اسرائیل کی الاقصیٰ اسپتال پر بمباری، 24 گھنٹوں میں 77 فلسطینی شہید

“اسرائیل کا ایک بار پھر غزہ کے الاقصیٰ اسپتال پر حملہ، رات گئے الگ الگ حملوں میں 77 فلسطینی شہید ہوگئے۔”
خبر رساں ادارے اے ایف پی کی رپورٹ کے مطابق گزشتہ پیر کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں جنگ بندی کی قرارداد کے باوجود اسرائیل کے حملے جاری ہیں اور غزہ میں انسانی بحران مزید گہرا ہو گیا ہے۔ عالمی ادارہ صحت کے مطابق غزہ کے علاقے البلاح میں الاقصیٰ اسپتال پر اسرائیلی فضائی حملے میں کم از کم 4 افراد ہلاک اور 17 زخمی ہوگئے ہیں۔الاقصیٰ ہسپتال کے ترجمان خالد الدکاران نے کہا کہ حملے میں زخمی ہونے والوں میں کئی صحافی بھی شامل ہیں۔ اسرائیلی فوج نے دعویٰ کیا ہے کہ حملے میں فلسطینی اسلامی جہاد گروپ کے زیر انتظام کمانڈ سینٹر کو نشانہ بنایا گیا۔ غزہ میں سرکاری میڈیا آفس نے کہا کہ فضائی حملہ ہدف کو نشانہ بنایا گیا۔ ایک خیمہ جہاں بے گھر لوگ پناہ لے رہے تھے اور صحافی کام کر رہے تھے۔عالمی ادارہ صحت کے سربراہ ٹیڈروس نے مریضوں، صحت کے کارکنوں اور انسانی ہمدردی کے مشن کی حفاظت پر زور دیا اور جنگ بندی کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ اکتوبر سے اب تک 130 سے ​​زائد فلسطینی صحافی شہید ہو چکے ہیں۔ اسرائیلی فورسز غزہ میں دیگر طبی سہولیات کے علاوہ الاقصیٰ ہسپتال اور اس کے اطراف میں حملے کر رہی ہیں۔غزہ کی وزارت صحت کے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران اسرائیلی بمباری اور زمینی حملوں میں کم از کم 77 افراد ہلاک ہوئے، جن میں زیادہ تر خواتین اور بچے شامل ہیں، جس کے بعد شہید ہونے والے فلسطینیوں کی تعداد 32,782 ہوگئی۔
“نیتن یاہو کی سرجری”
دوسری جانب اسرائیلی وزیراعظم کے دفتر نے اعلان کیا کہ نیتن یاہو کی ہرنیا کی سرجری ہوئی ہے جس کے بعد اب وہ بہتر محسوس کر رہے ہیں۔ بیان کے مطابق 30 مارچ کو معمول کے چیک اپ کے دوران ان میں ہرنیا کی تشخیص ہوئی جس کے بعد انہوں نے سرجری کرانے کا فیصلہ کیا۔ سرجری کے بعد بیان جاری کیا گیا کہ نیتن یاہو کی سرجری کامیاب رہی جس کے بعد وہ مکمل طور پر صحت یاب ہو گئے۔ ہوش میں ہیں
“نئی فلسطینی کابینہ نے حلف اٹھالیا۔”
نئی فلسطینی حکومت، جس میں غزہ سے چار خواتین اور چھ وزراء شامل ہیں، نے 31 مارچ کو حلف اٹھایا تھا، لیکن اسے پہلے ہی اپنے ہی لوگوں کی طرف سے شکوک و شبہات کا سامنا ہے۔ نو منتخب وزیر اعظم محمد مصطفیٰ نے کہا کہ ان کی حکومت کی “پہلی ترجیح” جنگ کا خاتمہ ہے۔ مصطفیٰ نے کہا کہ ان کا بنیادی مقصد فلسطینی علاقوں کی تعمیر نو کرنا ہے جو تقریباً چھ ماہ کی لڑائی کے بعد اسرائیلی بمباری سے تباہ ہو گئے ہیں۔ ان کی نئی کابینہ میں 23 وزراء ہیں اور ان میں 4 خواتین اور 6 وزراء غزہ سے ہیں۔

اپنا تبصرہ لکھیں