پنجاب اور ہریانہ کے کیمپوں کا سیاست میں کتنا اثر ہے؟

“”ایسا لگتا ہے کہ وارانسی ایک منی پنجاب بن گیا ہے،” وزیر اعظم نریندر مودی نے گرو رویداس کے یوم پیدائش سے ایک دن پہلے 23 فروری 2024 کو وارانسی میں کہا۔”
اس سے پہلے 5 نومبر 2022 کو وزیر اعظم مودی ڈیرہ ‘رادھا سوامی ست سنگ بیاس’ پہنچے تھے۔ انہوں نے ڈیرہ کے سربراہ گروندر سنگھ ڈھلون سے ملاقات کی اور ڈیرہ سچا سودا کے سربراہ گرمیت سنگھ کے کئی ڈیروں کو 2024 کے لوک سبھا انتخابات میں پنجاب کی پڑوسی ریاست ہریانہ میں قید کی سزا کاٹ رہے قیدیوں کو 2024 کے انتخابات میں ایک بڑا ووٹ بینک سمجھا جا رہا ہے۔ دیا گیا ہے۔پنجاب کے بااثر افراد میں ہریانہ کے ڈیرہ سچا سودا سرسا، امرتسر کے رادھا سوامی ست سنگھ بیاس، ڈیرہ نورمحل، ڈیرہ نرنکاری جالندھر، ڈیرہ سچکھنڈ بلان (جالندھر) اور ڈیرہ نامدھاری لدھیانہ اور ڈیرہ نرنکاری کا بھی اچھا اثر ہے۔ جس کی مثالیں نرملے اور اُداسی سنتوں سے متعلق کیمپ ہیں۔پنجاب کی 13 لوک سبھا سیٹوں پر یکم جون کو ووٹنگ ہوگی۔ ان انتخابات کے درمیان ریاست میں سیاسی جماعتوں کے رہنما مختلف کیمپوں میں جا رہے ہیں، جن میں سب سے زیادہ چرچا پنجاب کے دوآب علاقے میں جالندھر کے قریب واقع ‘ڈیرہ سچکھنڈ بالن’ کا ہے۔
پنجاب میں ڈیرہ کوئی نئی بات نہیں ہے۔ نئے ڈیروں کے ظہور کا عمل بھی قدیم سکھ مت، ناتھوں، سدھوں اور یوگیوں کے ڈیروں کی طرح سکھ مت کے ظہور سے شروع ہوتا ہے۔ ان میں اُداسی، نرملے، نیرنکاری، نامدھاری وغیرہ قابل ذکر ہیں۔ پنجاب میں ڈیروں کی صحیح تعداد کا کوئی ریکارڈ نہیں ہے۔ لیکن یہ دعویٰ ضرور کیا جا سکتا ہے کہ ان کی تعداد سینکڑوں میں ہے۔پنجاب کے 12 ہزار سے زائد دیہاتوں میں سے شاید ہی کوئی گاؤں ایسا ہو جس میں چھوٹا کیمپ نہ ہو۔ لیکن ماہرین کا خیال ہے کہ یہاں تقریباً 300 بڑے کیمپ ہیں۔ ان میں سکھ، ہندو، صوفی اور عیسائی پادریوں کے پرائیویٹ کیمپ بھی شامل ہیں۔ صرف ایک درجن کے قریب ایسے کیمپ ہیں، جن کے پیروکار ہزاروں سے لے کر لاکھوں تک ہوسکتے ہیں۔چندی گڑھ میں قائم انسٹی ٹیوٹ فار ڈیولپمنٹ اینڈ کمیونیکیشن کی تحقیق کے مطابق پنجاب کی کل 117 اسمبلی سیٹوں میں سے 56 پر ان کیمپوں کا اثر ہے۔ یہ کیمپ لوک سبھا سیٹوں کے لحاظ سے 6 سیٹوں پر اثر انداز ہو سکتے ہیں، یہی وجہ ہے کہ الیکشن آتے ہی سیاسی پارٹیوں کے لیڈروں میں ان کی حمایت حاصل کرنے کا مقابلہ ہوتا ہے۔ کیمپ شروع
خیال کیا جاتا ہے کہ پنجاب میں کیمپوں کے قیام کی بڑی وجہ سماجی تفریق ہے۔ یہی وجہ ہے کہ ان کیمپوں کے زیادہ تر حامی معاشرے کے نچلے طبقے سے آتے ہیں۔ ان کیمپوں سے لوگوں کو بھجن کیرتن، شراب چھوڑنے، منشیات سے دور رہنے اور خواتین کی عزت کرنے جیسے پیغامات ملتے ہیں۔ بلاشبہ، کیمپوں کو مذاہب کی طرح منظم نہیں کیا جاتا ہے، لیکن وہ اسی طرح سے کام کرتے ہیں.نریندر کپور، پنجابی یونیورسٹی، پٹیالہ میں صحافت کے سابق پروفیسر کا خیال ہے کہ سماجی امتیاز نے کچھ کمیونٹیز کے لوگوں کو کیمپوں کا سہارا لینے پر مجبور کیا ہے، “دلتوں کو نظر انداز کیا جاتا ہے۔” چنانچہ انہوں نے اپنے کیمپ بنانا شروع کر دیئے۔ ڈیرہ نہ صرف مذہبی مقام ہے بلکہ ثقافت کا مرکز بھی ہے۔ گرودواروں کی طرح یہاں بھی شادی سے پہلے لڑکے اور لڑکی کو دیکھنے کی رسم ادا کی جاتی ہے۔پروفیسر نریندر کپور کے مطابق ’یہ کیمپ لوگوں کی عادات کو بہتر بنانے کا کام بھی کرتے ہیں‘ خواتین اپنے شوہروں کے ساتھ کیمپوں میں جاتی ہیں۔ وہ وہی کرتے ہیں جو کیمپ والے کہتے ہیں۔ زیادہ تر خواتین نہ تو شراب پیتی ہیں اور نہ ہی گوشت کھاتی ہیں۔ وہ اپنے بے راہرو شوہروں کو ان جگہوں پر لے جاتی ہے۔پنجاب میں تقریباً 32 فیصد دلت آبادی ہے۔ ڈیروں سے وابستہ زیادہ تر لوگ دلت برادری سے ہیں۔ ان کیمپوں کے ذریعے بہت سے سماجی اصلاحی کام کیے جاتے ہیں۔ کیمپوں سے وابستہ لوگ بھی ایک دوسرے کی مدد کرتے ہیں۔دوآب کے ایک دلت مصنف بلبیر مادھوپوری کہتے ہیں، “تمام ڈیرے گرو گرنتھ صاحب کے بارے میں بات کرتے ہیں لیکن ڈیرے مختلف ہیں، چاہے وہ کسی بھی برادری سے تعلق رکھتے ہوں۔ میں نے اپنی سوانح عمری ‘چھانگیا رخ’ لکھی تھی۔” گرودواروں میں جانے کی اجازت نہیں تھی، اس لیے ہوشیار پور اور جالندھر کے علاقوں میں بہت سے کیمپ 1920 کی دہائی میں عقیدت مندوں نے خرید لیے تھے۔
ڈیرہ کا مطلب ہے ایک جگہ رہنا شروع کرنا۔ اس کا تعلق بھی ایک مذہبی گروہ سے ہے اور اس کیمپ کا سربراہ ڈیرادار کہلاتا ہے۔ سکھ مذہب کے ساتھ ساتھ نانک پنتھی، شیو پنتھی، اُداسی وغیرہ جیسے گروہ بھی تاریخ میں سامنے آئے ہیں، لیکن سکھ پنجاب، ہریانہ اور دہلی کے بہت سے ڈیروں سے 1978 میں نیرنکاروں، 2001 میں بھانیہ والا، 2002 میں ڈیرہ نورمحل اور 2002 میں سکھوں کے ساتھ جڑے ہوئے ہیں۔ 2009 میں ڈیرہ سچا سودا میں سکھوں کے درمیان پرتشدد جھڑپیں ہوئیں۔سیاسی تجزیہ کار ڈاکٹر پرمود نے بی بی سی کو بتایا کہ نئے لبرل معاشی نظام کے ساتھ کیمپوں نے اپنی شکل بدل لی ہے۔ کیمپوں نے اپنی ایک کارپوریٹ شناخت بنائی ہے۔” اپنی مصنوعات بنانا مندرجہ ذیل کیمپ اس وقت پنجاب اور ہریانہ میں سرگرم ہیں۔
ڈیرہ سچا سودا پنجاب کی سرحد سے متصل ہریانہ کے سرسا میں واقع ہے۔ اس کیمپ کا سربراہ گرمیت سنگھ رام رحیم عصمت دری اور قتل کے ایک مقدمے میں عمر قید کی سزا کاٹ رہا ہے۔ 2017 میں جب رام رحیم کو سزا سنائی گئی تو اس کے پیروکاروں نے پنجاب اور ہریانہ میں بڑے پیمانے پر تشدد کیا۔ اس میں 38 لوگوں کی موت ہو گئی تھی۔ 2015 میں گرو گرنتھ صاحب اور فاضلکا وغیرہ اضلاع کی مبینہ توہین کے معاملے میں اس ڈیرہ کے پیروکاروں کے نام سامنے آئے تھے۔لیکن ان حالیہ واقعات کے بعد کیمپ کے بہت سے پیروکاروں نے وہاں جانا چھوڑ دیا ہے۔ اس بار کیمپ کا سیاسی ونگ تحلیل کر دیا گیا ہے۔ یہ ونگ طے کرتا تھا کہ ڈیرہ کے حامی کس پارٹی کو ووٹ دیں گے۔ ڈیرہ کے نام پر کافی زمین ہے۔ کیمپ میں کھانے پینے کی بہت سی اشیاء بھی فروخت ہوتی ہیں، جنہیں اکثر کانگریس، اکالی دل اور بی جے پی کے لیڈروں نے کیمپ کا دورہ کرتے ہوئے دیکھا تھا۔ ڈیرہ نے 2002 کے اسمبلی انتخابات میں کیپٹن امریندر سنگھ کی حمایت کی تھی۔ اسی سال 2007 میں بھی ڈیرہ نے کانگریس کی حمایت کی لیکن کانگریس ہار گئی۔
ڈیرہ رادھا سوامی بیاس ویب سائٹ کے مطابق، یہ 1891 میں قائم کیا گیا تھا۔ آج 90 ممالک میں اس کے پیروکار ہیں۔ ڈیرہ کا دعویٰ ہے کہ اس کا کسی سیاسی جماعت سے کوئی سیاسی یا کاروباری تعلق نہیں ہے۔ تاہم، وزیر اعظم نریندر مودی، سابق وزیر اعلی چرنجیت سنگھ چنی اور دیگر سیاسی رہنما اکثر کیمپ کا دورہ کرتے ہیں۔ کانگریس لیڈر راہل گاندھی بھی کیمپ میں آچکے ہیں۔ڈیرہ نے کبھی بھی کسی بھی الیکشن میں کسی پارٹی کو ووٹ دینے کا نہیں کہا، لیکن ہر الیکشن کے دوران ڈیرے کا کسی خاص پارٹی کی طرف جھکاؤ کا معاملہ سامنے آتا ہے، لیکن ڈیرے نے کبھی بھی عوامی سطح پر ایسے دعووں کی تصدیق نہیں کی۔ اس ڈیرہ کے پنجاب اور ہریانہ سمیت ہندوستان کے تقریباً ہر شہر اور قصبے میں ستسنگ گھر ہیں جہاں ہفتہ وار اجلاس منعقد ہوتے ہیں۔
ڈیرہ سچکھنڈ بالاں پنجاب کے دوآب علاقے کے بڑے مذہبی کیمپوں میں سے ایک ہے۔ اس کا بڑا اثر جالندھر اور ہوشیار پور لوک سبھا سیٹوں پر پڑا ہے۔ چونکہ اس کا بڑا کیمپ وارانسی، اتر پردیش میں ہے، اس لیے پنجاب سے باہر روداسی برادری میں اس کا اثر دیکھا جا سکتا ہے۔ یہ کیمپ جالندھر شہر سے 13 کلومیٹر دور ہے۔ پٹھانکوٹ روڈ پر واقع گاؤں بالن میں نہر کے کنارے واقع اس کیمپ میں بڑی تعداد میں دلت برادری اور خاص طور پر رویدشیا برادری کے لوگ رہتے ہیں۔اس ڈیرہ کی پہچان کا اندازہ اس ڈیرہ میں ہونے والی مذہبی تقریبات میں بڑی تعداد میں عقیدت مندوں کی شرکت سے لگایا جا سکتا ہے اور بڑے انتخابات کی آمد سے اس کی اہمیت کو سماجی اور سیاسی نقطہ نظر سے بھی سمجھا جا سکتا ہے۔ سماجی مصلح بابو منگورام مگوالیا سے تعلقات ہیں۔ منگورام کا پس منظر ہوشیا پور ضلع کے ماہل پور شہر سے تھا۔ 1909 میں وہ تعلیم کے لیے امریکہ گئے۔ لوک سبھا انتخابات کے اعلان کے ساتھ ہی اس کیمپ میں لیڈروں کی سرگرمیاں بڑھ گئیں۔
سنت نرنکاری مشن پچھلے 90 سالوں سے چل رہا ہے۔ نیرنکاری مشن اتحاد، محبت، امن، رواداری اور بے لوثی کی بات کرتا ہے۔ اس تنظیم کی موجودہ سربراہ صدیقشاہ ہیں۔ اس کیمپ کے پیروکار نہ صرف ہندوستان بلکہ بیرونی ممالک میں بھی ہیں۔1978 میں امرتسر میں ایک تقریب کے دوران 16 افراد ہلاک ہوئے۔ مرنے والوں میں 13 سکھ اور تین نرنکاری شامل ہیں۔ یہ واقعہ ریاست میں بغاوت کا آغاز تھا۔ اس کی وجہ سے ریاست میں 1980 اور 90 کی دہائی میں ہزاروں اموات ہوئیں۔ کیمپ کی سیاسی سرگرمیاں زیادہ موثر نہیں ہیں لیکن ان کا اندرونی اثر کافی ہے۔
دیویا جیوتی جاگرتی سنستھان کے سربراہ آشوتوش ‘مہاراج’ کو ڈاکٹروں نے طبی طور پر مردہ قرار دے دیا ہے، لیکن ان کی لاش اب بھی کیمپ میں پڑی ہے۔ جنوری 2014 میں، آشوتوش کو ڈاکٹروں نے طبی طور پر مردہ قرار دیا تھا۔ یہ کیمپ جالندھر سے 34 کلومیٹر دور نورمحل میں ہے۔ اس کیمپ کا بہت اثر ہے۔اس کیمپ کا اثر جالندھر اور پٹیالہ سیٹوں پر نظر آرہا ہے۔ڈیرہ سچا سودا نے 2002 اور 2007 کے پنجاب اسمبلی انتخابات میں کانگریس کی حمایت کی تھی۔ وہ کئی بار امیدوار کو ذاتی حمایت بھی دے چکے ہیں۔ ڈیرہ سچکھنڈ بالاں نے کبھی بھی براہ راست کسی پارٹی کی حمایت کا اعلان نہیں کیا، لیکن دوآب کے علاقے کی دلت آبادی کی وجہ سے سیاسی جماعتوں کے رہنما اکثر ڈیرہ کا دورہ کرتے ہیں۔ماہرین کا کہنا ہے کہ ان کیمپوں کا انتخابات پر خاصا اثر ہوتا ہے لیکن اس کے علاوہ اور بھی بہت سے عوامل ہیں جو ووٹرز کو متاثر کرتے ہیں۔ سینئر صحافی جسپال سدھو کا ماننا ہے کہ مذہب اور کیمپ ایک ہی ہیں۔”بہت سے کیمپ بہت بڑے ہو گئے ہیں،” وہ کہتے ہیں، “اس لیے وہ براہ راست اور بالواسطہ سیاسی جماعتوں کی حمایت کرتے ہیں۔” حال ہی میں ڈیرہ کے کئی لیڈروں کو وزیر اعظم سے ملتے دیکھا گیا۔ سدھو کا ماننا ہے کہ جیل جانے کے بعد بھی گرمیت رام رحیم کا اثر کم نہیں ہوا ہے۔ اس وجہ سے حکومت نے انہیں پیرول دیا تھا۔پروفیسر نریندر کپور کہتے ہیں، ’’ڈیرہ والوں کا اپنے عقیدت مندوں پر اثر ہے۔ لیکن ایسا نہیں ہوتا کہ کوئی لیڈر کیمپ میں جا کر اپنے حامیوں کے ووٹ حاصل کر لے۔ “لوگ مقامی امیدوار کو اس کی کارکردگی کی بنیاد پر بھی ووٹ دیتے ہیں، پنجابی یونیورسٹی، پٹیالہ کے سیاست کے سابق اسسٹنٹ پروفیسر ڈاکٹر جتیندر سنگھ کہتے ہیں کہ صرف کیمپ ہی نہیں، بلکہ بہت سے عوامل ووٹوں پر اثر انداز ہوتے ہیں۔”
ان کے مطابق، “کانگریس اور اکالی دل کا اپنا اپنا کیڈر ہے۔ بعض اوقات لوگ کسی خاص واقعے کی وجہ سے امیدوار سے جڑ جاتے ہیں۔ اگر کوئی ووٹر کسی مخمصے میں ہوتا ہے، تو کئی بار اگر اس سے اس کے بارے میں پوچھا جاتا ہے، تو وہ اس بات کو قبول کر لیتا ہے۔ ” یہ نہیں کہا جا سکتا کہ یہ جمہوریت کے لیے اچھا ہے یا برا،” وہ کہتے ہیں، “ووٹ ڈالنا اور کیمپ لگانا دونوں ہی انسانی زندگی کا حصہ ہیں۔ کسی کیمپ کی اپنی سیاست ہو سکتی ہے، لیکن اس کے پیروکار ضروری نہیں کہ پوچھے جانے پر ووٹ دیں گے۔

اپنا تبصرہ لکھیں