قرآن پاک کی توہین کرنے والا سلوان مومیکا ناروے میں مردہ پایا گیا۔

سویڈن کے دارالحکومت سٹاک ہوم میں قرآن کی توہین کرنے والا عراقی مہاجر سالوان صبا مومیکا ناروے میں مردہ پایا گیا۔ ابتدائی اطلاعات کے مطابق بے حرمتی قرآن کی لاش ملنے کے بعد پولیس نے تفتیش شروع کر دی ہے۔ مومیکا سویڈن میں ایک احتجاج منظم کرنے کا منصوبہ بنا رہی ہیں۔ وہ پولیس کی حفاظت میں عوام میں قرآن مجید کو جلانے کے لیے مشہور تھا۔اس سے قبل مومیکا نے اپنی آخری پوسٹ میں لکھا تھا کہ ‘آج میں نے سویڈن چھوڑ دیا اور اب نارویجن حکام کی حفاظت میں ہوں۔ میں نے ناروے میں پناہ اور بین الاقوامی تحفظ کے لیے درخواست دی ہے کیونکہ سویڈن صرف دہشت گردوں کے لیے پناہ قبول کرتا ہے، فلسفیوں اور مفکروں کو نہیں۔ سویڈن کے لوگوں کے لیے میری محبت اور احترام ویسی ہی رہے گی، لیکن مجھے سویڈش حکام کی طرف سے جو ہراساں کیا گیا ہے وہ سویڈن کی نمائندگی نہیں کرتا۔سالومن مومیکا کا مزید کہنا تھا کہ ‘میں اسلام کے خلاف اپنی جدوجہد جاری رکھوں گا، میں نے اس کی قیمت چکائی ہے اور ادا کرتا رہوں گا، اور میں اس کے لیے تیار ہوں، چاہے کوئی بھی قیمت ادا کی جائے۔’ وہ سلوان مومیکا جو بار بار قرآن پاک کی توہین کرتا تھا۔ وہ عراق کے صوبے موصل کے ضلع ہمدانیہ کا رہنے والا تھا۔ سویڈن میں سیاسی پناہ حاصل کرنے سے قبل سلوان نے عراقی شہر نینویٰ میں ایک ملیشیا کی قیادت بھی کی۔ وہ مطلوب تھا۔سلوان کئی سال پہلے فرار ہو کر سویڈن چلا گیا تھا اور عراقی حکومت نے باضابطہ طور پر سویڈن کی حکومت کو اس کی حوالگی کی درخواست کی تھی، لیکن سویڈن نے اسے عراق کے حوالے نہیں کیا۔اس سے قبل اکتوبر 2023 کے آخر میں یہ اطلاع ملی تھی کہ سلوان مومیکا کا سویڈن میں مستقل رہائش کا اجازت نامہ منسوخ کر دیا گیا ہے تاہم اسے عراق ڈی پورٹ نہیں کیا جائے گا اور اس فیصلے کا تعلق قرآن پاک کی بے حرمتی سے نہیں ہے۔ توہین اور ذلت آمیز ہیں، سویڈن نے مذمت کی۔سعودی عرب میں سویڈن کے سفیر کی طلبی، او آئی سی اجلاس میں اجتماعی کارروائی کا فیصلہ.مائیگریشن آفس کے ترجمان جیسپر ٹینگروتھ نے کہا کہ مومیکا کی سویڈن میں رہائش اور ورک پرمٹ کی میعاد 16 اپریل 2024 کو ختم ہو جائے گی اور اگر وہ ان کی تجدید نہیں کراتی ہے تو اسے ملک بدر کر دیا جائے گا۔ فیصلہ اس حقیقت پر مبنی ہے کہ سلوان نے اجازت نامے کے لیے اپنی درخواست میں غلط بیانات دیے۔ میڈیا رپورٹس میں کہا گیا ہے کہ سلوان مومیکا اس فیصلے کو چیلنج کریں گے اور کیس کو مائیگریشن کورٹ میں لے جائیں گے۔امیگریشن سروس نے دلیل دی کہ سلوان کی ملک بدری کا حکم نافذ نہیں کیا جا سکتا کیونکہ “اس بات کا خدشہ ہے کہ اسے تشدد اور غیر انسانی سلوک کا سامنا کرنا پڑے گا، اس لیے اسے اپریل 2024 کے وسط تک عارضی رہائش کا اجازت نامہ دیا گیا تھا۔” سلوان مومیکا اپنے عارضی رہائشی اجازت نامے کی میعاد ختم ہونے سے پہلے ناروے پہنچا جہاں وہ مردہ پایا گیا۔

اپنا تبصرہ لکھیں