افغان وزیر کی پاکستان سے امن مذاکرات کی اپیل، ٹی ٹی پی کو غیر قانونی قرار دے دیا۔

“افغان طالبان کے ایک سینئر رہنما نے اعتراف کیا ہے کہ پاکستان میں کالعدم دہشت گرد تنظیم کی سرگرمیوں کی وجہ سے عالمی برادری کی انگلیاں افغانستان کی طرف اٹھ رہی ہیں کہ وہ مل بیٹھ کر امن کے لیے بات کریں۔”
رپورٹ کے مطابق افغانستان میں طالبان حکومت کے نائب وزیر داخلہ محمد نبی عمری نے جنوب مشرقی شہر خوست میں ایک افطار تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہم پاکستان کی حکومت اور ان بھائیوں سے پوچھتے ہیں جو ان (کالعدم ٹی ٹی پی) کے خلاف لڑ رہے ہیں۔ ) انہیں ایک ساتھ بیٹھ کر بات کرنے کا مشورہ دینا۔افغان طالبان نجی طور پر پاکستان اور کالعدم ٹی ٹی پی پر براہ راست مذاکرات کے لیے دباؤ ڈال رہے ہیں تاکہ دو دہائیوں پر محیط اس تنازعے کو ختم کیا جا سکے جس نے قبائلی علاقے میں ہزاروں لوگوں کی جانیں لی ہیں اور بڑے پیمانے پر لوگوں کی نقل مکانی کی ہے۔لیکن یہ پہلا موقع ہے کہ افغان طالبان کے کسی سینئر رہنما نے اس معاملے پر عوامی سطح پر بات کرتے ہوئے نہ صرف پاکستان اور کالعدم ٹی ٹی پی کے درمیان براہ راست مذاکرات کا مطالبہ کیا ہے بلکہ دہشت گرد گروپ پر تنقید بھی کی ہے۔افغان حکومت کی طرف سے دونوں فریقوں کے درمیان بات چیت میں ‘سہولت فراہم کرنے’ کی کوششیں ماضی میں رک گئی ہیں، پاکستان نے افغانستان پر دہشت گردوں کو پناہ دینے اور کالعدم ٹی ٹی پی کے خلاف کریک ڈاؤن کرنے کا الزام لگایا ہے۔افغان طالبان نے اس بات کی سختی سے تردید کی ہے کہ کالعدم ٹی ٹی پی افغان سرزمین استعمال کر رہی ہے، اور پاکستان پر زور دیا ہے کہ وہ اپنی سرحدوں میں داخلی سلامتی کے مسائل کا حل تلاش کرے۔مارچ میں شمالی وزیر میں خودکش بم حملے میں سات فوجیوں کی ہلاکت کے جواب میں پاکستان کی جانب سے افغانستان کے علاقوں خوست اور پکتیکا میں فضائی حملے شروع کیے جانے کے بعد سے دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کشیدہ ہیں۔دونوں ممالک کے درمیان تعلقات میں جنگیں اور انقلابات دیکھنے میں آئے ہیں۔ بیواؤں اور یتیموں کے پیچھے، وطن اور معیشت کو تباہ کر رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ اب دنیا یہ بہانہ بنا رہی ہے کہ افغانستان میں دہشت گرد ہیں اور القاعدہ بھی ہے، میں قسم کھا کر کہتا ہوں کہ ہماری معلومات کے مطابق افغانستان میں القاعدہ کے ایک رکن کی بھی موجودگی کا کوئی ذکر نہیں ہوا۔محمد نبی عمری نے افغان طالبان کے تجربے کا حوالہ دیتے ہوئے پاکستان اور کالعدم ٹی ٹی پی کو خبردار کیا کہ کوئی بھی فریق جنگ نہیں جیت سکتا، ان کا کہنا تھا کہ 100 ملین اہلکاروں کی مضبوط فوج ہونے کے باوجود پاکستان اپنے مخالفین کو کچلنے سے قاصر ہے۔ اسی طرح غیر قانونی ٹی ٹی پی یہ جنگ نہیں جیت سکتی، افغان طالبان جنگ جیت گئے کیونکہ پوری افغان قوم ان کے پیچھے کھڑی ہے، انہیں خوراک اور رہائش فراہم کر رہی ہے۔انہوں نے افغان طالبان کے تجربے کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ جو بھائی پاکستان (کالعدم ٹی ٹی پی) کے خلاف لڑ رہے ہیں ہم ان سے کہتے ہیں کہ وہ اس لڑائی کو جہاد کہیں یا جنگ، ہم ان کے کام میں مداخلت نہیں کرتے لیکن ہمارا مشورہ یہ بھی ہے کہ اگر وہ لڑ رہے ہیں۔ نظام (ریاست) کے خلاف، اگر آپ 100 سال تک نظام کے خلاف لڑیں تو آپ جیت نہیں سکتے۔دریں اثناء محمد نبی عمری نے ایک بار پھر کالعدم ٹی ٹی پی کا نام لیے بغیر اس کا مذاق اڑایا اور کہا کہ شاید اسے پاکستانی عوام میں وسیع حمایت حاصل نہیں، انہوں نے مزید کہا کہ ’’ہمارا اس سے کوئی تعلق نہیں ہے، لیکن یہ لڑائی ہمارے لیے مشکل ہے۔ پاکستان میں اس تنازعے کے پھیلنے سے افغانستان کی صورتحال متاثر ہوتی ہے۔فوری طور پر یہ واضح نہیں ہوسکا کہ ایک سینئر افغان شخصیت کسی ایسے معاملے پر کس طرح خاموش رہے گی جس پر افغان قیادت حساسیت کی وجہ سے عوامی بحث سے گریز کرتی ہے، یہ ٹی پی کے ساتھ کسی بھی براہ راست مذاکرات کا حصہ نہیں ہوگا اور افغان حکومت کو ایکشن لینے پر مجبور کیا جائے گا۔ دوحہ معاہدے کی شرائط کے تحت ٹی ٹی پی کو کالعدم قرار دینے کا پابند ہے۔قابل اعتماد ذرائع نے بتایا کہ پاکستان نے بشام میں چینی شہریوں کے قتل میں کالعدم ٹی ٹی پی کے ملوث ہونے کے شواہد اکٹھے کر لیے ہیں، جنہیں چین کے ساتھ شیئر کیا جائے گا، ممکنہ طور پر اسے افغانستان کے ساتھ لایا جائے گا۔ چین افغانستان میں ایک بڑا سرمایہ کار رہا ہے اور دونوں ممالک میں اعلیٰ سطح کی سفارتی موجودگی برقرار رکھتا ہے، چین نے حال ہی میں افغانستان کے سفیر کو باضابطہ طور پر تسلیم کیا ہے۔

اپنا تبصرہ لکھیں