38 وفاقی سیکرٹریز میں سے 26 کا تعلق پنجاب، 10 کا سندھ سے ہے۔

حکومت پاکستان کے 38 حاضر سروس وفاقی سیکرٹریز میں سے 26 کا تعلق پنجاب سے ہے، جب کہ وفاقی سطح پر بیوروکریسی کے اعلیٰ ترین عہدوں پر ایک بھی اہلکار ایسا نہیں ہے جس کا تعلق بلوچستان سے ہو۔رپورٹ کے مطابق وفاقی سطح پر گریڈ 18 اور اس سے اوپر کے 20 افسران ایسے ہیں جنہوں نے دوہری شہریت حاصل کر رکھی ہے۔ گزشتہ روز قومی اسمبلی کے اجلاس کے دوران حکومت نے ارکان کے سوالات پر یہ معلومات ایوان کے سامنے پیش کیں۔ اسمبلی اسلام آباد ہائی کورٹ کے 6 ججز کی جانب سے سپریم جوڈیشل کونسل کو لکھے گئے خط پر بحث کی اجازت نہ دینے پر تحریک انصاف نے اس اجلاس میں شدید احتجاج کیا۔پیپلز پارٹی کی شہلا رضا کی جانب سے پوچھے گئے ایک سوال کے تحریری جواب میں وزارتی اسٹیبلشمنٹ ڈویژن نے وفاقی سیکرٹریز کی مکمل فہرست اور ان کی رہائش گاہیں فراہم کر دیں۔ اعداد و شمار بتاتے ہیں کہ 38 وفاقی سیکرٹریز میں سے 26 کا تعلق پنجاب سے ہے۔ اس کے بعد 7 دیہی علاقوں سے ہیں۔ سندھ، شہری سندھ سے 3 اور خیبر پختونخوا سے 2۔وفاقی وزیر نے کہا کہ وفاقی سیکرٹریز کی تقرری کے حوالے سے صوبوں کو کوئی کوٹہ مختص نہیں کیا گیا۔ خیال رہے کہ بلوچستان اسمبلی کے اراکین کو صوبے کے حکام کی جانب سے مبینہ طور پر ہراساں کیا گیا اور ملازمتوں کا کوٹہ بھی پورا نہیں کیا گیا۔ قومی اسمبلی اور سینیٹ میں مسلسل احتجاج کر رہے ہیں۔متحدہ قومی موومنٹ (پاکستان) کے رانا عنصر کی جانب سے اٹھائے گئے ایک اور سوال کے جواب میں حکومت نے قومی اسمبلی کو بتایا کہ 18ویں جماعت اور اس سے اوپر کے 20 حاضر سروس افسران ہیں جن کے پاس دوسرے ممالک کی شہریت ہے۔ اعداد و شمار بتاتے ہیں کہ ان افسران میں سے 10 برطانوی شہری ہیں جبکہ ان میں سے 6 کے پاس کینیڈا کی شہریت ہے اور ان میں سے 4 امریکی شہری ہیں۔دوہری شہریت رکھنے والے بیوروکریٹس پر کوئی پابندی نہیں ہے، لیکن معاشرے کے کچھ طبقات کا مطالبہ ہے کہ حکومت کے اہم عہدوں جیسے سیاستدان، جج اور فوجی افسران پر کسی بھی دہری شہریت کا تقرر نہیں کیا جانا چاہیے۔برطانوی شہریت کے حامل اہلکاروں میں اسپیشل سیکریٹری کامرس سارہ سعید (BS-22)، صائمہ علی (ہیڈ آف سیکشن P&D بورڈ، پنجاب (BS-19)، طحہٰ احمد فاروقی (سیکرٹری برائے معذور افراد کو بااختیار بنانے، سندھ) شامل ہیں۔ 20)، جان محمد (ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل ایف آئی اے، اسلام آباد ہیڈ کوارٹر (BE-21)، زیم اقبال شیخ (ڈائریکٹر ایف آئی اے، اسلام آباد (BS-20)، سہیل احمد شیخ (اے جی فنانس،کوئٹہ (BS-19)، ریٹائرڈ لیفٹیننٹ عمران شوکت (اسسٹنٹ سی پی او کراچی (BS-19)، فواد الدین ریاض قریشی (ڈائریکٹر انٹیلی جنس بیورو، پی پی لاہور (BS-19)، وقار احمد (پراجیکٹ ڈائریکٹر PMU برائے سیف سٹی پروجیکٹ، پشاور) BS-19) اور جاوید احمد بلوچ (DDFIA کراچی، BS-18)۔رابعہ اورنگزیب (انٹری ڈویژن، آئی سی ٹی ایڈمنسٹریشن، BS-18)، ثمر احسان (ایڈیشنل سیکرٹری اسٹیبلشمنٹ ڈویژن، BS-21)، شاہد جاوید (ڈی آئی جی، نیشنل ہائی ویز اینڈ موٹروے پولیس، لاہور، BS-20)، ندیم حسین (ایس ایس پی) سی ٹی ڈی لاہور، BS-19)برکت حسین کھوسہ (ڈی آئی جی کوسٹل ہائی وے، کوئٹہ، BS-19) اور حیدر اشرف (CPO لاہور، BS-19)۔ امریکی شہریت کے حامل چار افسران میں، محمد وشاک (جوائنٹ سیکرٹری اوورسیز پاکستانی، اور HRD، BS-20) غلام ہیں۔ مجتبیٰ جوئے (OSD، اسٹیبلشمنٹ ڈویژن، BS-20)، عادل میمن (SSP میرپورخاص، BS-19) اور عاطف نذیر (SSP (ایڈمنسٹریشن) لاہور، BS-19)۔

اپنا تبصرہ لکھیں