طالبان کی حکومت سے پہلے کابل میں ویلنٹائن ڈے کیسے منایا جاتا تھا؟

14 فروری 2021 کو کابل میں ویلنٹائن ڈے ہے۔ طالبان کے افغانستان پر دوبارہ کنٹرول حاصل کرنے میں چھ ماہ باقی ہیں۔ نیو سٹی میں مشہور کیفے ‘i Cafe’ کی دوسری منزل کے ہال میں رنگ برنگے گروپ چھت سے لٹک رہے ہیں۔ چھت پر کھڑے دو ستون دل کی شکل کے پودے ہیں جیسے پروٹا تاؤ، اور درمیان میں ایک دل پر ہیپی ویلنٹائن ڈے لکھا ہوا ہے۔ سردیوں کا موسم ہے، دو حلقے رہ گئے ہیں اور کیفے کی بڑی بڑی کھڑکیاں جو پہلے بختاور ٹاور کی طرح دکھائی دیتی تھیں، اب سوکھ چکی ہیں۔ راحت فتح علی خان کی آواز میں ’تمہے دل لگی‘ گانا چل رہا ہے اور اس نے ماحول کو مزید رومانوی بنا دیا ہے۔ کوئی آدھا لڑکا یا لڑکی پھولوں کا گلدستہ لے کر چلتے ہیں اور سب کی توجہ اپنی طرف مبذول کر لیتے ہیں اور ان کے سامنے بیٹھے جاننے والے اپنی نشستوں سے ہٹنے لگتے ہیں۔ کسی نے کیپوچینو یا لیٹ کافی، کسی نے لیموں اور شہد کی چائے، کوئی پیزا کھاتے ہیں اور کوئی سگریٹ اور سگریٹ کی روایت میں اپنی جوانی کو دھوتا ہے۔ یہ کیفے دارالحکومت کابل میں نوجوانوں کے مقبول hangouts میں سے ایک تھا۔ زیادہ تر دفتری لڑکے اور لڑکیاں وہاں بیٹھتے تھے۔ کبھی دل کے معاملات اور کبھی پیشہ ورانہ زندگی پر کہانیاں اور مشورے ہوتے۔ گھریلو پارٹیاں بھی منعقد ہوئیں اور سالگرہ کی تقریبات بھی منعقد کی گئیں۔ ان میں سے کچھ نے اپنا کام ادھر ادھر کر دیا اور ہمیشہ ایک کونے پر قبضہ کر لیا۔ غیر ملکی مہمانوں نے اپنے جاننے والوں کو بھی بندر مدعو کیا۔ یوم محبت؛ منگنی، شادیاں اور اظہار محبت حال ہی میں جب کابل میں محبت کرنے والوں یا ‘ویلنٹائن ڈے’ منایا جانے لگا تو اس قسم کی کافی کا رنگ اور بو بھی محسوس کی گئی۔ اسے ایک خاص سجاوٹ دی گئی تھی اور اسے آراستہ کیا گیا تھا۔ اس دن ان کی زندگی کے کچھ خاص مواقع کا اہتمام کیا گیا تھا۔ جو اپنی منگنی یا شادی کے دن کو ‘ویلنٹائن ڈے’ سے تشبیہ دیتے تھے اور اسے ان کیفے میں مناتے تھے۔ جو اس دن اپنی بیوی یا شوہر کو کسی کیفے یا ریستوراں میں مدعو کرے گا اور انہیں خصوصی دعوت دے گا۔ کچھ نے اپنے بچوں کے ساتھ مل کر جشن منایا۔ ایسا بھی ہوتا تھا کہ اس دن کوئی اپنی والدہ یا خاندان کے کسی عزیز کو تحفہ دے کر اس سے اپنی محبت کا اظہار کرتا۔ لیکن عدم تحفظ نے دلوں کی خوشی کو کم کر دیا ہے اور ایسی جگہوں اور ایسے پیار کرنے والے بینڈوں اور مواقع کی تعداد کو کم کر دیا ہے۔

فلاور اسٹریٹ؛ محبت کی گلی

کافو سے آگے کابل کی گلفروشی گلی کو بھی اس دن زیادہ سجایا جائے گا اور شائقین کا ہجوم زیادہ ہوگا۔ دل کی شکل کے اور رنگ برنگے پودے دکانوں کے سامنے کھڑے یا لٹکے ہوئے تھے۔ ان کے سامنے سجے گفٹ بکس رکھے ہوئے تھے اور ہر پھول فروش نے کوشش کی کہ زیادہ سے زیادہ تازہ پھولوں کے گچھے بیچے۔ صبح کی میٹنگ کے بعد میڈیا والے اس گلی، شہر نو اور کارتے میں جاتے اور اس دن کے جشن منانے والوں کو اپنی نشریات اور رپورٹس کے لیے بلاتے۔
کون کہے گا کہ ‘ویلنٹائن’ اس کی منگنی ہے اور اسے تحفہ خریدے گا۔ کوئی کہے گا کہ وہ اپنی بیوی کو اس دن کی مبارکباد دینے پھولوں کے پیچھے چلے گئے، کوئی کہے گا کہ ان کی محبت صرف اپنی ماں اور ملک سے ہے اور دوسری محبتوں کی کوئی انتہا نہیں ہے۔ لیکن اس دن کو اس طرح منانا زیادہ تر کابل جیسے بڑے شہروں تک محدود رہا۔ جب 15 اگست 2021 کو طالبان نے ایک بار پھر افغانستان پر حکومت کی اور ان کے دور حکومت میں پہلی بار 14 فروری یعنی ویلنٹائن ڈے آیا تو انہوں نے اسی گلفروشی گلی میں لوگوں کو یوں تبلیغ کی جیسے وہ یہ دن منا رہے ہوں۔ “حرام” ہیں اور ان سے بچنا چاہیے۔ اس سال دوسری بار ’’یوم محبت‘‘ طالبان حکومت کے دور میں آیا ہے لیکن نہ تو گلفروشی گلی اور نہ ہی وہ کیفے ان ماضی کی بندرگاہوں اور مواقع کے گواہ ہیں۔ ’’ای کیفے‘‘ جمہوریہ کے دور میں نوجوانوں کی یادوں اور یادوں کی جگہ تھا لیکن طالبان حکومت نے اسے ابتدائی دنوں میں بند کردیا، رنگ ڈھل گیا اور کچھ عرصے بعد اس پر ایک نشان لگا دیا گیا جس پر لکھا تھا ’’۔ کرایہ پر خریداری کریں”۔

اپنا تبصرہ لکھیں