بلوچستان: پنجاب سے تعلق رکھنے والے 9 مسافروں سمیت 11 افراد کو اغوا کے بعد قتل کر دیا گیا۔

“صوبہ بلوچستان کے ضلع نوشکی میں نامعلوم افراد کی فائرنگ سے پنجاب سے تعلق رکھنے والے 9 افراد سمیت 11 افراد جاں بحق اور 5 زخمی ہوگئے۔”
بلوچستان کے ضلع نوشکی کے ڈپٹی کمشنر حبیب اللہ موسیٰ خیل نے بتایا ہے کہ 12 اپریل کی رات 10 سے 12 مسلح افراد نے نوشکی تفتان ہائی وے N-40 کو سلطان چلچئی کے قریب بلاک کر دیا تھا کہ مسلح افراد نے تفتان جانے والی بس کو روک کر ہلاک کر دیا۔ مسافروں کی شناخت پریڈ کے بعد 9 مسافروں کو اغوا کر لیا گیا۔ایس ایچ او اسد مینگل نے بتایا کہ مسلح افراد قریبی سیکیورٹی فورسز کی چوکی پر راکٹ فائر کرکے فرار ہوگئے، مغوی مسافروں کا تعلق پنجاب سے ہے، ایجنسیوں کی بھاری ٹیم موقع پر پہنچ گئی، جس کے بعد نوشکی پولیس نے 9 مغوی افراد کی لاشیں برآمد کرلیں۔ جائے حادثہ کے قریب ایک پل کے نیچے سے۔حبیب اللہ موسیٰ خیل کا کہنا تھا کہ فائرنگ سے تمام افراد جاں بحق ہوئے، تمام افراد کی لاشیں کوئٹہ روانہ کردی گئی ہیں، لاشیں کوئٹہ کے سول اسپتال لائی جائیں گی، مزید برآں اسی رات ایک اور واقعے میں ایس ایچ او نوشکی نے بتایا کہ ناکہ بندی کے دوران مسلح افراد نے رکن صوبائی اسمبلی غلام دستگیر بادینی کے بھائی کی گاڑی پر فائرنگ کردی۔ ان کا کہنا تھا کہ فائرنگ کی وجہ سے ٹائر پھٹنے سے کار الٹ گئی۔
وزیر اعظم شہباز شریف نے نوشکی میں مسافروں کے اغوا کے بعد قتل کی مذمت کرتے ہوئے اہل خانہ سے گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کیا اور کہا کہ واقعہ کے ذمہ داروں اور ان کے سہولت کاروں کو سزا دی جائے۔ رپورٹ کے لیےانہوں نے کہا کہ دکھ کی اس گھڑی میں ہم متاثرین کے اہل خانہ کے ساتھ کھڑے ہیں اور دہشت گردی کے عفریت کو جڑ سے اکھاڑ پھینکیں گے، اس میں ملوث دہشت گردوں کو معاف نہیں کیا جائے گا۔وزیراعلیٰ پنجاب مریم نواز نے بھی نوشکی میں بس مسافروں کے اغوا اور قتل کے واقعے کی مذمت کی۔ مریم نواز نے واقعے پر دکھ کا اظہار کرتے ہوئے سوگوار خاندانوں سے اظہار تعزیت کیا، نفرت پھیلانے والوں کو بخشا نہیں جائے گا۔

اپنا تبصرہ لکھیں