نہیں دی ہیں۔تاہم، منگل کو ایک ریلی میں، میوزہو نے کہا کہ چین مالدیپ کو غیر مہلک ہتھیار مفت فراہم کرے گا اور مالدیپ کی سیکورٹی فورسز کو تربیت بھی فراہم کرے گا۔ماضی میں ہندوستان اور امریکہ مالدیپ کی فوج کو تربیت دیتے رہے ہیں۔ مالدیپ کے سیاسی ماہر عظیم ظہیر نے کہا کہ یہ بے مثال ہے۔ پہلی بار مالدیپ نے چین کے ساتھ فوجی تعاون فراہم کرنے کے لیے دفاعی معاہدے پر دستخط کیے ہیں۔تاہم چین مالدیپ میں کسی بھی طویل مدتی فوجی منصوبے کی تردید کرتا ہے۔ چینگڈو انسٹی ٹیوٹ آف ورلڈ افیئر تھنک ٹینک کے صدر ڈاکٹر لونگ شینگچن نے کہا کہ یہ دونوں ممالک کے درمیان معمول کے تعلقات ہیں۔ اگر چین بحر ہند میں اپنی موجودگی کو بہتر بنانا چاہتا ہے تو اس کے پاس مالدیپ سے بہتر آپشنز ہیں۔محمد مویزو کو ‘چائنا فرسٹ’ پالیسی کا حامی سمجھا جاتا ہے۔ تاہم وہ کئی بار خود کو ‘مالدیپ فرسٹ’ پالیسی کا حامی بتا چکے ہیں۔ مالدیپ میں پچھلی حکومتیں ‘انڈیا فرسٹ’ پالیسی کی حامی سمجھی جاتی تھیں۔ اپنی انتخابی مہم میں معیزو نے ہندوستان کے معاملے پر محمد صالح کی اس وقت کی حکومت کو نشانہ بنایا ہے۔معیز نے کہا کہ بھارت کے ساتھ معاہدوں کی معلومات عام نہیں کی جاتیں۔ اب معیزو کو بھی اسی طرح تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔پچھلے مہینے، موئیزہاؤ انتظامیہ نے ایک چینی تحقیقی جہاز، Xiangyang On 3 کو مالے میں گودی کرنے کی اجازت دی۔ ہندوستان نے مالدیپ کے اس قدم سے اتفاق نہیں کیا۔
مالدیپ نے اس فوجی جہاز کو روکنے کی کوئی وجہ نہیں بتائی ہے۔ تاہم بھارتی ماہرین اس سے متفق نظر نہیں آتے۔ ان ماہرین کا خیال ہے کہ جہاز کے ذریعے جمع کیے گئے ڈیٹا کو بعد میں چینی فوج استعمال کر سکتی ہے۔
مالدیپ سے بڑھتی ہوئی دوری پر قابو پانے اور بحر ہند میں اپنی موجودگی کو بہتر بنانے کے لیے بحریہ نے حال ہی میں لکشدیپ میں ایک نیا بحری اڈہ کھولا ہے۔ اس نیول بیس کا نام آئی این ایس جٹایو ہے۔ اسے لکشدیپ کے مانی کوئے جزیرے میں تعینات کیا گیا ہے۔ بھارتی بحریہ کا کہنا ہے کہ جٹایو کی کوششیں بحری قزاقی اور منشیات کے خلاف ہوں گی۔ تاہم کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ ہندوستان مالدیپ کو پیغام دینے کی کوشش کر رہا ہے۔ یہ کون ہےکچھ ہندوستانی ماہرین کا یہ بھی خیال ہے کہ اس نئی تحریک کا مالدیپ کے ساتھ جاری کشیدگی سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ سابق بھارتی سفارت کار شیام سرن نے کہا کہ جہاں تک میں جانتا ہوں، مجھے نہیں لگتا کہ اس میں کوئی نئی بات ہے۔
تاہم ایسا لگتا ہے کہ موئیزو ہندوستان سے اپنی دوری بڑھا رہی ہے۔ لیکن ہندوستان تاریخی طور پر مالدیپ کی مدد کرتا رہا ہے۔ مالدیپ کی معیشت میں سیاحت کا اہم کردار ہے۔ مالدیپ آنے والوں میں سب سے زیادہ تعداد ہندوستانیوں کی ہے۔ مالدیپ ادویات، خوراک اور تعمیراتی سامان کے لیے بھارت پر منحصر ہے۔ کورونا کے بعد مالدیپ کو بھیجی گئی زیادہ تر ویکسین بھارت کی تھیں۔اس سال کے شروع میں جب موجو وزراء نے پی ایم مودی کی لکشدیپ تصویروں پر قابل اعتراض تبصرے کیے تھے تو ہندوستان میں کافی جارحانہ ردعمل سامنے آیا تھا۔ اس تنازعہ کے بعد کچھ سیاحتی کمپنیوں نے مالدیپ کا بائیکاٹ کرنے کی بات کہی تھی۔ گزشتہ دو ماہ میں مالدیپ میں یہاں آنے والے سیاحوں کی تعداد تقریباً چار لاکھ ہو گئی ہے۔ ان میں سے 13% سیاح چین سے تھے۔ تنازع سے پہلے بھارت پہلے نمبر پر تھا لیکن اب نیچے آ کر پانچویں نمبر پر آ گیا ہے۔محمد مازو کے اس موقف کی وجہ سے انہیں ملک میں تنقید کا سامنا بھی کرنا پڑا۔

اپنا تبصرہ لکھیں