آپ جتنا جھوٹ بولیں گے، چیف جسٹس اتنا ہی سوشل میڈیا پر بکیں گے۔

اسلام آباد: چیف جسٹس پاکستان نے کیس کی سماعت کے دوران ریمارکس دیئے ہیں کہ جتنا جھوٹ بولیں گے، اتنا ہی سوشل میڈیا پر بکیں گے۔ چیف جسٹس پاکستان نے صحافیوں کو ایف آئی اے کے نوٹس کے خلاف درخواست کی سماعت کی۔ ، جسٹس قاضی فائز عیسیٰ۔ اس کی صدارت سپریم کورٹ کے 3 رکنی بینچ نے کی۔سماعت کے دوران چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ کیا درخواست میں وکیل حیدر وحید کے ساتھ عدالت میں کوئی درخواست گزار بھی ہے؟ اس موقع پر چیف جسٹس نے اٹارنی جنرل کو اسٹیج پر بلایا اور کہا کہ کیا ایسی درخواست عدالت کے ساتھ زیادتی نہیں؟ جس پر انہوں نے جواب دیا کہ یہ عمل کا سراسر زیادتی ہے۔چیف جسٹس نے تبصرہ کیا کہ کیا ایسی درخواستیں عدلیہ کی آزادی کو یقینی بناتی ہیں یا مجروح کرتی ہیں؟ اس درخواست کے نوٹس پر تمام درخواست گزاروں کو کیوں نہیں بلایا گیا؟ جس پر اٹارنی جنرل نے درخواست گزاروں کو نوٹس دینے کی حمایت کی۔ بیرسٹر صلاح الدین نے عدالت کو بتایا کہ کیس میں کوئی اہم بات نہیں، چیف جسٹس نے پوچھا حیدر وحید کہاں ہیں؟ جس پر عدالت کو بتایا گیا کہ میڈیا ریگولیشن سے متعلق اپنی درخواست واپس لینا چاہتے ہیں۔چیف جسٹس نے کہا کہ وہ عدالت میں پیش ہونے بھی نہیں آئے۔ کیا اس کی درخواست آزادی اظہار کو یقینی بنائے گی یا اس پر مزید پابندی عائد کرے گی؟ ان کے کیس میں درخواست گزار کون تھے؟ 2022 سے یہ درخواست کس بنیاد پر دائر کی گئی، کیا یہ مقاصد حاصل ہوئے؟ کچھ درخواست گزار چکوال اور کچھ اسلام آباد سے تھے۔ کون سی مشترکہ دلچسپی تھی جس نے ان درخواست گزاروں کو اکٹھا کیا؟ میڈیا میں بہت سی سلیکٹیو رپورٹنگ چل رہی ہے۔چیف جسٹس نے تبصرہ کیا کہ اب یہ رپورٹ نہیں بنے گی، یہ 6 درخواست گزار لاپتہ ہو گئے ہیں۔ اسی لیے ہم نے کہا کہ ہم اپنا یوٹیوب چینل چلائیں گے۔ بیرسٹر صلاح الدین نے کہا کہ پی آئی ایل واپس نہیں لے سکتے۔ آرمی چیف کی مدت ملازمت میں توسیع سے متعلق ریاض حنیف راہی کی درخواست بھی واپس نہ لینے دی گئی۔چیف جسٹس نے کہا کہ آپ نے عدالت کے باہر ان لوگوں سے کوئی معاہدہ نہیں کیا جس پر بیرسٹر صلاح الدین نے جواب دیا کہ ہم صحافتی ادارہ ہیں ایسے معاہدے کا آلہ کار نہیں۔ چیف جسٹس نے تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ پیسے کا ہونا ضروری نہیں، یہ اس لیے بھی کہا جا سکتا ہے کہ مستقبل میں میری خبر کو اچھی پبلسٹی ملے۔چیف جسٹس نے پوچھا کہ کیا کوئی اور ضروری معاملہ ہے؟ بیرسٹر صلاح الدین نے مطیع اللہ جان کیس کا ذکر کیا جس پر چیف جسٹس نے کہا کہ اٹارنی جنرل اگر میں کسی کیس کو اوپن اینڈ شٹ کہوں تو وہ مطیع اللہ جان کیس ہے۔ آپ کے پاس اس واقعے کی ویڈیو موجود ہے۔چیف جسٹس نے تبصرہ کیا کہ حکومت اخبار میں اشتہار کیوں نہیں دیتی، ان لوگوں کو ڈھونڈ رہے ہیں۔ اگر آپ کچھ نہیں کرتے ہیں تو آپ کو ایسا آرڈر ملے گا جسے آپ پسند نہیں کریں گے۔ کیا انہوں نے انٹرویو ریکارڈ کیا؟ یہ کیسی صحافت ہے؟ ، اگلے دن میری بیوی کے بارے میں ایک جھوٹی خبر آئی۔ بتایا گیا کہ عدالت کی میٹنگ میں میری بیوی میرے ساتھ بیٹھی تھی۔ کیا ہم سارا دن بیٹھ کر وضاحتیں جاری کرتے رہیں گے؟ ،چیف جسٹس نے مزید کہا کہ کہا جائے گا کہ چیف جسٹس کی اہلیہ نے تردید جاری نہیں کی۔ چیف جسٹس کی اہلیہ سرکاری میٹنگ میں بیٹھی ہوئی خبر کا کیا اثر ہوگا؟ کیا ایسی خبریں چلانے والوں کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کرنا چاہیے؟ ، کیا اس پر مقدمہ چلایا جائے اور اسے جیل بھیجا جائے؟ اس نے اپنے تھمب نیل اور اپنی خبر میں بھی یہی کہا ہے۔چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ کیا زیادہ ری ٹویٹس اور لائکس سے پیسے کمائے جا رہے ہیں؟ ، اگر کوئی صحافی جھوٹ بولتا ہوا پایا گیا تو کیا وہ اس کی رکنیت منسوخ کر دیں گے؟ جس پر بیرسٹر صلاح الدین نے جواب دیا کہ وہ وارننگ دے کر اور دکھا کر رکنیت ختم کر سکتے ہیں۔ چیف جسٹس نے کہا کہ اس سے کیا ہوگا؟ چیف جسٹس صاحب آپ عدالت کے افسر ہیں اس کا حل بتائیں۔ بیرسٹر صلاح الدین نے کہا کہ پاکستان میں ہتک عزت کا قانون اتنا مضبوط نہیں ہے اس لیے ایسا ہوتا رہتا ہے۔چیف جسٹس نے کہا کہ کیا صحافیوں نے اپنے ارکان کے خلاف کارروائی کی؟ ، یہ سب ٹریڈ یونین بن چکے ہیں۔ ہم نے آپ کو اپنے ادارے میں دکھایا ہے، آپ بھی دکھا دیں، ٹھیک ہے؟‘‘ چیف جسٹس نے اپنے تبصرے میں کہا کہ جتنا جھوٹ بولیں گے، اتنا ہی سوشل میڈیا پر بکتا رہے گا۔ جعلی کمنٹس کر کے ڈالر کمائے جاتے ہیں۔ کیا ہم جھوٹ پھیلانے والوں کو جیل بھیج دیں؟ کیا ایسی خبریں پیسہ کمانے کے لیے خود ساختہ ہیں؟ صحافی کی خبر جھوٹی ثابت ہو جائے تو اس کے خلاف کیا کارروائی ہوتی ہے؟بیرسٹر صلاح الدین نے جواب دیا کہ برطانیہ میں ہتک عزت کا قانون بہت مضبوط ہے۔ بھاری جرمانے کی وجہ سے پاکستانی چینلز برطانیہ میں اپنی نشریات جاری نہیں رکھ سکتے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ اب ہم کسی کو نوٹس جاری کریں گے تو سب ہمارے سامنے کھڑے ہوں گے۔ معاشرہ وہیں پروان چڑھتا ہے جہاں اداروں کا اندرونی احتساب ہو۔ ہم نے اپنا احتساب کر دکھایا۔بعد ازاں چیف جسٹس نے آج کی سماعت کا حکم نامہ لکھنا شروع کردیا۔ عدالتی حکم کے مطابق میڈیا ریگولیشن سے متعلق درخواست واپس لینے کی استدعا کی گئی۔ نہ ہی درخواست گزار اور نہ ہی وکیل ریکارڈ پر عدالت میں پیش ہوئے۔ درخواست میں کہا گیا کہ میڈیا ریگولیشن کا معاملہ اب وفاقی حکومت خود دیکھ رہی ہے۔ اٹارنی جنرل نے حکومت کے خلاف اس الزام کی تردید کی۔سپریم کورٹ نے میڈیا ریگولیشن پٹیشن کے درخواست گزاروں کو انفرادی حیثیت میں طلب کرتے ہوئے فریقین سے تحریری دلائل بھی طلب کر لیے اور درخواست گزاروں کو نوٹس جاری کرتے ہوئے سماعت ملتوی کر دی۔ عدالت نے کہا کہ سابقہ ​​بنچ کے دستیاب ہونے پر کیس کی دوبارہ سماعت کی جائے گی۔

اپنا تبصرہ لکھیں