گورنر کو وزیراعلیٰ، کابینہ کی سمری کے بغیر اجلاس بلانے کا کوئی آئینی حق نہیں۔

“پشاور ہائی کورٹ میں خیبرپختونخوا اسمبلی کی بعض نشستوں پر حلف نہ اٹھانے کی درخواست پر سماعت جاری ہے جس کے دوران جسٹس عتیق شاہ نے کہا کہ گورنر کو چیف کی سمری کے بغیر اجلاس بلانے کا آئینی حق نہیں ہے۔ وزیر یا کابینہ۔”
سماعت جسٹس عتیق شاہ اور جسٹس شکیل احمد کر رہے ہیں۔ سماعت کے دوران عدالت نے سپیکر بابر سلیم سواتی کے وکیل سے سوال کیا کہ کیا سپیکر آئین اور قانون پر عملدرآمد نہیں چاہتے؟ کیا سپیکر بعض نشستوں پر منتخب ارکان سے حلف نہیں لینا چاہتے؟وکیل نے جواب دیا کہ آرٹیکل 109 کے تحت گورنر نے اجلاس بلانے کے لیے سیکرٹری اسمبلی کو خط بھیجا تھا۔ عدالت نے پوچھا کہ آرٹیکل 106 کے تحت مخصوص نشستوں پر منتخب ہونے والے ارکان نے حلف اٹھایا ہے یا نہیں۔ گورنر کے خط کو کسی نے عدالت میں چیلنج نہیں کیا۔شاور ہائیکورٹ نے ریمارکس دیئے کہ عدالت کے 3 سوالات ہیں، کیا سپیکر نے اپنی ذمہ داری پوری کی؟ کیا سپیکر نے ارکان سے حلف لیا؟ اور کیا سپیکر منتخب اراکین سے حلف لینے کا ارادہ رکھتا ہے؟بابر سلیم سواتی کے وکیل نے جواب دیا کہ گورنر اسمبلی کا اجلاس نہیں بلا سکتے۔ عدالت نے اسپیکر اسمبلی کے خط پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اب اسمبلی کے سیکریٹری قانون بنائیں گے۔ سپیکر خط چھوڑ کر بتائیں کہ گورنر اجلاس بلا سکتے ہیں یا نہیں۔وکیل نے عدالت کو بتایا کہ اگر یہ سلسلہ جاری رہا تو وزیراعلیٰ کا اختیار ختم ہو جائے گا۔ اپوزیشن کے ایک چوتھائی نے اسمبلی کا اجلاس نہیں بلایا۔ سپیکر گورنر کو خط لکھیں گے جس پر گورنر اجلاس بلائیں گے۔ بغیر کسی طریقہ کار کے سیکرٹری نے گورنر کا لیٹر اسمبلی کو اجلاس بلانے کا دیا جس پر اسمبلی سیکرٹری نے محکمہ قانون اور ایڈووکیٹ جنرل سے محکمہ قانون کی رائے طلب کی۔عدالت نے تبصرہ کیا کہ مخصوص نشستوں پر منتخب ہونے والے ارکان کو الیکشن کمیشن نے آگاہ کیا ہے یا نہیں؟ کیا سپیکر ان سے حلف لینا چاہتے ہیں یا نہیں؟ وکیل نے جواب دیا کہ ہاں حلف اٹھانا چاہتے ہیں لیکن اس طرح اجلاس بلا کر نہیں۔ درخواست گزار کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ اسمبلی اجلاس صرف قانون بنانے کے لیے نہیں بلکہ قانون بنانے کے لیے ہے۔ حلف اٹھانا۔ انہیں حلف اٹھانے کے لیے بھی بلایا جاتا ہے، اکثریت کے باوجود حلف روک دیا جاتا ہے۔ تمھیں کیس بات کا ڈر ہے؟جسٹس عتیق شاہ نے ریمارکس دیئے کہ گورنر صوبائی حکومت یا وزیر اعلیٰ کی درخواست پر ہی اجلاس بلانے کے پابند ہیں۔ اپوزیشن کے وکیل نے کہا کہ پشاور ہائی کورٹ نے بھی کچھ نشستوں کی الاٹمنٹ سے متعلق فیصلہ دیا تھا، حلف نہیں اٹھانا۔ لارجر بنچ کے اس فیصلے کے مطابق اگر سپیکر حلف نہیں اٹھاتے تو گورنر بھی حلف اٹھا سکتے ہیں۔جس پر جسٹس عتیق شاہ نے کہا کہ کیا ایوان میں موجود ارکان کا حلف اٹھانا ضروری نہیں؟ اپوزیشن کے وکیل نے جواب دیا کہ سینیٹ الیکشن کے لیے ارکان کو بلایا جائے تو بھی حلف لیا جاسکتا ہے، گورنر کو اجلاس بلانے کا اختیار ہے۔ جسٹس عتیق شاہ نے کہا کہ گورنر وزیراعلیٰ کے مشورے پر اجلاس بلا سکتے ہیں۔ .کسی نے تیاری نہیں کی، سب صرف عدالت میں آئے ہیں، گورنر کو وزیر اعلیٰ اور کابینہ کی سمری کے بغیر اجلاس بلانے کا آئینی حق نہیں۔یاد رہے کہ گزشتہ سماعت میں پشاور ہائی کورٹ نے خیبرپختونخوا اسمبلی کی بعض نشستوں پر حلف نہ اٹھانے کے مطالبے کی سماعت کرتے ہوئے صوبائی اسمبلی کے اسپیکر کو کل تک عدالت میں جواب داخل کرنے کا حکم دیا تھا۔ پشاور ہائی کورٹ نے نشستوں پر حلف اٹھانے کے معاملے میں فریقین کو ابتدائی نوٹس جاری کرتے ہوئے 4 روز میں جواب طلب کرلیا۔سماعت کے دوران جسٹس شکیل احمد نے ریمارکس دیئے کہ قانون کی بالادستی ہونی چاہیے، سیاسی معاملات پر سیاست ہونی چاہیے، افسوس کی بات ہے کہ ہم کہاں ہیں اور ہمارے پڑوسی کہاں ہیں؟ درخواست پر خیبرپختونخوا کی مخصوص نشستوں سے منتخب ہونے والے ارکان کو حلف اٹھانے سے روک دیا گیا۔سنی اتحاد کونسل کو مخصوص نشستیں الاٹ نہ کرنے کے فیصلے کے خلاف درخواست پر پشاور ہائی کورٹ نے حکم امتناعی پر فیصلہ محفوظ کر لیا۔ ہائیکورٹ نے الیکشن کمیشن کو پری انٹری نوٹس بھی جاری کرتے ہوئے الیکشن کمیشن کو درخواستیں جمع کرانے کی ہدایت کی۔ کل تک جواب دیں۔بعد ازاں 7 مارچ کو پشاور ہائی کورٹ نے سنی اتحاد کونسل میں مخصوص نشستوں کی الاٹمنٹ کے خلاف دائر درخواست پر منتخب اراکین کو حلف اٹھانے سے روکنے کے اپنے حکم نامے میں 13 مارچ تک توسیع کردی۔

اپنا تبصرہ لکھیں