مارنے سے کسی کو سیدھا نہیں کیا جا سکتا، شاہین آفریدی

“لاہور: شاہین شاہ آفریدی کا کہنا ہے کہ لاٹھی مار کر کسی کو سیدھا نہیں کر سکتا۔”
لاہور قلندرز کے کپتان شاہین شاہ آفریدی نے اونر سمین رانا کے ساتھ پوڈ کاسٹ میں کہا کہ مجھے پہلی بار 2019 میں فرنچائز ٹیم کی قیادت کی پیشکش ہوئی، میں بہت چھوٹا تھا، اس وقت میں شکست کی وجہ بتاتا لیکن یہ بھی کہا۔ کپتان اسے مت بدلیں، اگر میں اس وقت کپتانی کے بارے میں سوچتا تو ٹیم تقسیم ہوچکی ہوتی، اس وقت میں نے سوچا کہ یہ اچھا فیصلہ نہیں ہوگا۔شاہین کا کہنا تھا کہ جب مجھے 2022 میں کپتان بنایا گیا تو میں نے اس پر یقین نہیں کیا۔ شاہد آفریدی نے میری کپتانی سے انکار کر دیا تھا کیونکہ انہیں ڈر تھا کہ میری باؤلنگ متاثر ہو گی۔ میں نے کہا کہ مجھے بولنگ میں قیادت کرنے کی کوشش کرنی چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ جب بھی کوئی ٹیم ہارتی ہے تو سب سوچتے ہیں کہ کپتان ہار گیا لیکن ایسا نہیں ہے، 11 افراد پر مشتمل ٹیم کا الزام صرف ایک شخص پر آتا ہے جو قیادت کرتا ہے۔انہوں نے کہا کہ کپتانی میں ہر حال میں سب کے ساتھ دوستانہ رویہ رکھنا چاہیے، ڈنڈا مار کر کسی کو سیدھا نہیں کر سکتا، لاٹھی جسم کو نقصان پہنچاتی ہے، زبان دل کو چھید سکتی ہے، اسے صحیح جگہ استعمال کرنا چاہیے۔ کھیل کو کھیل سمجھو،چھڑی لگ جاتی ہے لیکن زبان نہیں، میں سخت کہلاتا ہوں لیکن اس سے کیا ہوگا، میری سختی کا نئے کھلاڑیوں پر کیا اثر ہوگا؟ زیادہ سمجھانے کا کوئی فائدہ نہیں، کھلاڑی کو سپورٹ کرنا چاہیے اور اسے اعتماد دینا چاہیے کیونکہ وہ اپنی مہارت اور محنت سے اس مقام تک پہنچا ہے، کرکٹ میں ہر روز کچھ نیا سیکھنے کو ملتا ہے۔

اپنا تبصرہ لکھیں