تحریک انصاف کا سنی اتحاد کونسل کے ساتھ انتخابی اتحاد کا اعلان

اسلام آباد: پی ٹی آئی نے سنی اتحاد کونسل سے انتخابی اتحاد کا اعلان کردیا، بیرسٹر گوہر نے کہا کہ قومی، پنجاب اور خیبرپختونخوا اسمبلی میں ہمارے امیدوار سنی اتحاد کونسل سے اتحاد کریں گے۔ اس بات کا اعلان پی ٹی آئی رہنماؤں بیرسٹر گوہر، عمر ایوب، رؤف حسن نے ایم ڈبلیو ایم کے سربراہ علامہ راجہ ناصر عباسی اور سنی اتحاد کونسل کے چیئرمین صاحبزادہ حامد رضا کے ہمراہ مشترکہ پریس کانفرنس میں کیا۔

ہم نے یہ قدم مخصوص نشستوں کے تحفظ کے لیے اٹھایا ہے، بیرسٹر گوہر
بیرسٹر گوہر نے کہا کہ تمام صوبوں میں ہمارے حمایت یافتہ امیدوار کامیاب ہوئے، ہم نے 3 کروڑ سے زائد ووٹ حاصل کیے، ہمارے حساب سے پی ٹی آئی نے قومی اسمبلی کی 180 نشستیں حاصل کی ہیں، قومی اسمبلی، پنجاب اسمبلی اور کے پی اسمبلی میں ہمارے امیدواروں نے کامیابی حاصل کی ہے۔ جیت لیا سنی اتحاد کونسل میں شامل ہوں گے، ہم وفاق اور ان صوبوں میں اپنی حکومت بنائیں گے، ہم نے کچھ نشستیں حاصل کرنے کے لیے یہ قدم اٹھایا ہے۔ بیرسٹر گوہر نے کہا کہ فارم 45 کا فارم 47 ہونا چاہیے، پشاور سے ہماری سات آٹھ سیٹوں پر ڈی سی اور دیگر نے دھاندلی کی ہے، دھاندلی کی تہہ تک پہنچنا چاہیے کیونکہ یہ عوامی مینڈیٹ کا معاملہ ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ مولانا فضل الرحمان فراڈ کے خلاف جدوجہد میں ہمارے ساتھ ہیں، جو بھی پاکستان تحریک انصاف کو چھوڑے گا اسے تنہا چھوڑ دیا جائے گا، جس نے پی ٹی آئی چھوڑی ہے اسے واپس لانے کا فیصلہ قیدی نمبر 804 ہی کر سکتا ہے۔

عمران خان اقتدار میں آتے ہی بشریٰ بی بی، عمر ایوب سمیت تمام قیدیوں کو رہا کر دیں گے۔
پی ٹی آئی کے وزارت عظمیٰ کے امیدوار عمر ایوب نے کہا کہ ہماری جماعت وفاق میں حکومت بنائے گی اور ہم صوبوں میں بھی حکومت بنائیں گے۔ خدا خواتین کارکنوں اور کارکنوں کو جیلوں سے رہائی دلائے گا۔ عمر ایوب نے کہا کہ ہم پاکستان میں کسی قسم کی فرقہ واریت نہیں چاہتے، ہم ملک میں امن اور ہم آہنگی چاہتے ہیں۔ لیاقت علی چٹھہ کے بیان میں انکشاف ہوا ہے کہ کراچی، سندھ میں ہماری نشستوں پر انتخابات سے قبل پری پول پلاننگ جاری ہے۔ حملہ کیا گیا ہے، پشاور کی آٹھ سیٹوں پر قبضہ کر لیا گیا ہے۔

عمران خان کے غلامی سے آزادی کے نعرے کے ساتھ ہیں، راجہ ناصر عباس
ایم ڈبلیو ایم کے سربراہ علامہ راجہ ناصر عباس نے کہا کہ یہ بہت اچھا فیصلہ ہے۔ سنی اتحاد کونسل کے ساتھ اس اتحاد کے فیصلے میں وہ عمران خان کے ساتھ ہیں، پاکستان کے عوام نے عمران خان کے غلامی سے آزادی کے نعرے کو مسترد کر دیا ہے۔ انہیں مسلط کرنے کی کوشش کی گئی، بانی پی ٹی آئی باہر تھے، ہم تب بھی ان کے ساتھ تھے، اب بانی پی ٹی آئی کو باعزت طریقے سے نکالیں گے۔

تمام مسالک اور اقلیتیں پی ٹی آئی کے ساتھ ہیں، حامد رضا
سنی اتحاد کونسل کے سربراہ حامد رضا نے کہا کہ ہمارا اتحاد کوئی نیا نہیں، یہ اتحاد گزشتہ آٹھ سال سے ہے، مجلس وحدت مسلمین، سنی اتحاد کونسل اور پی ٹی آئی نے باہمی مشاورت کے بعد یہ فیصلہ کیا ہے۔ ‘کسی کو نہ چھوڑیں، کسی کو نہ چھیڑیں’ کے اصول پر عمل کرتے ہوئے تمام دھڑے پی ٹی آئی کے ساتھ ہیں اور اقلیتیں بھی۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ ہم فرقہ واریت کے خلاف ہیں، اسی لیے ہم پی ٹی آئی کے ساتھ ہیں کیونکہ اس ملک میں فرقہ واریت پھیلانے میں سب سے زیادہ ملوث جماعت مسلم لیگ (ن) ہے اور اس کے سربراہ رانا ثناء اللہ ہیں۔

اپنا تبصرہ لکھیں