اسلی آزادی مارچ: عمران خان، شیخ رشید اور دیگر ملزمان کی بریت کی درخواست پر فیصلہ محفوظ

“اسلام آباد کی ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن عدالت نے حقیقی آزادی مارچ کے دوران بربریت کے مقدمات میں پاکستان تحریک انصاف کے بانی عمران خان، سابق وفاقی وزیر شیخ رشید اور دیگر ملزمان کی بریت کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کر لیا۔”
جوڈیشل مجسٹریٹ کے جج ملک عمران نے ملزمان کی بریت کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کیا، اس موقع پر شیخ رشید عدالت میں پیش ہوئے اور ان کے علاوہ شریک ملزمان اور پی ٹی آئی کے رہنماؤں نواز اعوان، صداقت علی عباسی نے بریت کی درخواست دائر کی۔ ، پی ٹی آئی کے وکلا سردار مصروف ایڈووکیٹ، آمنہ علی، رضوان اختر اعوان اور مرزا عاصم ایڈووکیٹ بھی عدالت میں پیش ہوئے۔مصروف وکیل ایڈووکیٹ سردار نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ بریت کی درخواست گزشتہ سال فروری میں دائر کی گئی تھی، ہم آج اس کیس میں بریت کی درخواست پر دلائل دینا چاہتے ہیں، اس پر جج ملک عمران نے تبصرہ کیا کہ صداقت عباسی، علی نواز اعوان اور شیخ رشید کا چالان ہے۔ عدالت میں آو.وکیل نے کہا کہ یہ ایف آئی آر دفعہ 144 کے تحت درج کی گئی ہے، اس کیس میں کوئی ثبوت نہیں، سی سی ٹی وی فوٹیج وغیرہ نہیں، یہ مقدمہ متعلقہ افسر پرویز خٹک، اسد قیصر نے درج کرایا، اسد نے یہ بات عمر، علی امین گنڈا پور نے کہی۔ کیس کے شریک ملزمان کی فہرست میں بھی شامل ہیں۔ ملزمان کے خلاف آزادی مارچ سے متعلق تھانہ آئی نائن میں مقدمہ درج کر لیا گیا ہے۔
بعد ازاں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے شیخ رشید نے کہا کہ موجودہ حالات میں میری خاموشی زیادہ اہم ہے، ان تمام کیسز کو ہمت، صبر، استقامت اور خاموشی سے نمٹنا چاہیے، میرے خلاف 19 کیسز ہیں اور انشااللہ بہتری آئے گی۔ انہوں نے کہا کہ میں الیکشن ہار گیا اور میں نے الیکشن بھی مان لیا، جیتنے والوں کے ساتھ یہی ہوا۔ہائی کورٹ کے ججوں کے خطوط کے حوالے سے ان کا کہنا تھا کہ بہتر ہے کہ ججز کے خطوط پر خود بات کریں۔ شیخ رشید نے کہا کہ میں نہ ٹی وی دیکھ رہا تھا، نہ اخبار پڑھ رہا تھا اور نہ ہی ٹویٹ کر رہا تھا، میں صرف آرام کر رہا تھا، آرام ہی بہترین ہے۔
خیال رہے کہ مئی 2022 میں اسلام آباد میں ختم ہونے والے پی ٹی آئی کے لانگ مارچ کے تناظر میں ملک بھر میں پولیس نے پی ٹی آئی رہنماؤں اور کارکنوں کے خلاف دفعہ 144 سمیت سنگین خلاف ورزیوں پر درجنوں مقدمات درج کیے تھے۔جڑواں شہروں راولپنڈی اور اسلام آباد میں دارالحکومت کی پولیس نے پی ٹی آئی رہنماؤں اور کارکنوں کے خلاف قانون نافذ کرنے میں مزاحمت کرنے اور میٹرو بس اسٹیشنوں کو آگ لگانے سمیت ریاستی املاک کو نقصان پہنچانے پر کم از کم تین مقدمات درج کیے تھے۔عمران خان کو تھانہ سہالہ، لوہی بھیر میں گرفتار کیا گیا۔

اپنا تبصرہ لکھیں