صرف 7 ممالک زہریلے گاڑیوں کے دھوئیں پر قابو پانے میں کامیاب ہوئے۔

اب تک صرف 7 ممالک عالمی ادارہ صحت کے طے کردہ معیارات کے تحت گاڑیوں کے زہریلے دھوئیں پر قابو پا کر ماحول کو صحت مند اور خوشگوار رکھنے میں کامیاب ہو سکے ہیں۔تقریباً تمام ممالک گاڑیوں اور فیکٹریوں سے خارج ہونے والے باریک ذرات PM2.5 کی حد برقرار رکھنے میں ناکام رہے ہیں۔ اس سے صحت عامہ کو خطرہ لاحق ہے۔ انڈیکس میں شامل 134 ممالک میں سے صرف آسٹریلیا، ایسٹونیا، فن لینڈ، گریناڈا، آئس لینڈ، ماریشس اور نیوزی لینڈ نے بین الاقوامی ہوا کے معیار کو برقرار رکھا ہے۔دنیا بھر میں صنعتی عمل اور جنگل کی آگ بڑی مقدار میں دھواں پیدا کرتی ہے جو ہوا کے معیار کو خراب کرتی ہے اور صحت عامہ کو خطرے میں ڈالتی ہے۔آئی کیو ایئر کی ایک رپورٹ کے مطابق دنیا بھر کے بیشتر ممالک صنعتی عمل اور گاڑیوں سے ہونے والے اخراج کو کنٹرول کرنے سے قاصر ہیں جس کی وجہ سے صحت عامہ کے سنگین مسائل پیدا ہو رہے ہیں۔ دھواں ہوا کے معیار کو خراب کرتا ہے جس کے نتیجے میں لوگ مختلف بیماریوں کا شکار ہوتے ہیں اور دھواں سانس لیتے ہوئے تیزی سے مر جاتے ہیں۔یہ ڈیٹا دنیا بھر کے 30 ہزار مانیٹرنگ اسٹیشنوں کی مدد سے تیار کیا گیا ہے۔ پاکستان میں ہوا کا معیار عالمی ادارہ صحت کے مقرر کردہ معیار سے 1400 فیصد زیادہ خراب ہے۔ ہوا کے معیار کے لحاظ سے بھارت، تاجکستان اور برکینا فاسو کی صورتحال پاکستان سے زیادہ خراب ہے۔ہوا کے معیار کے حوالے سے بہت سے ترقی یافتہ ممالک رشک کرتے رہے ہیں لیکن اب وہ بھی آلودگی اور صحت عامہ کے مسائل کا شکار ہیں۔ پچھلے سال، کینیڈا میں جنگل کی آگ نے نہ صرف کینیڈا بلکہ ریاستہائے متحدہ کی ہوا کا معیار خراب کر دیا۔ چین نے صورتحال کے تدارک کے لیے معیاری کوششیں کیں، لیکن کورونا وائرس وبائی امراض کے بعد تیزی سے معاشی بحالی نے صورتحال کو مزید خراب کر دیا۔

اپنا تبصرہ لکھیں