مولانا فضل الرحمان کا ضمنی انتخابات کے بائیکاٹ کا اعلان، مختلف شہروں میں جلسے

“جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے رمضان کے بعد مختلف شہروں میں ضمنی انتخابات اور ریلیوں کے بائیکاٹ کا اعلان کردیا۔”
رات گئے ایک ویڈیو پیغام میں مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ سب جانتے ہیں کہ جمعیت علمائے اسلام (ف) کی مرکزی کونسل نے 8 فروری 2024 کے نتائج کو مسترد کر دیا ہے۔انہوں نے کہا کہ 2018 میں عوام کے ووٹ کا حق چھینا گیا، 2024 میں ایک بار پھر عوام کے ووٹ کا حق چھینا گیا۔انہوں نے کہا کہ ہم نے ان انتخابات کے نتائج کو تسلیم اور مسترد نہ کرنے کا فیصلہ کیا کیونکہ یہ پارلیمنٹ عوام کی کم اور حکمران اسٹیبلشمنٹ کی زیادہ نمائندہ ہے۔مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ ہم نے عوام کے پاس جانے کا فیصلہ کیا ہے، لوگوں کو اعتماد میں لیں گے تاکہ وہ ووٹ کے حق کے لیے متحد ہو سکیں۔انہوں نے کہا کہ ہم ملک بھر میں بڑے پیمانے پر جلسے منعقد کریں گے اور ان جلسوں کا عنوان ‘عوامی اسمبلی’ ہوگا۔ اس تحریک میں عوام کو متحد کرنے کے لیے اپوزیشن جماعتوں کو بھی اکٹھا کیا جائے گا۔ تاکہ وہ اپنی حفاظت کر سکیں۔ متحد ہو کر ووٹ دیں۔جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ نے اعلان کیا کہ وہ اس تحریک کا آغاز بلوچستان سے کریں گے، 25 اپریل کو پشین میں ایک زبردست ریلی نکالی جائے گی جس میں بلوچستان کے عوام شرکت کریں گے، 2 مئی کو کراچی میں جلسہ عام کا انعقاد کیا جائے گا۔ . جس میں سندھ کے عوام شرکت کریں گے، تیسرا جلسہ 9 مئی کو پشاور میں ہوگا، جس میں خیبرپختونخوا کے عوام شرکت کریں گے۔انہوں نے کہا کہ اس کے بعد ہم لاہور کے لیے ایک تاریخ طے کریں گے جس میں پورے ملک کو شرکت کی دعوت دی جائے گی اور ایک بہت بڑا مجمع اس کا جلسہ کرے گا۔ انہوں نے کہا کہ اتحاد کے لیے دیگر سیاسی جماعتوں سے بھی رابطہ کر رہے ہیں۔ ان جلسوں کی کامیابی کے لیے عوام، ہمارے کارکنان، صوبائی اور متعلقہ تنظیمیں متحد ہو جائیں گی۔مولانا فضل الرحمان کا مزید کہنا تھا کہ الیکشن کمیشن بے بس ہے، انہیں نتائج مرتب کرنے کی اجازت نہیں، اداروں کی جانب سے بھیجے گئے نتائج کی وجہ سے الیکشن کمیشن میں کوئی سستی نہیں، سول بیوروکریسی میں مداخلت ہے۔ خفیہ ادارے اور ایجنسیاں آئینی اور قانونی اختیارات میں مداخلت کر رہی ہیں۔انہوں نے کہا کہ آج پہلی بار ہائی کورٹ کے جج بھی کہہ رہے ہیں کہ ہمارے مقدمات میں مداخلت کی جا رہی ہے، ہمیں دھمکیاں دی جا رہی ہیں اور اس دباؤ میں ہم عوام کو انصاف نہیں دے سکتے۔انہوں نے کہا کہ اس حوالے سے وزیر دفاع خواجہ آصف نے ماضی کے دریچوں سے پردہ اٹھایا ہے کہ کس طرح طاقتور اداروں نے انتخابی معاملات میں مداخلت کی اور نتائج کو تبدیل کیا۔ ہمیں حمایت ملی ہے، ہمارا موقف درست ہے، ہم نے صحیح آواز اٹھائی ہے اور انشاء اللہ ہم اسے آگے بڑھائیں گے۔مولانا فضل الرحمان نے مزید اعلان کیا کہ جمعیت علمائے اسلام (ف) نے ضمنی انتخابات کے بائیکاٹ کا اعلان کر دیا، جے یو آئی کا کوئی امیدوار ضمنی انتخاب میں حصہ نہیں لے گا، ضمنی الیکشن اسی الیکشن کا تسلسل ہے، ہم نے ضمنی انتخاب میں حصہ لینا ہے۔ ماضی کے نتائج پر بھروسہ کریں۔ بھروسہ نہیں تو ضمنی انتخابات میں انصاف کی امید کیسے رکھ سکتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ’’اللہ نے چاہا تو رمضان کے بعد بھی تحریک جاری رہے گی، فیصلے ایوان میں نہیں بلکہ میدان میں ہوں گے، طاقتوروں کے اجتماع سے نہیں، عوام کے اجتماع سے‘‘۔ واضح رہے کہ ہماری جدوجہد پرامن اور آئین و قانون کے دائرے میں رہے گی، ہماری تحریک میں تشدد کا عنصر نہیں ہوگا، عوام کو احتجاج کا حق ہے۔

اپنا تبصرہ لکھیں