یوکرائن کی جنگ نے چینی معیشت کو نئی زندگی دی۔

چین اور روس نے اقتصادی تجزیہ کاروں کو غلط ثابت کرتے ہوئے اقتصادی اور سفارتی معاملات میں تعاون بڑھایا ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ یوکرائن کی جنگ نے چینی معیشت کو ایک نئی زندگی دی ہے۔ دونوں ممالک نے جامع اقتصادی تعاون کے ساتھ ایک نئی دنیا کی تشکیل کے لیے ہاتھ ملایا ہے۔حال ہی میں چھٹی بار روس کے صدر منتخب ہونے کے بعد ولادیمیر پوٹن اپنی نئی صدارت میں چین کا پہلا ہائی پروفائل دورہ کرنے جا رہے ہیں۔ برطانوی خبر رساں ادارے کے مطابق صدر پیوٹن مئی کے ہفتے میں چین کا دورہ کریں گے۔ چینی ہم منصب شی جن پنگ کے ساتھ تعاون کی نئی راہیں تلاش کرنے پر بھی بات چیت متوقع ہے۔امریکی میگزین نیوز ویک نے ایک تجزیے میں لکھا ہے کہ جنوری سے فروری 2024 کے درمیان روس اور چین کے درمیان کل 37 ارب ڈالر کی تجارت ہوئی۔ دونوں ممالک مختلف شعبوں میں تعاون بڑھانے کے لیے نئے طریقے تلاش کر رہے ہیں۔ یوکرین کی جنگ کے بعد سے چین کا مینوفیکچرنگ سیکٹر عروج پر ہے۔ اس جنگ سے متاثر ہونے والے ممالک نے چین کا رخ کیا ہے۔مغرب کی نظر میں روس اور چین اس کے سب سے بڑے تجارتی حریف اور دشمن ہیں۔ تین روز قبل امریکہ میں گیلپ پول میں 41 فیصد ووٹروں نے چین کو ملک کے لیے سب سے بڑا خطرہ قرار دیا تھا۔ روس دوسرے اور ایران تیسرے نمبر پر تھا۔روس کے صدر پیوٹن کے چھٹی بار صدر منتخب ہونے پر امریکہ اور یورپ نے شدید ردعمل کا اظہار کیا ہے۔ دوسری جانب بھارت، چین، شمالی کوریا اور ایران نے روسی صدر کو چھٹی بار منتخب ہونے پر مبارکباد دی ہے۔ اس سے سفارتی سطح پر پیدا ہونے والی تقسیم کا اندازہ بھی لگایا جا سکتا ہے۔ بھارت کیچ اپ کھیل رہا ہے تاکہ رند رند رہے اور جنت کھو نہ جائے۔چین، روس اور ایران ایک نیا اتحاد بنانے کی تیاری کر رہے ہیں۔ بھارت اس معاملے میں تذبذب کا شکار ہے کیونکہ اس کا امریکہ اور یورپ میں اچھا حصہ ہے۔ امریکہ اور یورپ کے تجزیہ کار چین اور روس کے درمیان بڑھتے ہوئے تعلقات اور ان کی شراکت میں بہت سے ممالک کے مفاد پر بہت فکر مند ہیں۔ اظہار کر رہے ہیں۔ چین نے کئی شعبوں میں یورپ کو پیچھے چھوڑ دیا ہے۔امریکہ میں تحفظ پسندی کا بھی چرچا ہے، یعنی وہ اپنی معیشت کو چین اور دیگر ابھرتی ہوئی معیشتوں کے اثر سے بچانے کے لیے درآمدات پر غیر معمولی ٹیکس لگانے کی تیاری کر رہا ہے۔ چین اور روس کا مشترکہ نقطہ نظر یہ ہے کہ مغرب تیزی سے اپنی مجموعی تاثیر کھو رہا ہے۔ یورپ کافی حد تک پیچھے ہٹ چکا ہے لیکن امریکہ کینیڈا کے ساتھ مل کر اب بھی ایشیائی طاقتوں کو کمزور کرنے کی کوشش کر رہا ہے۔ بڑے بحران سے بچنے کی تیاری۔

اپنا تبصرہ لکھیں