خواتین کا عالمی دن: کیا خواتین خوشحال اور بااختیار ہو رہی ہیں؟

“ہم سال 2024 میں ہیں۔ بہت سے شعبوں میں خواتین کی ترقی کے باوجود سوال یہ ہے کہ صحت، کام کی جگہ، کاروبار اور سیاست میں خواتین کی موجودہ حیثیت کیا ہے؟”
ہم نے یہ سمجھنے کے لیے کہ آیا ہندوستانی خواتین ماضی کے مقابلے ترقی کر رہی ہیں اور ابھرتے ہوئے رجحانات کو سمجھنے کے لیے ہندوستانی حکومت کے اعداد و شمار کا تجزیہ کیا۔ اعداد و شمار بتاتے ہیں کہ گزشتہ چند سالوں کے مقابلے میں بہتری آئی ہے۔ تاہم تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ اگر باریک بینی سے نگرانی کی جائے تو بہتری کی ابھی بھی گنجائش ہے۔حکومت مستقل بنیادوں پر لیبر سروے کرتی ہے۔ اس کے اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ لیبر فورس میں خواتین کی نمائندگی میں اضافہ ہوا ہے۔ افرادی قوت میں خواتین کا حصہ 2017-18 میں 23.3 فیصد تھا جو سال 2020-21 میں بڑھ کر 32.5 فیصد ہو گیا ہے۔ہندوستان میں کام کرنے والی خواتین کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے، لیکن چیلنجوں کے درمیان یہ امید کی کرن نظر آتی ہے۔ بڑھتی ہوئی تعداد کے باوجود، ہزاروں خواتین ہیں جنہوں نے کووِڈ کے دوران اور بعد میں کام چھوڑ دیا۔ خواتین کارکنان اب بھی آبادی کے لحاظ سے مردوں کے ساتھ ملنے کے لیے جدوجہد کر رہی ہیں۔امبیڈکر یونیورسٹی کی پروفیسر دیپا سنہا غیر منظم شعبے میں کارکنوں کے بارے میں درست اعداد و شمار کی کمی کو اجاگر کرتی ہیں اور کہتی ہیں کہ اس سے کارکنوں کے صنفی تناسب کو سمجھنا اور بھی پیچیدہ ہو جاتا ہے۔ بچے پیدا کرنے، زچگی کی چھٹی اور مساوی تنخواہ جیسے چیلنجوں کی وجہ سے افرادی قوت میں خواتین کی موجودگی اب بھی مشکل ہے۔وہ کہتی ہیں، ’’بہت سی خواتین تعلیم چھوڑ دیتی ہیں اور اپنی مرضی سے یا دباؤ کے تحت کام کرتی ہیں، جس کی وجہ سے قیادت کے عہدوں پر کم نمائندگی ہوتی ہے۔ کام کی جگہ بنانے کے لیے۔اعلیٰ تعلیم پر آل انڈیا سروے کے تازہ ترین اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ ہندوستان میں 2.9 لاکھ سے زیادہ خواتین نے تعلیمی سال 2020-21 میں STEM (سائنس، ٹیکنالوجی، انجینئرنگ اور ریاضی) کے مضامین میں داخلہ لیا ہے۔ یہ تعداد مردوں سے زیادہ ہے۔ اس عرصے کے دوران 26 لاکھ مردوں نے ان مضامین میں داخلہ لیا۔خواتین 2016-17 میں STEM مضامین میں اندراج میں مردوں سے پیچھے رہ گئیں۔ تاہم، سال 2017-18 میں، ان مضامین میں داخلہ لینے والی خواتین کی تعداد میں اضافہ ہوا اور اگلے ہی سال، 2018-19 میں، خواتین نے ان مضامین میں داخلہ لینے میں مردوں کو پیچھے چھوڑ دیا۔ گلوبل جینڈر گیپ رپورٹ کے مطابق، ہندوستان میں خواتین کی کل STEM افرادی قوت کا 27% حصہ ہے۔ تاہم، مردوں اور عورتوں کے درمیان اب بھی ایک بڑا فرق ہے۔صنفی تنخواہ میں عدم مساوات کے لحاظ سے ہندوستان 146 ممالک میں 127 ویں نمبر پر ہے۔ پروفیسر دیپا سنہا کہتی ہیں کہ STEM مضامین میں لیبارٹریوں اور تجربات تک رسائی اہم ہے۔ دیپا سنہا اس بات پر زور دیتی ہیں کہ اس طرح کے وسائل تک خواتین کی رسائی اس میدان میں خواتین کی ترقی کو برقرار رکھتی ہے۔ اس خطے میں رات گئے کام کی جگہوں پر حفاظتی خدشات کو دور کرنے کی ضرورت ہے اور پالیسی سازوں کو زیادہ ذمہ دار ہونے کی ضرورت ہے۔سال 1999 میں بھارتی پارلیمنٹ کے ایوان زیریں لوک سبھا میں 48 خواتین ارکان تھیں جو 2019 میں بڑھ کر 78 ہو گئی ہیں۔ بعض بلدیاتی انتخابات اور اس کے بعد ہونے والے ضمنی انتخابات کی وجہ سے یہ تعداد مزید بڑھی ہے۔
راجیہ سبھا میں بھی ایسا ہی رجحان دیکھا جا رہا ہے۔ راجیہ سبھا کے لیے نامزد خواتین کی تعداد 2012 میں 9.8 فیصد سے بڑھ کر 2021 میں 12.4 فیصد ہوگئی۔ اگرچہ سیاست میں خواتین کی نمائندگی بڑھ رہی ہے لیکن مردوں کے مقابلے میں یہ اب بھی بہت کم ہے۔ اکنامک فورم کی جینڈر پے گیپ رپورٹ کے مطابق۔ خواتین کو سیاسی بااختیار بنانے کے معاملے میں ہندوستان 146 ممالک میں 56 ویں نمبر پر ہے۔قابل ذکر ہے کہ خواتین کو سیاسی بااختیار بنانے کے معاملے میں بنگلہ دیش نے ہندوستان کو پیچھے چھوڑ کر ٹاپ ٹین ممالک میں جگہ بنائی ہے۔نیشنل فیملی ہیلتھ سروے کے تازہ ترین اعداد و شمار کے مطابق، ہندوستان میں 18 فیصد خواتین اب بھی کم بی ایم آئی (باڈی ماس انڈیکس) رکھتی ہیں۔ تاہم سال 2015-16 میں یہ 22.9 فیصد تھی۔ اگرچہ کم وزن والی خواتین کی تعداد میں کمی آئی ہے لیکن مردوں کے مقابلے خواتین میں موٹاپا زیادہ عام ہے۔ سروے میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ ہندوستان میں 24 فیصد خواتین موٹاپے کا شکار ہیں جبکہ مردوں کی تعداد 22.9 فیصد ہے۔غذائیت سے متعلق خدشات کے ساتھ ساتھ، اعداد و شمار بتاتے ہیں کہ ہر عمر کی خواتین میں خون کی کمی بڑھ رہی ہے۔ 2015 میں، ہندوستان میں 15-49 سال کی عمر کی 57.2% خواتین خون کی کمی کا شکار تھیں۔ -16 میں یہ 53.2 فیصد تھی۔ اس عمر کی حاملہ خواتین میں آئرن کی کمی دیکھی جاتی ہے۔ہندوستان جیسے ملک میں جہاں خوراک کی ضروریات کو پورا کرنے میں مردوں کو ترجیح دی جاتی ہے، وہاں غذائی قلت اور غربت بھی خون کی کمی کا باعث بنتی ہے۔ جس کی وجہ سے خواتین کو تمام ضروری غذائی اجزاء نہیں مل پاتے اور خون کی کمی اور غذائی قلت کا شکار خواتین کی تعداد بڑھ جاتی ہے۔

اپنا تبصرہ لکھیں