سعودی عرب: خطے میں امن کا واحد راستہ آزاد فلسطینی ریاست کا قیام ہے

سعودی وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان نے کہا کہ اسرائیل سمیت مشرق وسطیٰ میں امن و استحکام کا واحد راستہ فلسطینی ریاست کا قیام ہے۔ میونخ سیکورٹی اجلاس میں شرکت کے دوران اسرائیل کے ساتھ تعلقات معمول پر لانے کے سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ سعودی عرب اب غزہ میں جنگ بندی پر رضامندی پر توجہ مرکوز کر رہا ہے تاکہ وہاں انسانی امداد کی فراہمی پر توجہ مرکوز کی جا سکے۔ ریاض اکثر یہ کہہ چکا ہے کہ وہ اسرائیل کے ساتھ سفارتی تعلقات اس وقت تک معمول پر نہیں لائے گا جب تک ایک آزاد فلسطینی ریاست کو تسلیم نہیں کیا جاتا۔ دوسری جانب اسرائیلی صدر اسحاق ہرٹزگ نے سعودی عرب پر زور دیا ہے کہ وہ اسرائیل کے ساتھ اپنے تعلقات کو معمول پر لائے اور یہ “حماس پر فتح” کی نمائندگی کرتا ہے۔ انہوں نے میونخ سیکیورٹی کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا: “اسرائیل پر حماس کے حملے کا ایک مقصد ریاض کے ساتھ اپنے تعلقات کو معمول پر لانے کے لیے بات چیت میں تاخیر کرنا تھا۔”

”جنگ بندی کی تازہ ترین بات چیت زیادہ امید افزا نہیں ہے”
اسی سال، اسرائیل اور حماس کے درمیان جنگ میں ثالثی کرنے والے قطر نے کہا کہ حالیہ دنوں میں اسرائیل اور حماس کے درمیان غزہ میں جنگ بندی پر بات چیت “زیادہ امید افزا” نہیں تھی۔ وزیر اعظم محمد بن عبدالرحمن الثانی نے کہا کہ وہ پر امید ہیں لیکن انہوں نے مزید کہا کہ “وقت ہمارے ساتھ نہیں ہے”۔ یہ جبکہ اسرائیل کے وزیراعظم نے کہا ہے کہ بین الاقوامی دباؤ میں اضافے کے باوجود وہ رفح پر زمینی حملے کے منصوبے پر کام کریں گے۔ حماس جنگ بندی کے معاہدے تک پہنچنے میں پیش رفت نہ ہونے کا الزام اسرائیل پر عائد کرتی ہے۔ قاہرہ میں بات چیت جاری ہے کیونکہ امریکہ، اسرائیل، مصر اور قطر کے اعلیٰ حکام تنازع کو ختم کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ میونخ سیکیورٹی کانفرنس میں عالمی رہنماؤں کے ایک اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے شیخ محمد نے کہا: “گزشتہ چند دنوں کا رجحان واقعی حوصلہ افزا نہیں ہے، لیکن جیسا کہ میں ہمیشہ دہراتا ہوں، ہم ہمیشہ پرامید رہیں گے اور ہمیشہ جاری رکھیں گے۔” انہوں نے مزید کہا: “مجھے یقین ہے کہ اس معاہدے میں ہم بڑے پیمانے پر مذاکرات کر رہے ہیں اور ہمیں ان مذاکرات کے انسانی حصے میں اب بھی کچھ مسائل نظر آتے ہیں۔” اسرائیل نے 7 اکتوبر کو حماس کے زیرقیادت عسکریت پسندوں کے اسرائیل پر حملے کے بعد اپنا فوجی آپریشن شروع کیا، جس میں کم از کم 1,200 افراد ہلاک اور 253 یرغمال بنائے گئے۔ حماس کی وزارت صحت کے مطابق اسرائیلی حملوں میں 28,800 سے زائد افراد ہلاک ہوئے، جن میں زیادہ تر خواتین اور بچے تھے۔ اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو نے کہا کہ انہوں نے امریکی صدر جو بائیڈن کی درخواست کے بعد مذاکرات کار بھیجے تاہم انہوں نے مزید کہا کہ وہ مزید بات چیت کے لیے واپس نہیں آئے کیونکہ حماس کے مطالبات ’مفروضوں‘ سے زیادہ کچھ نہیں تھے۔ گروپ نے کئی مطالبات پیش کیے جن میں فلسطینی قیدیوں کا تبادلہ، اسرائیلی افواج کا مکمل انخلاء اور 45 روزہ جنگ بندی کے بعد تنازعات کا خاتمہ شامل ہے۔

اپنا تبصرہ لکھیں