عید الفطر سے قبل پیٹرول کی قیمت 290 روپے فی لیٹر تک پہنچنے کا امکان ہے۔

“اتوار (31 مارچ) کو عید الفطر سے پہلے، اگلے 15 دنوں تک پیٹرول کی قیمتوں میں 10 سے 11 روپے فی لیٹر تک اضافے کی توقع ہے، جس کی بنیادی وجہ درآمدی پریمیم اور بلند عالمی قیمتیں ہیں، جبکہ تیز رفتاری میں کمی ہے۔ ڈیزل کی قیمت میں 2 روپے فی لیٹر کا اضافہ متوقع ہے۔”
رپورٹ کے مطابق 15 روز قبل حکومت نے آئندہ 15 روز تک پیٹرول کی قیمت میں کوئی تبدیلی نہ کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔ پیٹرول کی موجودہ قیمت 280 روپے فی لیٹر کے قریب ہے، ممکنہ اضافے کے بعد یہ 280 روپے فی لیٹر ہو جائے گی۔ 290 روپے فی لیٹر تک جا سکتا ہے۔باخبر ذرائع کا کہنا ہے کہ عالمی سیاسی صورتحال کے باعث پیٹرول کی درآمدی قیمت میں تقریباً 4 ڈالر فی بیرل کا اضافہ ہوا ہے اور اس کی درآمد پر پریمیم 12.15 ڈالر فی بیرل سے بڑھ کر 13.5 ڈالر فی بیرل ہو گیا ہے، جس کے نتیجے میں حتمی شرح مبادلہ میں اضافہ ہوا ہے۔ پیٹرول کی قیمت میں 10 سے 11 روپے فی لیٹر اضافہ ہوگا۔دوسری جانب عالمی مارکیٹ میں ڈیزل کی قیمت میں کمی ہوئی ہے اور پاکستان اسٹیٹ آئل (پی ایس او) کی جانب سے ادا کیا جانے والا درآمدی پریمیم 6.50 ڈالر فی بیرل پر برقرار ہے، اس وجہ سے ہائی اسپیڈ ڈیزل کی قیمت 1.30 روپے سے کم ہو کر 1.30 روپے ہوگئی ہے۔ . 2.50 روپے فی لیٹر تک کمی متوقع ہے۔قیمتوں کے حساب کے حوالے سے حکام نے بتایا کہ گزشتہ دو ہفتوں کے دوران پیٹرول کی قیمت تقریباً 4 ڈالر فی بیرل اضافے سے 94.5 ڈالر جبکہ ڈیزل کی قیمت تقریباً 60 سینٹ کمی کے ساتھ 98.4 ڈالر فی بیرل ہوگئی۔15 روز قبل حکومت نے اگلے 15 دنوں تک پیٹرول کی قیمت 279.75 روپے فی لیٹر برقرار رکھنے اور ڈیزل کی قیمت 1.77 روپے کم کرکے 285.56 روپے فی لیٹر کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔حکومت پہلے ہی پیٹرول اور ڈیزل دونوں پر 60 روپے فی لیٹر کی ڈیولپمنٹ لیوی وصول کر رہی ہے، جو اس مالی سال میں بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) سے حکومت کے وعدے کے مطابق قانون کے تحت زیادہ سے زیادہ حد ہے۔ 869 ارب جمع کرنے کا ہدف ہے۔حکومت نے پہلی ششماہی (جولائی سے دسمبر) کے دوران 475 ارب روپے اکٹھے کیے ہیں، حکومت کو مالی سال کے اختتام تک تقریباً 970 ارب روپے جمع کرنے کی توقع ہے، حالانکہ نظرثانی شدہ ہدف اب 920 ارب روپے مقرر کیا گیا ہے۔ جون. . پٹرولیم مصنوعات اور بجلی کی قیمتیں مہنگائی کے اصل محرک رہے ہیں، پٹرول زیادہ تر ذاتی ٹرانسپورٹ، چھوٹی گاڑیوں، رکشوں اور موٹر سائیکلوں میں استعمال ہوتا ہے جس کا براہ راست اثر کم اور متوسط ​​آمدنی والے افراد کے بجٹ پر پڑتا ہے۔اس کے برعکس، ڈیزل کی قیمت مہنگائی پر زیادہ اثر ڈالتی ہے، کیونکہ یہ بھاری ٹرانسپورٹ، ٹرینوں، زرعی انجنوں جیسے ٹرک، بس، ٹریکٹر، ٹیوب وہیل اور تھریشر میں استعمال ہوتا ہے، خاص طور پر سبزیوں اور دیگر اجناس کے لیے۔ کھانے کی قیمتیںاس وقت حکومت پٹرول اور ڈیزل دونوں پر تقریباً 82 روپے فی لیٹر چارج کر رہی ہے، حالانکہ تمام پٹرولیم مصنوعات پر جنرل سیلز ٹیکس (جی ایس ٹی) صفر ہے، لیکن حکومت دونوں پر 60 روپے فی لیٹر کے حساب سے پٹرولیم ڈیولپمنٹ لیوی وصول کر رہی ہے۔ مصنوعات .. اس کے علاوہ حکومت پٹرول اور ڈیزل پر لگ بھگ 19 سے 20 روپے فی لیٹر کسٹم ڈیوٹی بھی وصول کر رہی ہے۔پٹرول اور ڈیزل آمدنی کے بڑے ذرائع ہیں، جس کی ماہانہ فروخت تقریباً 7 سے 8 لاکھ ٹن ہے، جب کہ مٹی کے تیل کی ماہانہ کھپت صرف 10،000 ٹن ہے۔

اپنا تبصرہ لکھیں