پاکستان کا گوادر جو چین کے لیے انتہائی اہم ہے، کیوں اور کیسے ڈوب رہا ہے؟

“قزبانو بلوچ کا گھر گوادر کے پرانے علاقے میں ہے جو حالیہ بارشوں میں مکمل طور پر منہدم ہو گیا ہے۔ ان کی ایک بیٹی ہے اور ان کا داماد ایک درزی کے پاس یومیہ اجرت پر کام کرتا ہے۔”
کاسابانو فش ہاربر روڈ کے قریب ایک مکان میں رہتا تھا۔ ان کا کہنا تھا کہ 16 گھنٹے تک بارش ہوئی اور پھر ان کے علاقے میں پانی بھر گیا اور کافی پانی آگیا۔ کاسابانو کے مطابق یہ طوفان 2021 میں آنے والے طوفان سے بڑا تھا۔ بارش کے ساتھ ہی سڑکوں کا پانی بھی گھروں میں داخل ہوگیا۔گوادر ایک ماہی گیری کا شہر ہوا کرتا تھا لیکن جب 2007 میں سابق فوجی صدر جنرل پرویز مشرف نے یہاں بندرگاہ کا افتتاح کیا تو شہر اور اس کے گردونواح کا ماحول تیزی سے بدلنا شروع ہوا۔ یہ بندرگاہ چین نے بنائی تھی۔2015 میں جب چین پاکستان اقتصادی راہداری (CPEC) کا اعلان ہوا تو گوادر اس منصوبے کا مرکز بن گیا۔اس وقت شینزین چین کا تیسرا بڑا شہر بن چکا تھا۔ کوہ باتل (پہاڑی) کی گود میں بنی بندرگاہ نے نہ صرف مقامی لوگوں کے لیے رکاوٹیں کھڑی کیں بلکہ بارش کے پانی کا راستہ بھی روک دیا۔جب میں کوہ بٹل اور بندرگاہ کے درمیان واقع گورنمنٹ ہائی سکول گوتری بازار پہنچا تو دیکھا کہ گراؤنڈ کے ساتھ ساتھ سکول کے اندر بھی پانی بھرا ہوا ہے۔ سکول کے ہیڈ ماسٹر محمد حسن نے مجھے گیلے رجسٹر دکھائے۔ اور بتایا کہ سامنے والا کمرہ کمپیوٹر لیب تھا جس میں تمام کمپیوٹر پانی میں ڈوب گئے تھے۔ ہیڈ ماسٹر محمد حسن نے کہا کہ یہ پہلی بار بارش نہیں ہوئی، اس سے قبل بھی شدید بارشیں ہو چکی ہیں لیکن پانی سمندر میں گیا ہو گا۔ تھا
ان کے مطابق، “پہلے گھاٹ بنایا گیا، پھر بندرگاہ اور پھر ایکسپریس وے۔ جس کی وجہ سے پانی آبادی کی طرف آرہا ہے۔ پہلے پانی کے بہاؤ کے لیے قدرتی راستہ ہوا کرتا تھا جس سے پانی سمندر میں گرتا تھا، لیکن راستے بند ہو گئے اور کوئی متبادل راستہ نہیں بنایا گیا، اب پانی کے لیے راستے کی ضرورت ہے، پانی کا رخ مکمل طور پر آبادی کی طرف ہے۔ مڑ گیا ہے اور اس کی وجہ سے مکانات بھی گر گئے۔گوادر بندرگاہ کے گرد کنکریٹ کی دیوار تھی جو آبادی کو الگ کرتی تھی۔ مالابند کے علاقے میں بارش کا پانی باہر نکلنے کے لیے ایک کونے سے دیوار توڑ دی گئی۔ ایسا پہلی بار نہیں ہوا ہے۔ اس سے قبل بھی بارشوں کے دوران پانی نکال کر دیوار کو دوبارہ تعمیر کیا گیا تھا۔ گوادر ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے چیف انجینئر سید محمد کا خیال ہے کہ پہلے پانی کا بہاؤ بندرگاہ کے علاقے میں ہوا کرتا تھا۔ بعد میں وہاں ایک کھلی نہر بنائی گئی جسے بند کر دیا گیا۔ان کے بقول بندرگاہ والے ہی جانتے ہیں کہ یہ نہر کیوں بند کی گئی۔ جس کی وجہ سے سارا پانی قبرستان سے گزر کر ملابند کے علاقے میں پہنچ گیا۔ ساحل سمندر کے سامنے میرین ڈرائیو کے نام سے ایک چوڑی اور چھ لین سڑک بنائی گئی ہے جس سے نہ صرف علاقے کی خوبصورتی بلکہ آبادی اور سمندر میں بھی اضافہ ہوا ہے۔ اس نے بیچ میں ڈیم کی شکل بھی اختیار کر لی۔
گوادر میں ترجیح بندرگاہ اور پھر اس سے منسلک انفراسٹرکچر ہے۔ 2018 میں، حکومت نے بندرگاہ تک سامان پہنچانے کے لیے چھ لین، 19 کلومیٹر طویل ایسٹرن ایکسپریس وے بنایا۔ اس سے صورتحال مزید خراب ہوگئی۔ اس ایکسپریس وے کی سطح آبادی سے زیادہ تھی۔ مقامی لوگوں کے مطابق اس سے قدرتی نکاسی کا راستہ بھی بند ہو گیا۔میونسپل کارپوریشن کے چیئرمین شریف میانداد کا کہنا ہے کہ اسے میگا سٹی، دبئی سٹی، سی پی ای سی سٹی کہا جاتا ہے لیکن افسوسناک بات یہ ہے کہ پہلے گوادر اس سے بہتر ہوا کرتا تھا۔ ان کے مطابق پہلے جب بھی بارش ہوتی تھی۔ اس کا پانی اس میں آتا تھا۔ سمندر. پانی نکالنے کے دو راستے تھے، بائیں اور دائیں طرف۔ ان دونوں سڑکوں سے پانی سمندر میں جاتا تھا لیکن ترقی کے نام پر بننے والی سڑکوں پر تعمیر کے دوران دونوں اطراف پلاسٹک کی چادریں بچھا دی گئی ہیں۔ایسا اس لیے کیا گیا کہ سمندر کا پانی نہ آئے لیکن اس بارش کی وجہ سے پانی وہاں بھی نہیں جا رہا۔
“سیوریج کا نظام ٹھیک نہیں ہے۔”
مراد بلوچ ماہی گیر ہیں۔ 2010 کی بارش میں ان کے گھر کے تین کمرے گر گئے تھے۔ حالیہ بارشوں کی وجہ سے ان کے گھر کے دو کمروں بشمول بیت الخلا اور کچن میں ایک بار پھر دراڑیں پڑ گئی ہیں۔ جب ہم ان سے ملے تو وہ جنریٹر کی مدد سے گھر سے سڑک تک پانی پمپ کر رہے تھے۔مراد بلوچ نے بتایا کہ پہلے بالٹی سے پانی لیا لیکن تھک گیا۔ میں مقامی کونسلرز کے پاس گیا اور جنریٹر مانگا تو انہوں نے جواب دیا کہ پیٹرول نہیں ہے۔ مراد بلوچ نے خود پیٹرول خریدا۔ دوستوں اور پڑوسیوں سے پائپ کے ٹکڑے اکٹھے کیے اور پانی لے جانے کے لیے ایک لمبا پائپ بنایا۔ مراد بلوچ کو یہ تمام کوششیں اس لیے کرنی پڑیں کہ ان کے علاقے میں سیوریج کا نظام ٹھیک نہیں ہے۔حالیہ بارشوں کے علاوہ گزشتہ 15 سالوں میں جب بھی بارش ہوتی ہے، شہر سے پانی نکالنے کے لیے گڑھے کھودے جاتے ہیں۔ دوسرا طریقہ پائپ کے ذریعے پانی نکالنا ہے۔ گوادر ڈویلپمنٹ اتھارٹی بھی یہی طریقہ اپناتی ہے۔ یہ سب کرنے سے سڑکیں دوبارہ خراب ہو جاتی ہیں۔ شہر کا ماسٹر پلان اس وقت تیار کیا گیا جب 2004 میں گوادر ڈویلپمنٹ اتھارٹی (GDA) کا قیام عمل میں آیا۔ اس ماسٹر پلان میں مرکزی حکومت نے شہری انفراسٹرکچر کے لیے 25 ارب روپے فراہم کرنے کا اعلان کیا تھا۔جی ڈی اے حکام کے مطابق 20 سال گزرنے کے باوجود صرف آدھی رقم ہی ملی ہے۔ اس میں شہر کی نکاسی اور سیوریج کے لیے رقم شامل نہیں تھی۔ بلوچستان میں ڈاکٹر مالک بلوچ کے اقتدار میں آنے کے بعد ریاستی حکومت نے گوادر کے نکاسی آب کے نظام کے لیے 1.35 کروڑ روپے رکھے تھے۔ اس میں سے صرف آدھی رقم جاری ہوئی ہے اور ایک مرحلہ کا کام مکمل ہو چکا ہے۔جی ڈی اے کے چیف انجینئر سید محمد کے مطابق انہوں نے 8.5 کلومیٹر ڈرینج اور 16 کلومیٹر سیوریج کی تعمیر کی۔ اس میں پرانے شہر کا 15 سے 16 فیصد حصہ شامل ہے۔ اس تعمیر میں اس نے ان علاقوں کو ترجیح دی جہاں پانی کھڑا تھا۔ اس کے دعوے کے مطابق اس نے جہاں بھی اسے بنایا تھا وہاں پانی نکل گیا تھا۔
“بڑھتے ہوئے سمندر اور زمینی پانی”
الحاد بلوچ کے گھر اور گلی میں پانی جمع ہوگیا ہے۔ وہ گھر کے اندر بالٹی سے پانی نکالتا تھا لیکن پانی واپس آتا رہتا تھا۔ انہوں نے بتایا کہ شام تک پانی نکالا جاتا ہے اور صبح دوبارہ پانی جمع ہو جاتا ہے۔ماہرین کا کہنا ہے کہ زیر زمین پانی کی سطح بڑھ گئی ہے۔ یہ ایک طرف سیوریج اور نکاسی آب کے پانی کو راستہ نہ ملنے کی وجہ سے ہے تو دوسری طرف سمندری کٹاؤ کی وجہ سے پانی آگے بڑھ گیا ہے۔ پزیر بلوچ ماہر ارضیات ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ سمندر کی سطح بلند ہو رہی ہے۔بقول اُن کے، ’’سیوریج اور نکاسی آب کا نظام نہ ہونے کے برابر ہے۔ اگر ایسا ہے تو یہ ٹھیک سے کام نہیں کر رہا ہے۔ اس بارش سے پہلے بھی یہاں زیر زمین پانی کی سطح بلند تھی۔ جس کی وجہ سے دوبارہ پانی نکلنا شروع ہو گیا ہے۔ان کے مطابق، “آبادی کے ساتھ ساتھ تعمیراتی کام میں بھی اضافہ ہوا ہے۔ اس سے پانی کے بہاؤ کا قدرتی راستہ بدل گیا ہے۔ اس سے پانی کی طلب میں اضافہ ہوا ہے جس کے لیے لوگ زیر زمین پانی استعمال کر رہے ہیں۔” جیسے ہی زیادہ پمپنگ ہوتی ہے، سمندری پانی خود بخود آگے بڑھ جاتا ہے۔ اس کی وجہ سے ہونے والی تبدیلیوں کی وجہ سے نشیبی زمینیں ڈوب رہی ہیں۔”گوادر ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے چیف انجینئر سید محمد کا کہنا ہے کہ صورتحال تشویشناک ہے۔ شہر کے پرانے علاقوں میں سمندر کا پانی ڈیڑھ فٹ پر آتا ہے۔ کئی جگہوں پر راتوں رات پانی نکال کر نالیاں بنا دی ہیں۔ بقول اُن کے، ’’اگر آپ گھر کی بنیاد بھی رکھتے ہیں تو اس کے لیے بھی آپ کو زیرِ زمین پانی نکالنا پڑتا ہے۔‘‘ آبادی بڑھے گی تو زمین پر بوجھ بڑھے گا۔ پہلے کچے گھر ہوا کرتے تھے، اب لوگ پکے گھر بنا رہے ہیں۔گوادر پورٹ کا انتظام پورٹ اتھارٹی کے زیر انتظام ہے اور باقی شہر کی منصوبہ بندی گوادر ڈویلپمنٹ اتھارٹی کرتی ہے۔ ان دونوں کے درمیان ایک اور تنظیم ہے – میونسپل کمیٹی، گوادر۔ یہ مقامی عوامی نمائندوں کی تنظیم ہے۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ یہ سکیم میگا سٹی ہے لیکن بلدیاتی ادارہ دیہی ہے۔ اس کے پاس نہ وسائل ہیں اور نہ ہی نکاسی کا کوئی نظام۔ گوادر میں پینے کے پانی کی قلت ہے۔ یہاں پہلا سوال یہ تھا کہ یہ پانی کہاں سے آئے گا؟اب یہ سوال سنگین ہو گیا ہے کہ یہ استعمال شدہ پانی کہاں جائے گا کیونکہ اگر فری زونز میں بین الاقوامی ہوائی اڈے، نئے رہائشی منصوبے اور صنعتیں لگائی جاتی ہیں تو پانی نکالنا پڑے گا۔

اپنا تبصرہ لکھیں