امریکہ اور چین کے صدور کے درمیان پہلا ٹیلی فونک رابطہ، 2 معاملات پر شدید اختلافات

امریکی صدر جو بائیڈن نے امریکی وفد کے دورہ بیجنگ سے قبل اپنے چینی ہم منصب شی جن پنگ کو فون کیا ہے۔ دونوں صدور کے درمیان یہ پہلا براہ راست ٹیلی فونک رابطہ تھا لیکن دونوں کے درمیان دو معاملات پر شدید اختلافات تھے۔ دونوں صدور نے اقتصادی تعلقات، یوکرین اور سائبر سیکیورٹی پر تبادلہ خیال کیا۔ چینی صدر نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان باہمی احترام اور یکساں تعاون ہے۔ برقرار رکھنا چاہئے۔شی جن پنگ نے بائیڈن کو بتایا کہ تائیوان کا مسئلہ ایک سرخ لکیر ہے جسے تعلقات میں عبور نہیں کرنا چاہیے، انہوں نے مزید کہا کہ اگر ٹیکنالوجی کی ترقی کو روکا گیا تو وہ خاموش نہیں رہیں گے۔ بین الاقوامی میڈیا کے مطابق اس معاملے پر بائیڈن اور شی جن پنگ کے درمیان شدید اختلاف ہے۔ یہ دو مسائل پائے گئے۔چینی صدر نے کہا کہ امریکہ چینی مصنوعات پر پابندی لگا کر معاشی خطرات پیدا کر رہا ہے۔ اس کے جواب میں بائیڈن نے کہا کہ امریکہ مختلف ٹیکنالوجیز کے ذریعے اپنی قومی سلامتی کے تحفظ کے لیے تمام ضروری اقدامات کرتا رہے گا۔ بائیڈن نے بھی TikTok پر پابندی لگانے سے پیچھے ہٹنے سے انکار کردیا۔یہ ٹیلی فونک گفتگو دو گھنٹے تک جاری رہے گی۔ امریکی مبصرین کا دعویٰ ہے کہ شی جن پنگ امریکہ کے ساتھ تناؤ کو کم کرنا چاہتے ہیں۔ امریکی وزیر خزانہ جینٹ زیلن بدھ سے چین کا دورہ کر رہی ہیں جب کہ امریکی وزیر خارجہ انتھونی بلینکن بھی آنے والے ہفتوں میں چین کا دورہ کرنے والے ہیں۔

اپنا تبصرہ لکھیں