ملک بھر سے مزید 9 ماحولیاتی نمونوں میں پولیو وائرس کی تصدیق ہوگئی

“ملک کے چاروں صوبوں سے اکٹھے کیے گئے مزید نو ماحولیاتی نمونوں میں ٹائپ 1 پولیو وائرس کا ٹیسٹ مثبت آیا ہے جس سے اس سال مثبت ٹیسٹوں کی مجموعی تعداد 83 ہو گئی ہے۔”
رپورٹ کے مطابق مزید برآں، بدین کو ان 30 اضلاع کی فہرست میں شامل کیا گیا ہے جہاں پولیو وائرس سیوریج کے پانی سے پھیلتا ہے۔ نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ اسلام آباد میں پولیو کے خاتمے کے لیے ریجنل ریفرنس لیبارٹری نے ضلع بدین سے نمونے اکٹھے کیے ہیں۔ پولیو وائرس کے ٹاپ ون کی تصدیق ہوئی ہے جبکہ 6 متاثرہ اضلاع چمن، کراچی ملیر، کراچی ساؤتھ، کراچی ایسٹ، پشاور اور لاہور کے 8 نمونے مثبت پائے گئے ہیں۔انہوں نے پولیو وائرس کے ہائی ٹرانسمیشن سیزن کے آغاز سے عین قبل ماحولیاتی نمونوں میں تیزی سے اضافے پر تشویش کا اظہار کیا۔ انہوں نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ درجہ حرارت میں اضافے سے ان بچوں میں نئے کیسز یا انفیکشن کے امکانات بڑھ سکتے ہیں۔ ان لوگوں میں اضافہ ہوگا جو مدافعتی نظام سے محروم ہیں یا جو ویکسینیشن سے محروم ہیں یا جن کے والدین نے جان بوجھ کر پولیو ٹیم کو خوراک دینے سے روکا ہے۔انہوں نے کہا کہ اگر سیوریج کے پانی میں پولیو کا وائرس پایا جاتا ہے تو اس کے نمونے کو مثبت سمجھا جاتا ہے، انہوں نے مزید کہا کہ کسی علاقے کے سیوریج کے پانی کا نمونہ اس بات کا تعین کرنے کا بنیادی پیرامیٹر ہوتا ہے کہ پولیو ویکسینیشن مہم کامیابی سے جاری ہے یا نہیں۔ ‘کم درجہ حرارت پر، پولیو وائرس ستمبر سے اپریل تک کم منتقلی کے موسم میں کم فعال رہتا ہے، لیکن مئی سے اگست تک یہ زیادہ فعال ہو جاتا ہے، جس کی وجہ سے زیادہ بچے متاثر ہوتے ہیں۔’انہوں نے کہا کہ پولیو کے کیسز کسی بھی شہر میں لوگوں کے ایک شہر سے دوسرے شہر منتقل ہونے کی وجہ سے سامنے آسکتے ہیں لیکن سیوریج کے پانی میں وائرس کی موجودگی کا مطلب ہے کہ علاقے میں ویکسینیشن مہم اپنا ہدف پورا نہیں کر پائی ہے۔ سکی اور سیوریج کے پانی میں موجود وائرس اس بات کی بھی نشاندہی کرتے ہیں کہ مقامی بچوں میں قوت مدافعت کمزور ہوتی ہے اور ان میں بیماری لگنے کا خطرہ ہوتا ہے۔پاکستان پولیو پروگرام نے اس سال پہلے ہی ملک بھر میں پولیو کے خاتمے کی 2 مہمیں چلائی ہیں، جن میں سے ہر ایک چمن اور سکھر میں پانچ سال سے کم عمر کے 4.3 لاکھ سے زائد بچوں کو قطرے پلا رہی ہے۔ ایک اور مہم اپریل اور آنے والے مہینوں میں 26 اضلاع میں شروع کی جائے گی جس میں بچوں کی قوت مدافعت کو بڑھانے کے لیے وبا سے بچاؤ کی مہم جاری ہے۔

اپنا تبصرہ لکھیں