پختونخوا: پشاوری چپل سے چاچا نورالدین سمیت 58 افراد میں سول ایوارڈز کی تقسیم۔

“پشاور: گورنر خیبرپختونخوا حاجی غلام علی نے اپنے اپنے شعبوں میں مثالی خدمات پر صوبے کی 58 شخصیات کو ریاستی صدر کی جانب سے صدارتی سول اعزازات سے نوازا۔”
گورنر حاجی غلام علی نے میئر پشاور حاجی زبیر علی کو عوامی خدمات کے میدان میں گراں قدر خدمات پر صدارتی سول ایوارڈ میڈل آف ڈسٹنکشن سے نوازا جبکہ اسی طرح صوبے کی 36 دیگر شخصیات کو بھی صدارتی سول ایوارڈ سے نوازا گیا۔ مخصوصیت کا۔گورنر نے عوامی خدمات کے شعبے میں گراں قدر خدمات پر 2 شخصیات عصمت جبین آفریدی اور ڈاکٹر ندیم جان کو صدارتی ایوارڈ ستارہ امتیاز سے نوازا جب کہ صوبے کی 6 شخصیات کو صدارتی تمغہ شجاعت اور 14 شخصیات کو صدارتی ایوارڈ سے نوازا گیا۔ چلا گیا۔ اچھی کارکردگی پر سٹیزن ایوارڈ۔گورنر ہاؤس میں منعقدہ تقریب میں پشاوری چیپل کو نوردین (چاچا نورا)، پشتو گائیکی کا شعبہ ہمایوں خان، محکمہ تعلیم ڈاکٹر عمر شہباز خان، شعبہ سائبر سیکیورٹی، ڈاکٹر کاشف کفایت، شعبہ طب دیا گیا۔ ڈاکٹر امجد محبوب کو شعبہ آرٹس میں گلاب خیل کو رباب، عجب گل خان کو شعبہ فن، اداکاری و ہدایت کاری، عشرت عباس کو شعبہ فن، ڈرامہ، ریڈیو، تھیٹر ایکٹنگ، عجب کو خان شعبہ خطاطی اور مصوری میں،منگل کو پروفیسر احسام الدین المعروف اسیر کو شعبہ شعر و ادب میں صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی، احمد حسین مجاہد کو شعبہ ادب، شاعری اور ادیب میں صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی اور عزیز اعجاز کو صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی سے نوازا گیا۔ ادب کے شعبہ میں صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی سے نوازا گیا۔ شاعری اور مرحوم محمد خلیل۔ شاکرزیب نوشراوی کو آرٹ اور میوزک ڈائریکشن کے شعبہ میں شاندار کارکردگی پر صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی سے نوازا گیا جو ان کے بھائی فرخ زیب نے وصول کیا۔اس کے علاوہ فرمان اللہ کو شعبہ بہادری، عظمت علی شاہ کو شعبہ بہادری، مجیب اللہ کو شعبہ بہادری، مشکت اللہ کو شعبہ بہادری، اشفاق احمد کو شعبہ بہادری اور مجیب اللہ شاہ کو صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی سے بھی نوازا گیا۔ . بہادری کے محکمے میں مثالی بہادری اور شاندار کارکردگی کے اعتراف میں گیلنٹری ایوارڈ سے نوازا گیا.محمد وسیم، شعبہ فائن ووڈ ورک، دانش اطلس خان، شعبہ اسپورٹس سکواش، پروفیسر ڈاکٹر شوکت سعید، شعبہ سائنس، میٹریل کیمسٹری، پروفیسر ڈاکٹر سردار خان، شعبہ ماحولیاتی سائنسز، پروفیسر ڈاکٹر ثقلین، شعبہ سائنس، مادیات کیمسٹری، پروفیسر ڈاکٹر محمد وسیم عبدالنعیم خان، شعبہ سائنس عبدالباطن فاروقی کیمسٹری، شعبہ ایکٹنگ، الماس خان خلیل، شعبہ پشتو گلوکاری، فضل وہاب درد، شعبہ فن گلوکاری، پروفیسر ڈاکٹر گل رحیم خان، شعبہ آثار قدیمہ۔شعبہ ادب میں ڈاکٹر محمد اسماعیل (اسماعیل گوہر)، شعبہ صحافت میں امجد عزیز ملک، شعبہ پبلک سروس میں ڈاکٹر محمد قریشی خان، شعبہ پبلک سروس میں حاجی زبیر علی اور جہانزیب ملک شعبہ صحافت میں۔ آرٹ اینڈ پینٹنگ کے شعبہ نے ان کی مثالی خدمات کے اعتراف میں تمغہ امتیاز سے نوازا۔مزید برآں، مرحوم شمس القمر اندیش کو بعد از مرگ شعبہ فن، ادب اور شاعری کا امتیاز تمغہ دیا گیا اور ان کی بیٹی وحیدہ نے یہ ایوارڈ حاصل کیا۔ اسی طرح مرحوم خیراز گل کو محکمہ صحت میں بعد از مرگ امتیاز میڈل سے نوازا گیا۔ مرحوم کے بیٹے نعیم اللہ نے یہ اعزاز حاصل کیا۔ مرحوم محمدی شاہ کو صحت کے شعبے میں ان کی مثالی خدمات پر بعد از مرگ امتیاز تمغہ سے نوازا گیا، یہ ایوارڈ ان کے بیٹے شاہ نواز نے حاصل کیا۔آنجہانی ڈاکٹر فگ چند سنگھ کو صحت کے شعبے میں مثالی خدمات کے لیے بعد از مرگ امتیاز تمغہ سے نوازا گیا، یہ ایوارڈ ان کے مرحوم بیٹے جتن کمار نے حاصل کیا۔ مرحوم محمد عباس طارق عباسی کو بعد از مرگ محکمہ صحت میں تمغہ امتیاز دیا گیا جو ان کے بیٹے محمد طیب نے وصول کیا۔معلوم ہوا ہے کہ چاچا نورالدین نے گورنر کے بیٹے پشاور سٹی کے میئر حاجی زبیر علی اور پی ٹی آئی کے بانی چیئرمین عمران خان کے لیے خصوصی پشاوری چپل تیار کی تھی۔

اپنا تبصرہ لکھیں