پنجاب میں جنگلی جانوروں کے تحفظ کے لیے ریسکیو فورس بنانے کا فیصلہ

لاہور: پنجاب میں جنگلی جانوروں کے تحفظ کے لیے ریسکیو فورس بنانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ صوبائی حکومت نے جنگلی جانوروں کے تحفظ کے لیے وائلڈ لائف ریسکیو فورس قائم کرنے کا فیصلہ کیا ہے جس میں تربیت یافتہ اہلکار، ویٹرنری ایمبولینس، ڈاکٹرز اور ڈاکٹرز شامل ہوں گے۔ ریسکیو گاڑیاں شامل ہوں گی۔پہلے مرحلے میں لاہور، خانیوال اور راولپنڈی میں وائلڈ لائف ریسکیو فورسز قائم کی جائیں گی۔ صوبائی سینئر وزیر مریم اورنگزیب نے وائلڈ لائف ایکٹ میں شیر، چیتے اور جنگلی بلیوں کو پکڑنے کے حوالے سے قانون بنانے کی بھی ہدایت کی ہے۔جنگلی جانوروں کے غیر قانونی قبضے کے خلاف 10 روزہ سرچ آپریشن سے قبل جاری آپریشن کے دوران سرگودھا، ننکانہ صاحب، بہاولپور، مظفر گڑھ، گوجرانوالہ اور ڈی جی خان سے 11 نایاب ریچھ، 96 چوہے، 20 بندر پکڑے گئے۔ غیر قانونی قبضے سے 85 چڑیاں، 6 چوزے، 35 تیتر، 45 تیتر اور 25 مور چھڑائے گئے۔مریم اورنگزیب نے کہا کہ بنگال ٹائیگرز جنہیں ذاتی طور پر لاہور سے ملتان لے جایا جا رہا تھا، کو بھی بچا لیا گیا۔ ترمیم شدہ وائلڈ لائف ایکٹ 1973 کے مطابق غیر قانونی طور پر جانور رکھنے والے مجرموں کو حراست میں لیا گیا جبکہ بھاری جرمانے بھی عائد کیے گئے۔ نئی نسل اور عوام کو جنگلی حیات کے تحفظ اور بقا کے بارے میں آگاہی دینے کے لیے پنجاب بھر کے ضلعی سطح پر سکولوں اور کالجوں میں لیکچرز اور سیمینارز کا انعقاد کیا گیا۔ان کا مزید کہنا تھا کہ ان تمام جانوروں کو عارضی طور پر مختلف چڑیا گھروں میں رکھا جائے گا اور انہیں جنگلات میں آزادانہ طور پر رہنے کے لیے چھوڑ دیا جائے گا۔ ان میں سے بہت سے جانور دنیا میں نایاب ہو چکے ہیں۔ اس لیے ان کی حفاظت لازمی ہے۔ کسی کو بھی غیر قانونی طور پر جانوروں کو حراست میں رکھنے یا بد سلوکی کی اجازت نہیں ہوگی۔ جنگلی حیات کا اصل مسکن جنگلات اور دیگر قدرتی رہائش گاہیں ہیں۔ جنگلی جانوروں اور پرندوں کو غیر قانونی طور پر پکڑنا قانونی جرم ہے۔

اپنا تبصرہ لکھیں