کراچی میں ایڈینو وائرس کے کیسز میں تیزی سے اضافہ

کراچی: موسمیاتی تبدیلیوں اور ماحولیاتی آلودگی کے باعث کراچی میں ایڈینو وائرس قابو سے باہر ہو گیا ہے۔ کراچی میں موسمیاتی تبدیلیوں کے باعث گزشتہ 15 سے 20 دنوں میں نزلہ، بخار، کھانسی اور سینے میں انفیکشن کے کیسز میں تیزی سے اضافہ ہوا ہے۔ سول اسپتال میں روزانہ ایک ہزار سے زائد مریض ان علامات کے ساتھ آرہے ہیں۔ اے ایم ایس سول اسپتال ڈاکٹر ہریش کمار نے بتایا کہ ہفتہ کو سول اسپتال کی او پی ڈی میں اے ڈی وائرس اور سانس کی نالی کے شدید انفیکشن کے 782 کیسز سامنے آئے تھے، جب کہ آج یہ تعداد بڑھ کر 1275 ہوگئی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ زیادہ تر مریض سر درد، زکام اور بخار کے ساتھ آرہے ہیں لیکن اگر ان کا بلڈ پریشر ٹیسٹ کرایا جائے تو یہ نارمل ہے، یہ بخار تقریباً ایک ہفتہ تک رہتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بچوں اور بوڑھوں کا خاص خیال رکھا جائے، انہوں نے شہریوں کو ناقص خوراک سے گریز کرتے ہوئے ابلا ہوا پانی اور ماسک استعمال کرنے کا مشورہ دیا۔ انہوں نے کہا کہ جب مریض ہمارے پاس بخار اور گلے میں خراش کی شکایت لے کر آتے ہیں تو ہم انہیں ہسپتال سے ہی اینٹی پائریٹکس، اینٹی بائیوٹک اور کھانسی کی دوائیں دیتے ہیں۔ رات اور شام میں موسم ٹھنڈا ہوتا ہے جبکہ دوپہر کے وقت گرم ہوتا ہے، موسمیاتی تبدیلیوں اور ماحولیاتی آلودگی کی وجہ سے ان کیسز کی تعداد میں اضافہ ہو رہا ہے۔
سول ہسپتال کے چیف میڈیکل آفیسر ڈاکٹر عبداللطیف شیخ نے بتایا کہ رپورٹ ہونے والے 90 فیصد کیسز وائرل انفیکشن ہیں جبکہ کچھ بیکٹیریا کی وجہ سے ہوتے ہیں۔ اس حوالے سے سول اسپتال کے ایمرجنسی انچارج ڈاکٹر عمران نے بتایا کہ اسپتالوں میں ڈائریا کے کیسز بھی معمول کے مقابلے میں دو گنا بڑھ گئے ہیں۔ اس سے قبل سول اسپتال میں ڈائریا کے 4 سے 6 کیسز سامنے آتے تھے لیکن اب سول اسپتال میں روزانہ 10 سے 12 کیسز ڈائریا رپورٹ ہو رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آلودہ پانی کی وجہ سے مریضوں میں ڈائریا کے مرض میں اضافہ ہو رہا ہے اور مریضوں کے جسم میں پانی اور نمک کی کمی کے باعث ان کے گردے بھی متاثر ہو رہے ہیں۔ جناح اسپتال کراچی کے جنرل فزیشن ڈاکٹر فیصل جاوید نے کہا کہ اڈینو کوئی نیا وائرس نہیں ہے، اس کی ویکسین موجود ہے، اس سے بچاؤ انفلوئنزا اور کورونا ویکسین کے ذریعے ممکن ہے، ذیابیطس اور دمہ کے مریضوں کو زیادہ احتیاط کرنی چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ چونکہ یہ ایک وائرل انفیکشن ہے جو ایک سے دوسرے میں پھیلنے کی صلاحیت رکھتا ہے، اس لیے گھبرانے یا گھبرانے کی ضرورت نہیں ہے، بس یہ ہے کہ شہری ایک دوسرے سے سماجی فاصلہ برقرار رکھیں اور ماسک پہنیں۔

اپنا تبصرہ لکھیں