لوک سبھا انتخابات کے لیے کانگریس کے منشور کے وعدے کتنے کارآمد ہیں؟

“کانگریس پارٹی نے اپنے انتخابی منشور میں روزگار، سماجی انصاف کے ساتھ ساتھ جمہوری اقدار کی بات کی ہے۔ اس دوران سابق وزیر فینانس پی چدمبرم نے انگریزی الفاظ کام، دولت اور فلاح و بہبود کا استعمال کیا۔”
منشور میں ووٹنگ سسٹم (ای وی ایم) کو بہتر بنانے کی بات کی گئی ہے۔ پارٹی نے اپنے منشور میں وعدہ کیا ہے کہ وہ ہر شہری کے حقوق، مذہبی آزادی اور متعلقہ حقوق کا بلا تفریق تحفظ کرے گی اور وفاق اور جمہوریت کی تعریف کو انتخابات اور ووٹوں سے آگے بڑھانے کی کوشش کرے گی لیکن منشور میں اٹھائے گئے بہت سے معاملات پر سوالات اٹھائے گئے ہیں۔ بھی اٹھائے جا رہے ہیں.بہت سی اسکیمیں مودی حکومت کی طرح ہی ہیں۔ لوگ سوال اٹھا رہے ہیں کہ لگتا ہے یہ موجودہ حکومت کی نقل ہے۔ مثال کے طور پر، کانگریس نے نوجوانوں کو روزگار کی تربیت کے لیے فی نوجوان ایک لاکھ روپے دینے کا وعدہ کیا ہے۔مودی حکومت نوجوانوں کے روزگار کے لیے بھی اتنی ہی رقم دیتی ہے۔ کانگریس نے کسانوں سے وعدہ کیا ہے کہ کم از کم امدادی قیمت (ایم ایس پی) اور قرض معافی کی ضمانت کے لیے ایک قانون لایا جائے گا۔ تاہم، اس طرح کی اسکیموں کا وعدہ کرنے کے باوجود کانگریس کو کئی ریاستوں میں شکست کا سامنا کرنا پڑا۔ ایسے میں سوال یہ ہے کہ کانگریس کے انتخابی منشور میں کیے گئے ان وعدوں کا کتنا اثر ہوگا؟کانگریس کی طرف سے اپنے منشور میں اٹھائے گئے مسائل کی اہمیت کی وضاحت کرتے ہوئے، سیاسی تجزیہ کار اور انگریزی اخبار ‘ہندوستان ٹائمز’ کے سیاسی ایڈیٹر ونود شرما کہتے ہیں، “جمہوریت کا مطلب صرف ووٹ دینا نہیں ہے اور اس کے کئی پہلو ہیں۔ جو ضروری ہے۔ آئین بنانے والوں نے اسے بنیادی حقوق کے زمرے میں رکھا ہے۔کیرالہ اور تمل ناڈو کی مثال دیتے ہوئے ونود شرما کہتے ہیں، ’’دونوں ریاستوں میں گورنر اور ریاستی حکومت کے درمیان مسلسل تنازعہ رہتا ہے اور دوسری حکومتیں بھی جی ایس ٹی کی رقم وقت پر نہ ملنے کی شکایت کرتی ہیں۔‘‘ اتر پردیش میں مدارس ہائی کورٹ نے اس پر روک لگا دی ہے۔ الہ آباد ہائی کورٹ نے مدرسہ قانون کو کالعدم قرار دیا تھا۔ لیکن سپریم کورٹ نے ہائی کورٹ کے فیصلے پر روک لگا دی ہے۔
ونود شرما کا کہنا ہے کہ موجودہ مرکزی اور کئی ریاستی حکومتیں شہریت ترمیمی قانون اور ‘لو جہاد’ جیسے مسائل کو سامنے لا کر لوگوں کی مذہبی آزادی پر حملہ کرتی رہتی ہیں۔ اس کے علاوہ ووٹرز کو یہ جاننے کا حق بھی حاصل ہے کہ ان کا ووٹ صحیح شخص کو گیا یا نہیں۔اسی دوران کیرالہ میں کانگریس پارٹی کے رہنما شما محمد نے کہا کہ نریندر مودی حکومت شہریت کا قانون لاتی ہے لیکن سری لنکا کے تامل ہندو، میانمار کے روہنگیا مسلمانوں اور دیگر کو کیوں بھول جاتی ہے؟ آخر ان لوگوں کو بھی امتیازی سلوک کا سامنا ہے۔کانگریس کے منشور، جسے ‘نیا پترا’ کہا جاتا ہے، ووٹروں کے ووٹوں کا موازنہ کرنے اور ووٹروں کو یہ جاننے کی اجازت دینے کے لیے کہ ای وی ایم کے ساتھ وی وی پی اے ٹی کے استعمال کا مطالبہ کرتا ہے کہ انھوں نے کس کو ووٹ دیا ہے۔منشور میں الیکشن کمیشن اور دیگر اداروں کی آزادی ‘بحال’ کرنے کی بھی بات کی گئی ہے۔ ناقدین کا کہنا ہے کہ مودی حکومت کے نئے نظام کے مطابق الیکشن کمشنرز کی تقرری میں وزیر اعظم، ایک کابینہ وزیر اور اپوزیشن لیڈر شامل ہوتے ہیں، تاہم چونکہ الیکشن کمیٹی کے دو ارکان وزیر اعظم اور کابینہ ممبر، دونوں عوامی شخصیات ہیں، ان تقرریوں میں حکومت کا ہاتھ ہے۔کانگریس پارٹی نے کہا ہے کہ اگر وہ اقتدار میں آتی ہے تو انتخابی بانڈ اسکیم، پی ایم کیئر فنڈ، سرکاری اثاثوں کی فروخت سے متعلق سودوں اور دفاعی سودوں کی چھان بین کی جائے گی۔ ملک کی سپریم کورٹ نے انتخابی بانڈ اسکیم کو غیر قانونی قرار دے دیا ہے۔ اس کے بعد سے جاری کردہ اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ بہت سی کمپنیوں نے اپنے کل اثاثوں اور آمدنی سے زیادہ بھارتیہ جنتا پارٹی کو عطیہ کیا ہے۔
کانگریس نے نوجوانوں کو روزگار کی تربیت کے لیے فی نوجوان ایک لاکھ روپے دینے کا وعدہ کیا ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا ہے کہ اگنی پتھ اسکیم کو ختم کردیا جائے گا اور اس کی جگہ پرانا نظام بحال کیا جائے گا۔نریندر مودی حکومت کی فوجی بحالی کی اگنی پتھ اسکیم کافی متنازعہ رہی ہے۔ اس پر سابق فوجی افسران نے بھی حیرت کا اظہار کیا ہے۔ چند سالوں سے نوجوانوں میں فوج کی بھرتی اسکیم کے حوالے سے کافی غصہ تھا، لیکن آہستہ آہستہ اسے دوسرے شعبوں میں ملازمتوں کی طرح کم نہیں سمجھا جاسکتا، یہ قومی دفاع کا سوال ہے۔جب آلوک شرما سے پوچھا گیا کہ کیا نوجوانوں کو ایک لاکھ روپے دینے کا ان کا منصوبہ نریندر مودی حکومت کی اسکیم کی کاپی نہیں ہے جو نوجوانوں کو روزگار کے لیے اتنے پیسے دیتی ہے۔ اس سوال پر انہوں نے کہا کہ موجودہ حکومت کی سکیم قرض ہے جسے واپس کرنا ہو گا جبکہ یہ رقم ہم نوجوانوں کی تربیت کے لیے دیں گے اور انہیں یہ رقم واپس نہیں کرنی پڑے گی، کام ہو گیا ہے۔ غریب خواتین کو فی خاندان روپے دینے کے لیے۔دہلی کے 24 اکبر روڈ پر واقع کانگریس ہیڈکوارٹر میں ‘نیا پترا’ کو جاری کرتے ہوئے پی چدمبرم نے کہا کہ اگر ان کی حکومت بنتی ہے تو اس کا بنیادی فوکس نوکریاں، نوکریاں اور نوکریاں ہوں گی۔سابق وزیر خزانہ نے یہ بھی کہا کہ دولت کو تقسیم کرنے سے پہلے اسے کمایا جانا چاہیے اور کانگریس کی سابقہ ​​منموہن سنگھ حکومت میں سالانہ 7.5 فیصد کی اقتصادی ترقی کا ریکارڈ تھا۔ اس حکومت کے تحت دس سالوں میں 24 کروڑ لوگوں کو غربت سے نکالا گیا۔ انہوں نے وعدہ کیا کہ اگر دوبارہ حکومت بنتی ہے تو اتنی ہی تعداد میں لوگوں کو غربت سے نکالنے کا عزم کریں گے۔
زراعت کے میدان میں کانگریس کے بڑے وعدوں میں سے ایک قرض معافی اور کسانوں کے لیے کم از کم امدادی قیمت کی ضمانت دینے کا قانون ہے۔ اب بھی پنجاب میں کسانوں کے کئی گروپ ایم ایس پی پر قانون کا مطالبہ کر رہے ہیں۔ وہ سرحد پر ہڑتال پر بیٹھے ہیں۔ 2020 میں بھی کسانوں نے دہلی کی پانچ سرحدوں پر چودہ ماہ تک احتجاج کیا۔چھتیس گڑھ میں کانگریس کی بھوپیش بگھیل حکومت نے ملک میں کسانوں کو دھان کی سب سے زیادہ قیمت دی اور قرض معافی بھی دی۔ لیکن ان وعدوں کے باوجود کانگریس پارٹی کو گزشتہ سال ہوئے اسمبلی انتخابات میں بی جے پی سے شکست کا منہ دیکھنا پڑا۔ کانگریس کے منشور میں کم از کم اجرت کو کم از کم 400 روپے یومیہ کرنے کا وعدہ بھی کیا گیا ہے۔سماجی انصاف کے میدان میں پارٹی نے ذات پات کی مردم شماری کرانے اور درج فہرست ذاتوں، درج فہرست قبائل اور پسماندہ طبقات کے لیے 50 فیصد ریزرویشن کی حد کو ختم کرنے کی بات کی ہے، لیکن اگر حکومت بنتی ہے تو وہ 50 لاکھ روپے تک علاج کی سہولت فراہم کرنے کی بات کر رہی ہے۔ 25 لاکھہم نے آلوک شرما سے یہ بھی پوچھا کہ کیا ان کی پارٹی نے آئین کے بنیادی حقوق (آرٹیکل 15, 16, 25, 26, 28, 29, 30) کے حوالے سے جو وعدے کیے ہیں ان کا برا اثر پڑے گا، جس کی وجہ سے ایک طبقہ ناراض ہوگا۔ وہ جائے گا۔ ، یہ ممکن ہے؟ تو انہوں نے کہا کہ ووٹ کی فکر کر کے آئین کا تحفظ نہیں کیا جا سکتا۔سابق وزیر اعظم چندر شیکھر کا ذکر کرتے ہوئے ونود شرما نے کہا، ‘آج وقت آگیا ہے کہ لیڈر عوام کو صحیح سمت دکھائیں، جیسا کہ چندر شیکھر کہتے تھے کہ لیڈر ہم ہیں یا وہ!’پروگرام کے دوران پارٹی کے صدر ملکارجن کھرگے نے یاد دلایا کہ جس دن منشور جاری کیا جا رہا ہے وہ کانگریس کے سینئر لیڈر جگجیون رام کا یوم پیدائش بھی ہے، اس لیے یہ ایک بڑا دن ہے اور وہ پارٹی چھوڑ کر جنتا پارٹی میں شامل ہو گئے، جس نے پارٹی بنائی تھی۔ 1977 میں۔ 1989 میں کانگریس پارٹی کو شکست ہوئی، انتخابات ہوئے اور دہلی میں حکومت بنی۔

اپنا تبصرہ لکھیں