یوکرین کی افواج اہم شہر اودیوک سے پیچھے ہٹ گئیں

یوکرین کی فوج کا کہنا ہے کہ اس نے ملک کے مشرق میں واقع چھوٹے لیکن اہم شہر اودیوک سے اپنی افواج کو واپس بلا لیا ہے۔ اس شہر کا کئی ماہ سے روسی افواج نے محاصرہ کر رکھا ہے۔ یوکرین کی مسلح افواج کے کمانڈر اولیکسینڈر سرسکی نے کہا کہ “اس نے یہ قدم فورسز کے گھیراؤ کو روکنے اور فوجیوں کی جان و مال کے تحفظ کے لیے اٹھایا ہے۔” انہوں نے مزید کہا کہ ان فورسز کو “مناسب خطوط” پر بھیج دیا گیا ہے۔ تقریباً مکمل طور پر تباہ شدہ شہر اُدیوک ڈونیٹسک کے قریب ہے، جس پر 2014 میں روس نواز ملیشیا نے قبضہ کر لیا تھا اور بعد میں اسے روس نے غیر قانونی طور پر الحاق کر لیا تھا۔ یہ جگہ دراصل 2014 سے ایک جنگی علاقہ ہے۔
روسی صدر ولادیمیر پوتن نے 24 فروری 2022 کو یوکرین پر مکمل حملے کا حکم دیا۔ ہفتے کے روز، مرحوم جنرل سرسکی نے کہا کہ انہوں نے یہ فیصلہ “اوڈیوکا کے ارد گرد آپریشنل صورتحال” کی بنیاد پر کیا ہے۔ انہوں نے کہا، “ہمارے فوجیوں نے اپنی فوجی ڈیوٹی فخر کے ساتھ نبھائی، انہوں نے مضبوط روسی افواج کو تباہ کرنے کے لیے اپنی طاقت میں سب کچھ کیا۔امریکی قومی سلامتی کونسل کے ترجمان جان کربی نے اس سے قبل کہا تھا کہ اوڈیوکا کے گرنے کا خطرہ ہے، کیونکہ ان کے مطابق یوکرائنی افواج کو میدان میں ہتھیاروں اور گولہ بارود کی کمی کا سامنا ہے۔ انہوں نے کہا کہ “روس یکے بعد دیگرے یوکرائنی پوسٹوں پر حملہ کرنے کے لیے متحرک افواج بھیج رہا ہے اور چونکہ کانگریس نے ابھی تک بل کی منظوری نہیں دی ہے، اس لیے ہم روسی حملوں کو روکنے کے لیے یوکرین کو میزائل فراہم نہیں کر سکتے”۔ اس ہفتے کے آغاز میں امریکی کانگریس نے کئی ماہ کے سیاسی تنازعے کے بعد 95 ارب ڈالر کے غیر ملکی امدادی پیکج کی منظوری دی تھی، جس میں سے 60 ارب یوکرین کے لیے ہیں، لیکن اس منصوبے کو ایوان نمائندگان میں رکاوٹوں کا سامنا ہے۔ روس کے ساتھ جنگ ​​میں، جس کی بہت بڑی فوجی طاقت ہے، یوکرین امریکہ اور دیگر مغربی ممالک کے ہتھیاروں اور گولہ بارود پر بہت زیادہ انحصار کرتا ہے۔ نیٹو کے سیکرٹری جنرل جینز سٹولٹن برگ نے جمعرات کو خبردار کیا کہ یوکرین کو جاری فوجی امداد کی منظوری میں امریکہ کی ناکامی کا اثر میدان جنگ پر پہلے ہی پڑا ہے۔

اپنا تبصرہ لکھیں