سعودی کابینہ نے پاکستان کے ساتھ انٹیلی جنس تعاون کی منظوری دے دی۔

سعودی عرب اور پاکستان دہشت گردی سے متعلق جرائم سے نمٹنے کے لیے تعاون کریں گے۔ اس فیصلے کی منظوری سعودی ولی عہد محمد بن سلمان کی زیر صدارت کابینہ کے اجلاس میں دی گئی۔سعودی کابینہ نے دہشت گردی سے متعلق جرائم اور فنڈنگ ​​کے ذرائع سے نمٹنے کے لیے پاکستان میں اسٹیٹ سیکیورٹی ایجنسی اور ملٹری انٹیلی جنس سروسز کے ساتھ مفاہمت نامے کے مسودے پر دستخط کرنے کی منظوری دی۔ ملاقات میں مختلف علاقائی اور بین الاقوامی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا۔سعودی کابینہ نے پڑوسی ممالک سے آنے والے غیر ملکیوں کے اخراجات بھی برداشت کرنے کا اعلان کیا۔ یہ فیصلہ ان لوگوں پر لاگو ہوگا جنہیں ریاست میں رہنے کی اجازت دی گئی ہے۔سعودی پریس ایجنسی کے مطابق سعودی حکومت نجی کمپنیوں کو رہائش اور ورک پرمٹ، ملازمت اور آجر کی تبدیلیوں، سروس ٹرانسفر فیس، پروفیشن میں تبدیلی کی فیس اور چار سال تک اکیلے غیر ملکیوں کو ملازمت دینے کی صورت میں دیگر اخراجات ادا کرے گی۔ رہائشی قوانین کی خلاف ورزی کی صورت میں تمام افراد اور ان کے زیر کفالت افراد کو بھی سرکاری خزانے سے ادائیگی کی جائے گی۔اجلاس میں رمضان المبارک کے دوران عمرہ زائرین کو سہولیات کی فراہمی میں سرکاری اداروں کی کارکردگی کا بھی جائزہ لیا گیا۔ ارکان کو بتایا گیا۔سعودی کابینہ کے ارکان نے علاقائی سلامتی کے حوالے سے خلیج تعاون کونسل کے نقطہ نظر کو سراہا جس کا مقصد خطے میں سلامتی اور استحکام، ممالک اور ان کے عوام کی فلاح و بہبود اور عالمی امن و سلامتی کو یقینی بنانا ہے۔ مواقع کا بھی جائزہ لیا گیا۔ اس وقت سعودی نوجوانوں میں بے روزگاری کی شرح 7.7 فیصد ہے جو ملکی تاریخ میں سب سے کم ہے۔

اپنا تبصرہ لکھیں