عمران خان نے سیکیورٹی خدشات ختم ہونے تک آن لائن میٹنگز کا حکم دے دیا۔

“عمران خان کی جانب سے جیل میں وکلا سے ملاقات کی درخواست پر تحریری سماعت کا حکم جاری کردیا گیا، سپرنٹنڈنٹ اڈیالہ جیل کو عمران خان کی سیکیورٹی خدشات دور ہونے تک آن لائن ملاقات کرنے کا بھی حکم دیا گیا۔”
جیل حکام کے مطابق، اسلام آباد ہائی کورٹ کے جسٹس سردار اعجاز اسحاق خان نے سیکیورٹی وجوہات کی بنا پر جیل جانے پر پابندی کا تحریری حکم نامہ جاری کیا۔حکم نامے میں کہا گیا ہے کہ اگر جیل میں آن لائن وزٹ کی سہولت دستیاب نہیں تو بانی پی ٹی آئی کے کوآرڈینیٹر کو انتظامات کرنے کی اجازت دی جائے، آن لائن وزٹ کی جگہ پر انٹرنیٹ کی سہولت مطلوبہ رفتار اور کارکردگی کے معیار کے مطابق ہونی چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ اگر ضرورت پڑی تو انٹرنیٹ استعمال کرنے والی ٹیلی کام کمپنی کو طلب کرکے حلف نامہ دینے کا حکم دیا جائے گا۔ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد نے اعتراض کیا کہ جیل قوانین میں آن لائن ملاقاتوں کی اجازت نہیں۔ جس پر عدالت نے کہا کہ ایڈووکیٹ جنرل کے دلائل میں کوئی میرٹ نہیں کیونکہ سب جانتے ہیں کہ جیل رولز 1978 میں بنائے گئے تھے۔ اس میں آن لائن ویڈیو میٹنگ کی سہولت نہیں تھی۔ اس کے بعد حکومت کو اس معاملے پر غور کرنے کے لیے ایسی کسی آن لائن میٹنگ کی ضرورت نہیں رہی۔عدالت نے حکم دیا کہ اسلام آباد ہائی کورٹ کے حکم پر آن لائن میٹنگ کے ذریعے عمل کیا جائے۔ ایڈووکیٹ جنرل نے کہا کہ آن لائن میٹنگ میں سیاسی بات چیت ہوگی۔ جس پر عدالت نے کہا کہ سوال یہ ہے کہ اگر جسمانی ملاقات ہوتی تو کیا سیاسی معاملات کے علاوہ کوئی بات ہوتی؟ عدالت نے جیل سپرنٹنڈنٹ سے 22 مارچ کو عملدرآمد رپورٹ طلب کر لی۔

اپنا تبصرہ لکھیں