کراچی: بچوں میں خسرہ کے مریضوں میں اضافہ، اسپتالوں میں صورتحال تشویشناک

“گرم موسم کی وجہ سے کراچی میں خسرہ کے کیسز میں گزشتہ چند روز میں معمولی کمی کے باوجود انفیکشن اب بھی تشویشناک ہے، اسپتالوں میں وائرس کی علامات کے مریضوں کی تعداد میں اب بھی اضافہ ہورہا ہے۔”
رپورٹ کے مطابق ماہرین کا کہنا ہے کہ اسپتالوں میں لائے گئے زیادہ تر بچوں کو ویکسین نہیں لگائی گئی اور وہ غذائی قلت کا شکار ہیں۔ ناپا چورنگی میں سندھ کے متعدی امراض کے اسپتال اور ریسرچ سینٹر کے پیڈیاٹرک سیکشن کی سربراہ ڈاکٹر ثمرین زیدی نے بتایا کہ رواں ماہ خسرہ کی علامات کے ساتھ 80 بچوں کو اسپتال میں داخل کیا گیا، جن میں سے 2 کی موت ہوگئی۔ ٹھٹھہ سے تعلق رکھنے والے بوڑھے بچے کو خسرہ اور نمونیا کی علامات کے ساتھ ہسپتال داخل کرا دیا گیا ہے۔ڈاکٹر ثمرین زیدی نے بتایا کہ بچے کو سانس لینے میں تکلیف ہو رہی تھی جس کی وجہ سے اسے انٹیوبیشن کرنا پڑا۔ ہفتہ کو ہسپتال نے خسرہ کے 3 مریضوں کو ڈسچارج کر دیا، جبکہ 3 بچے زیر علاج ہیں، تمام بچے وینٹی لیٹر پر ہیں۔ ان میں سے ایک ایک سال کی بچی ہے جو گزشتہ 10 دنوں سے موت سے لڑ رہی ہے۔ڈاکٹر ثمرین نے بتایا کہ بچی شدید غذائی قلت کا شکار ہے، اس کے ایک بہن بھائی کی خسرہ سے موت ہو چکی ہے، اور غذائی قلت کے شکار بچے نمونیا جیسی بیماریوں کا زیادہ شکار ہوتے ہیں اور ان کی موت کا خطرہ زیادہ ہوتا ہے۔نمونیا کے بارے میں بات کرتے ہوئے ڈاکٹر نے بتایا کہ اس بیماری کی ابتدائی علامات جیسے بخار، کھانسی، ناک بہنا اور آشوب چشم کو سنجیدگی سے نہیں لیا جاتا اور مریض تب ہی اسپتال آتے ہیں جب علامات شدید ہوجائیں۔رواں سال ہسپتال میں خسرہ سے 3 بچے جاں بحق ہو چکے ہیں اور اب تک 256 کیسز رپورٹ ہو چکے ہیں۔ نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف چائلڈ ہیلتھ کے ذرائع کے مطابق گزشتہ کئی ہفتوں سے خسرہ سے متاثرہ بچوں کی تعداد میں اضافہ ہو رہا ہے۔
“خسرہ کے کیسز میں معمولی کمی”
دوسری جانب پاکستان پیڈیاٹرک ایسوسی ایشن کے ڈاکٹر خالد شفیع کے مطابق موسم کی تبدیلی کے ساتھ گزشتہ 10 روز کے دوران خسرہ کے کیسز میں کمی آئی ہے۔ موسم کا فائدہ اٹھائیں اور اپنے بچوں کو ویکسین کروائیں، اگر وہ پہلے ہی ویکسین کر چکے ہیں تو اس بات کو یقینی بنائیں کہ ان کے قریبی افراد بھی ویکسین کر رہے ہیں۔ڈاکٹر خالد شفیع کے مطابق خسرہ میں پیچیدگیاں خود وائرل انفیکشن یا سیکنڈری بیکٹیریل انفیکشن کی وجہ سے ہو سکتی ہیں جو کہ بہت خطرناک ہے۔ ماہرین کے مطابق سال 2023 کے دوران ہسپتالوں میں خسرہ اور خسرہ کے کیسز کی بڑی تعداد رپورٹ ہوئی۔ سال. شہر کے دو اسپتالوں میں اس بیماری سے 106 بچے جاں بحق ہوئے۔انفیکشن سے متعلق سرکاری اعداد و شمار دستیاب نہیں ہیں۔ گزشتہ ماہ ایک پریس کانفرنس میں شیئر کیے گئے پی پی اے کے اعداد و شمار کے مطابق، 2023 کے دوران صوبے بھر کے 21 اضلاع میں خسرہ کے 122 کیسز رپورٹ ہوئے۔اعداد و شمار کے مطابق گزشتہ 4 سالوں میں خسرہ کے کیسز میں اضافہ ہوا ہے، 2020 میں کل 1,873 کیسز رپورٹ ہوئے، 2021 میں 6,293 کیسز، 2022 میں 4,990 کیسز اور پچھلے سال 8,51 کیسز رپورٹ ہوئے۔ تصدیق شدہ کیسز کی تعداد 2020 میں 675 سے بڑھ کر 2023 میں 4 ہزار سے زیادہ ہو گئی۔

اپنا تبصرہ لکھیں