کسانوں کی تحریک: خانوری بارڈر پر ایک شخص ہلاک، کسانوں اور پولیس میں جھڑپ

بدھ کی دوپہر، سیکورٹی فورسز نے پنجاب اور ہریانہ کی شمبھو سرحد پر کسانوں پر آنسو گیس کے گولے داغے۔ جائے وقوعہ سے آنے والی تصاویر میں ہر طرف دھواں اور افراتفری کا ماحول دکھائی دے رہا ہے۔ خبر رساں ایجنسیوں کی جانب سے جاری کی گئی ویڈیوز اور تصاویر میں آنسو گیس کے گولے داغے جانے کی آوازیں بھی سنی جا سکتی ہیں۔ دوسری جانب کھنوری میں ہریانہ پنجاب سرحد پر کشیدگی ہے۔ وہاں کچھ نوجوانوں کے زخمی ہونے کی خبر ہے۔ سنیکت کسان مورچہ (غیر سیاسی) رہنما جگجیت سنگھ دلیوال نے کہا ہے کہ پولیس نے مارچ کرنے والے کسان رہنماؤں پر آنسو گیس کے گولے داغے۔

”گولی لگنے سے مظاہرین کی موت”
کسان رہنماؤں کا کہنا ہے کہ پنجاب اور ہریانہ کی سرحد پر واقع کھنوری سرحد پر مبینہ طور پر گولی لگنے سے ایک کسان کی موت ہو گئی ہے۔ اس نوجوان کی موت کے بارے میں کسان لیڈروں نے میڈیا سے بات کی ہے۔ پٹیالہ کے ایک سرکاری اسپتال نے بھی شوبھاکرن سنگھ نامی نوجوان کی موت کی تصدیق کی ہے۔ دوسری جانب ہریانہ پولیس نے کسی بھی کسان کی موت کی خبر کو افواہ قرار دیا ہے۔ پٹیالہ کے راجندرا ہسپتال کے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ ڈاکٹر ہرنام سنگھ ریکھی نے تصدیق کی ہے کہ کسانوں کے احتجاج کے دوران کھنوری سرحد پر مبینہ فائرنگ میں 24 سالہ شوبھاکرن سنگھ کی موت ہو گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ موت کی بنیادی وجہ سر کے پچھلے حصے میں گولی لگنے کا زخم ہے۔ اسے راجندرا گورنمنٹ میڈیکل کالج اینڈ ہسپتال پٹیالہ میں مردہ لایا گیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ پوسٹ مارٹم کے بعد ہی تفصیلی معلومات سامنے آئیں گی۔ لاش کو اسپتال کے مردہ خانے میں رکھوا دیا گیا ہے۔ اسپتال کے مطابق شبھ کرن سنگھ ضلع بھٹنڈہ کے بلون گاؤں کا رہنے والا تھا۔ کسان رہنماؤں نے اس معاملے میں خبر رساں ایجنسیوں سے بات کی ہے۔ کسان رہنما پنڈھر نے کہا کہ “جب آپ ہمارے سیدھے لڑکوں کو مارتے ہیں تو امن کہاں ہے؟ ارجن منڈا نے جو کہا وہ نہیں کیا۔ ہم کبھی بات کرنے سے انکار نہیں کرتے۔ حکومت کو اس کے لیے ماحول بنانا چاہیے۔ جب ہمارے لوگ شہید ہو رہے ہیں تو بات چیت۔ مناسب نہیں ہیں۔”

”شمبھو بارڈر پر کسان کیوں جمع ہوئے؟”
کسان مزدور سنگھرش سمیتی اور بھارتیہ کسان یونین (سدھوپور) کی قیادت میں پنجاب کی کسان تنظیموں کے ایک گروپ نے مرکزی حکومت کے خلاف ‘دہلی چلو’ کی کال دی ہے۔ کسانوں کے مطالبات میں فصلوں کے لیے کم از کم امدادی قیمت کی قانونی ضمانت، سوامی ناتھن کمیشن کی رپورٹ پر عمل درآمد اور بی جے پی لیڈر کے ذریعہ مبینہ طور پر قتل کیے گئے چار سکھ کسانوں کے لیے انصاف، دیگر مطالبات شامل ہیں۔ دلی چلو’ کی اپیل کے بعد 13 فروری کو کسانوں کی بڑی تعداد شمبھو اور خانوری سرحد پر پہنچ گئی تھی۔ ہریانہ انتظامیہ انہیں وہاں سے آگے جانے سے روک رہی ہے۔ ہریانہ حکومت نے سیکورٹی فورسز کی بھاری تعیناتی کے ساتھ ساتھ بڑے پیمانے پر پابندیاں عائد کر دی ہیں جس کی وجہ سے سڑکوں پر ٹریفک بھی ٹھپ ہو کر رہ گئی ہے۔ کسانوں اور سیکورٹی فورسز کے درمیان دو دن تک کشیدگی بھی دیکھی گئی۔ کسان تنظیموں کا کہنا ہے کہ سیکورٹی فورسز کی طرف سے فائر کیے گئے آنسو گیس کے گولوں سے کئی کسان زخمی ہوئے ہیں۔ مرکزی وزیر زراعت ارجن منڈا نے کسانوں سے بات کرنے کے بعد کہا کہ وہ ان کے مطالبات کا پرامن حل تلاش کرنا چاہتے ہیں۔ منڈا نے کہا، “باہمی افہام و تفہیم، باہمی رابطے اور مسلسل بات چیت کے ذریعے کسی بھی چیز کو حل کیا جا سکتا ہے۔ ہم ہمیشہ اس کے حق میں ہیں۔

اپنا تبصرہ لکھیں