وزیر خزانہ نے امریکا روانگی سے قبل وزیراعظم سے ملاقات کی۔

“وفاقی وزیر خزانہ محمد اورنگزیب نے وزیر اعظم شہباز شریف سے ملاقات کی اور انہیں اپنے دورہ امریکہ کی تفصیلات سے آگاہ کیا۔”
اطلاعات کے مطابق یہ دورہ ایک ایسے وقت میں ہو رہا ہے جب پاکستان انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ (آئی ایم ایف) کے ساتھ ایک نئے معاہدے پر دستخط کرنے جا رہا ہے، جس میں محمد اورنگزیب اور ان کے ماہرین کی ٹیم 6 ارب روپے خرچ کرے گی۔ آئی ایم ایف 8 ارب ڈالر کے نئے پیکج پر بات چیت شروع کرے گا۔اس سلسلے میں مرکزی وزارتی اجلاس 17 اور 19 اپریل کے درمیان ہوں گے جبکہ دیگر پروگرام 15 سے 20 اپریل کے درمیان ہوں گے۔ محمد اورنگزیب اور ان کی ٹیم کے ارکان آئی ایم ایف اور ورلڈ بینک اور دیگر بین الاقوامی مالیاتی اداروں کے سربراہان سے ملاقات کریں گے۔ وہ چین، سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، ترکی اور دیگر شراکت دار ممالک کے سینئر حکام اور وزرائے خزانہ سے دوطرفہ ملاقاتیں کریں گے۔ وہ مختلف ملاقاتوں میں پاکستان کی نمائندگی کے علاوہ امریکی حکام سے بھی ملاقاتیں کریں گے۔دریں اثناء آئی ایم ایف کی منیجنگ ڈائریکٹر کرسٹالینا جارجیوا نے ایک بیان میں کہا کہ پاکستان کو اب بھی کچھ اہم ترین مسائل پر توجہ دینے کی ضرورت ہے، اور اس بات کی تصدیق کی کہ پاکستان قرض کا نیا معاہدہ کرنے جا رہا ہے۔ ایف کی طرف سے یہ پہلی تصدیق ہے کہ پاکستان اس ماہ کے آخر میں 3 ارب روپے کی اضافی ڈیل مکمل کرنے کے بعد ایک اور ڈیل چاہتا ہے۔ایک تھنک ٹینک، اٹلانٹک کونسل سے بات کرتے ہوئے، انہوں نے کہا کہ پاکستان کو ٹیکس کی بنیاد، معاشی اصلاحات کو آگے بڑھانے میں امیر طبقے کے کردار، مجموعی اخراجات اور شفافیت پیدا کرنے جیسے عوامل پر توجہ دینے کی ضرورت ہے۔کرسٹالینا جارجیوا نے بھی تصدیق کی کہ پاکستان مانیٹری فنڈ کے ساتھ موجودہ پروگرام پر کامیابی سے عمل درآمد کر رہا ہے اور معاشی صورتحال کچھ بہتر ہے جب کہ زرمبادلہ کے ذخائر بھی آئی ایم ایف کا چوتھا سب سے زیادہ مقروض ملک ہے اور بقایا رقم کا حجم بھی بڑھ رہا ہے۔ اس کی مالیت 7 ارب 72 کروڑ ڈالر ہے، اگر نئے معاہدے پر دستخط ہوتے ہیں تو یہ اس کا 24 واں بیل آؤٹ پیکج ہوگا۔

اپنا تبصرہ لکھیں