کیا امریکی دباؤ غزہ میں اسرائیل اور حماس کے درمیان جنگ کو روک سکے گا؟

“اسرائیل اور فلسطینی مسلح گروپ حماس کے درمیان جنگ بندی آسان نہیں ہو رہی تھی۔”
کئی ہفتوں کے مذاکرات کسی بھی معاہدے تک پہنچنے میں ناکام رہے۔ لیکن اب بین الاقوامی دباؤ بڑھ رہا ہے۔ اس سلسلے میں سب سے بڑا اشارہ بائیڈن انتظامیہ کی جانب سے سی آئی اے کے سربراہ ولیم برنز کو تازہ مذاکرات کے لیے قاہرہ بھیجنا ہے۔ اس کے ساتھ ہی، کم از کم عوامی سطح پر، حماس مستقل جنگ بندی، اسرائیلی افواج کے مکمل انخلاء اور بے گھر فلسطینیوں کی بلا روک ٹوک واپسی کے اپنے ابتدائی مطالبات پر قائم ہے۔
“اسرائیل پر امریکی دباؤ ہے۔ مصر اور قطر حماس پر دباؤ ڈالیں گے۔ یہ واضح ہے،” گیرشون باسکن کہتے ہیں، جنہوں نے 2011 میں اسرائیلی فوجی گیلاد شالیت کی رہائی کے لیے حماس کے ساتھ مذاکرات شروع کیے تھے۔ سی آئی اے نے وہاں بات چیت کی۔ تمام اعلیٰ حکام ملوث افراد کو شرکت کرنے پر مجبور کیا گیا۔ یہ امریکی طرف سے بڑھتے ہوئے دباؤ کی نشاندہی کرتا ہے۔”لیکن اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ مذاکرات کسی معاہدے پر پہنچ گئے ہیں۔ اسرائیل کے اہم اتحادیوں بشمول امریکہ کے ساتھ بڑھتی ہوئی مایوسی کے درمیان اسرائیلی حکام نے بعض معاملات پر رعایت کا عندیہ دیا ہے۔ اس ہفتے کے شروع میں اسرائیلی وزیر دفاع Yves Galant نے کہا تھا کہ جنگ بندی کا یہ صحیح وقت ہے۔
کسی بھی معاہدے کے تحت اسرائیلی جیلوں میں قید فلسطینی قیدیوں کی رہائی کے بدلے حماس کے ہاتھوں یرغمال بنائے گئے کچھ اسرائیلی شہریوں کی رہائی کی ضرورت ہوگی۔ اسرائیلی حکام کے مطابق نومبر میں عارضی جنگ بندی کا معاہدہ طے پایا تھا جس کی بنیاد پر غزہ میں قیدی ابھی تک قید ہیں۔ تاہم حماس کے اغوا ہونے والوں میں سے کم از کم 30 کی ہلاکت کی تصدیق ہو چکی ہے۔امریکی تجویز کے تحت، حماس چھ ہفتے کی جنگ بندی کے ابتدائی مرحلے میں 40 یرغمالیوں کو رہا کرے گی، جن میں خواتین، فوجیوں اور 50 سے زیادہ بیماری میں مبتلا مرد یرغمالیوں کو ترجیح دی جائے گی۔اس کے بعد اسرائیل کم از کم 700 فلسطینی قیدیوں کو رہا کرے گا، جن میں 100 اسرائیلی شہریوں کو قتل کرنے کے جرم میں عمر قید کی سزا کاٹ رہے ہیں۔ اس قسم کا فیصلہ اسرائیل میں پہلے بھی متنازعہ ثابت ہو چکا ہے۔
لیکن حماس نے مبینہ طور پر مذاکرات کاروں کو بتایا ہے کہ 40 یرغمالی اس زمرے میں نہیں ہیں جس کی رہائی کے لیے اسے ترجیح دینے کے لیے کہا جا رہا ہے، جس سے خدشہ ہے کہ پہلے اندازے سے زیادہ یرغمالیوں کو دیگر مسلح افواج کے ہاتھوں ہلاک یا ہلاک کر دیا گیا ہے۔ اسرائیل میں سماج اور سیاست کے مختلف طبقوں سے تعلق رکھنے والے وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو کے پاس حکمت عملی اپنانے کی زیادہ گنجائش نہیں ہے۔زیادہ تر اسرائیلی جنگ کی حمایت کرتے ہیں لیکن یرغمالیوں کی رہائی پر سمجھوتہ کرنے کے لیے دباؤ میں بھی ہیں۔ حماس کے ہاتھوں اغوا کیے گئے یرغمالیوں کے اہل خانہ بڑے پیمانے پر احتجاج کر رہے ہیں۔ وہ وزیر اعظم پر الزام لگا رہے ہیں کہ وہ یرغمالیوں کی واپسی کو ترجیح دینے کے بجائے اپنی سیاسی بقا بچانے کی فکر میں ہیں۔ نیتن یاہو کے استعفے کا مطالبہ بھی بڑھتا جا رہا ہے۔
نیتن یاہو کی مخلوط حکومت میں بھی تقسیم دکھائی دے رہی ہے۔ ان کے اتحاد میں انتہائی دائیں بازو اور قوم پرست جماعتیں شامل ہیں جو حماس کو کسی بھی طرح معاف کرنے کو تیار نہیں ہیں۔ یہ جماعتیں کسی بھی قیمت پر جنگ جاری رکھنا چاہتی ہیں۔ اسرائیلی وزیر خزانہ Bezalel Smotrich نے وزیر اعظم نیتن یاہو سے کہا ہے کہ یرغمالیوں کی رہائی کا واحد راستہ حماس کو مسلسل حملوں کے ذریعے تباہ کرنا ہے۔دوسری جانب اسرائیلی سکیورٹی کے وزیر بن گوئر نے کہا ہے کہ اگر فوج وعدے کے مطابق رفح پر حملہ نہیں کرتی ہے تو نیتن یاہو کو عہدہ چھوڑ دینا چاہیے۔ اسرائیلی حکام کا کہنا ہے کہ رفح پر حملہ اس لیے ضروری ہے کہ حماس کے چار بریگیڈ اور کئی سینئر رہنما وہاں چھپے ہوئے ہوں، تاہم اسرائیل سے باہر ہر ملک رفح پر حملے کے خلاف ہے۔
رفح میں 15 لاکھ فلسطینی پناہ لیے ہوئے ہیں۔ یہ تمام لوگ ٹنٹو میں کسٹوڈین شپ کی زندگی گزار رہے ہیں۔ رافع پر کسی بھی حملے کے نتائج ان لوگوں کے لیے سنگین ہو سکتے ہیں۔ ملکی محاذ پر تنقید سے بچنے کے لیے نیتن یاہو نے پیر کو کہا کہ رفح آپریشن کے لیے ایک تاریخ مقرر کر دی گئی ہے۔باسکن نے کہا، ’’اس وقت اسرائیلی حکومت کے اندر بغاوت جاری ہے۔ نیتن یاہو اب فیصلے لینے میں آزاد نہیں ہیں۔ وہ اپنی حکومت کا یرغمال بن چکا ہے۔ حماس نے ابھی تک اس تازہ تجویز پر باضابطہ طور پر کوئی ردعمل ظاہر نہیں کیا ہے۔ نے کہا ہے کہ “ہمارے لوگوں کے خلاف مظالم کو روکنا” اس طرح کے کسی بھی معاہدے کے خلاف ہے اور یہ کہ یہ تجویز اس مقصد کو حاصل کرنے والی نظر نہیں آتی۔
حماس نے ایک بیان جاری کیا جس میں کہا گیا ہے کہ ’’اسرائیل کا موقف ثابت قدم ہے‘‘۔ امریکہ نے حماس کے بیان کو “بہت حوصلہ افزا نہیں” قرار دیا۔ حتمی فیصلہ حماس کی جانب سے یحییٰ سنور کریں گے۔ خیال کیا جاتا ہے کہ حماس کے سرکردہ رہنما غزہ کی سرنگوں میں چھپے ہوئے ہیں اور ان کے پاس یرغمال ہیں۔ لیکن ان تک پہنچنا بہت مشکل ہے۔باسکن کا کہنا ہے کہ حماس اسرائیلی جیلوں میں قید فلسطینیوں کی رہائی پر بھی بات کرنا چاہتی ہے۔ حماس چاہتی ہے کہ جیلوں سے رہا ہونے والے فلسطینیوں کو دوسرے ممالک میں نہ بھیجا جائے۔ حماس کا خیال ہے کہ ضمانتوں کے بغیر مستقل جنگ بندی ممکن نہیں کیونکہ یرغمالیوں کی رہائی کے بعد اسرائیل اپنے حملے دوبارہ شروع کر دے گا۔ حماس کی قیادت نے بین الاقوامی سطح پر اسرائیل پر کڑی تنقید کی ہے۔ غزہ میں بڑے پیمانے پر تباہی کے باوجود وہ محسوس کرتے ہیں کہ مشکلات ان کے حق میں ہیں۔
7 اکتوبر کو اسرائیل کے حملے میں 1200 افراد مارے گئے تھے۔ فلسطینی وزارت صحت کے مطابق اس حملے کے بعد اسرائیلی فوج کی کارروائی میں 33,000 فلسطینی ہلاک ہو چکے ہیں، اس کے علاوہ غزہ کا زیادہ تر حصہ تباہ ہو چکا ہے اور بہت سے لوگ قحط کے دہانے پر پہنچ چکے ہیں۔” اس بنیاد پر میں کہہ سکتا ہوں کہ اصل چیلنج یہ ہے کہ دونوں طرف کے فیصلہ ساز اس معاہدے کے لیے تیار ہیں یا نہیں؟”یہ واضح نہیں ہے کہ آیا وزیر اعظم نیتن یاہو اس ڈیل کے لیے تیار ہیں یا نہیں۔ یہ بھی واضح نہیں ہے کہ آیا حماس کے سیاسی رہنما یحییٰ سنور بھی اس ڈیل کے لیے تیار ہیں یا نہیں۔ لیکن جب یہ دونوں تیار ہوں گے تو یہ ممکن ہے کہ کوئی سمجھوتہ کرنے والے درمیانی نہیں ہوں گے۔ ایک راستہ تلاش کریں.

اپنا تبصرہ لکھیں