پاکستان میں گھس کر دہشت گردوں کو ماریں گے۔

وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے جمعہ کو کہا کہ اگر کوئی دہشت گرد ہندوستان میں امن کو خراب کرنے یا دہشت گردانہ سرگرمیوں کو انجام دینے کی کوشش کرتا ہے تو ہم اسے منہ توڑ جواب دیں گے۔ اگر وہ بھاگے تو ہم پاکستان میں گھس کر انہیں مار ڈالیں گے۔ہندو اخبار نے یہ خبر صفحہ آٹھ پر شائع کی ہے۔ اخبار کے مطابق راج ناتھ سنگھ نے کہا، ’’وزیراعظم نے جو کچھ کہا وہ بالکل سچ ہے اور یہ ہندوستان کی طاقت ہے۔‘‘ پاکستان نے بھی اس بات کو سمجھنا شروع کردیا ہے۔ تاہم ہندوستان ہمیشہ اپنے پڑوسی ممالک کے ساتھ اچھے تعلقات رکھنا چاہتا ہے۔ ویسے بھی یہ ہمارا پڑوسی ملک ہے۔آج تک ہم نے دنیا کی کسی سرزمین پر حملہ نہیں کیا اور نہ ہی ہم نے دنیا کی کسی سرزمین پر حملہ کرنے کی پہل کی ہے، بھارت دہشت گردانہ سرگرمیوں کو فروغ دینے کی کوشش کرتا ہے تو ہم انہیں نہیں چھوڑیں گے۔اخبار کے مطابق انہوں نے یہ بات ایک ٹی وی چینل کو انٹرویو دیتے ہوئے کہی جب ان سے دی گارڈین میں شائع ہونے والے ایک مضمون کے بارے میں پوچھا گیا۔ مضمون میں کہا گیا کہ بھارت نے 2020 سے اب تک پاکستان کے اندر تقریباً 20 دہشت گردوں کو ہلاک کیا ہے۔اخبار کے مطابق وزارت خارجہ نے اس پر تبصرہ کرنے سے انکار کر دیا ہے۔ تاہم جنوری میں پاکستان کے سیکرٹری خارجہ محمد سائرس سجاد قاضی نے دعویٰ کیا تھا کہ بھارت نے پاکستان پر حملہ کر کے بھارتی وزارت خارجہ کے ترجمان رندھیر جیسوال کو ہلاک کر دیا تھا۔جیسوال نے اس دعوے کو جھوٹ پھیلانے کی نئی کوشش قرار دیتے ہوئے کہا تھا کہ پاکستان بھارت کو بدنام کرنے کے لیے ایسا کر رہا ہے۔اخبار کے مطابق جیسوال نے کہا کہ پاکستان طویل عرصے سے دہشت گردی، منظم جرائم اور غیر قانونی بین الاقوامی سرگرمیوں کا مرکز رہا ہے اور اس لیے اپنی غلطیوں کے لیے دوسروں کو مورد الزام ٹھہرانا کوئی معنی نہیں رکھتا اور یہ اچھا حل نہیں ہے۔اخبار کے مطابق پاکستانی مقبوضہ کشمیر پر ایک سوال کے جواب میں وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے کہا کہ یہ پہلے بھی بھارت کا حصہ تھا، آج بھی بھارت کا حصہ ہے اور کل بھی بھارت کا حصہ رہے گا۔ دفعہ 370 کے بعد کشمیر میں حالات معمول پر آ گئے ہیں اور ترقی بھی تیزی سے ہو رہی ہے۔

اپنا تبصرہ لکھیں