تملناڈو: کیا کاؤپاکس انسانوں میں پھیل سکتا ہے؟

تامل ناڈو میں گائے کی چیچک بڑے پیمانے پر پھیلی ہوئی ہے۔ اس میں خاص طور پر بچھڑے متاثر ہوئے ہیں اور ہلاکتوں سے کسانوں میں خوف وہراس پھیل گیا ہے۔ مویشیوں میں چیچک کی وجہ کیا ہے؟ چیچک سے متاثرہ گایوں کی دیکھ بھال کیسے کی جائے؟ مرکزی حکومت کے محکمہ حیوانات کے تخمینے کے مطابق تمل ناڈو میں ایک کروڑ سے زیادہ گائیں ہیں۔ پچھلے سال 2019 کے آخر میں، چیچک (LSD-Lumpy Skin Disease) گائے کی تمام جلد پر واقع ہوئی۔ شمالی ریاستوں میں اس بیماری کی وجہ سے ہزاروں گائیں مر چکی ہیں۔ تامل ناڈو میں گائے کی موت کی کوئی اطلاع نہیں ہے، حالانکہ کچھ بچھڑے مر گئے ہیں۔ تاہم 20 ہزار سے زیادہ گائیں متاثر ہوئی ہیں اور اس سے صحت یاب ہو چکی ہیں۔ اس بیماری سے متاثرہ گائیں دودھ کی کم پیداوار، بانجھ پن، اسقاط حمل اور بعض اوقات موت کا شکار ہو جاتی ہیں۔ کاؤپاکس کے لیے کوئی براہ راست ویکسین نہیں ملی ہے۔ بکریوں کو خسرہ سے بچاؤ کی ویکسین لگائی جا رہی ہے۔ ایسے میں تمل ناڈو کے کئی اضلاع میں ہزاروں گائے اور بچھڑے چیچک سے متاثر ہوئے ہیں۔

‘بچھڑے موٹاپے کی وجہ سے مر جاتے ہیں’
ایروڈ کے کسان کمار نے کہا، “ہمارے علاقے میں، 15 کسانوں کے 30 سے ​​زیادہ بچھڑے اور نوجوان گائیں چیچک سے متاثر ہیں۔ ان میں سے کچھ کی حال ہی میں موت ہوئی ہے۔ بچھڑوں کو خسرہ سے بچانے کے لیے ہمیں بہت حد تک جانا پڑتا ہے۔ اسی طرح کوئمبٹور، تروپور اور ایروڈ کے کئی حصوں میں کسان دعویٰ کر رہے ہیں کہ مویشی، خاص طور پر بچھڑے چیچک سے متاثر ہیں۔ حکومت کو چاہیے کہ وہ مویشیوں کی حفاظت کے لیے ضروری احتیاطی تدابیر اختیار کرے۔‘‘

‘ہزاروں مویشی متاثر’
اس سلسلے میں، تمل ناڈو ویٹرنری یونیورسٹی کے روایتی میڈیسن ٹریننگ اینڈ ریسرچ سینٹر کے سابق سربراہ ڈاکٹر۔ ن پننیامورتی نے بی بی سی سے بات کی۔ تمل ناڈو میں چیچک کی وبا تین سال پہلے شروع ہوئی تھی۔ ڈاکٹر این پننیامورتی نے کہا کہ یہ انفیکشن افریقہ سے پھیلنے کا پتہ چلا ہے۔ انہوں نے مزید کہا، “شمالی ریاستوں میں چیچک کے انفیکشن کی وجہ سے بڑی تعداد میں مویشیوں کی موت ہوئی تھی۔ لیکن جب تمل ناڈو میں وبا پھیلی تو وہاں بڑی تعداد میں اموات نہیں ہوئیں۔ لیکن اب تک 23 ہزار سے زیادہ گائیں چیچک سے متاثر ہو کر صحت یاب ہو چکی ہیں۔ اس وقت تمل ناڈو میں ہزاروں گائیں بڑے پیمانے پر متاثر ہیں۔ انہوں نے کہا. “اس بیماری کا کوئی براہ راست علاج نہیں ہے۔ نفسیات میں ایک حل ہے،”

سدھا دواؤں کے جانوروں کی حفاظت کیسے کریں؟
“جب چیچک متاثر ہوتی ہے تو پورے جسم پر چھالے پڑ جاتے ہیں اور گائے کی جلد نرم ہو جاتی ہے، اس وقت متاثرہ گائے کو دوسری گایوں سے الگ کرنا ضروری ہے۔ پان کے 10 پتے، 10 گرام کالی مرچ، نمک اور چینی ملا کر چیچک سے متاثرہ گائے کو دن میں چار بار دیں۔ پھر اگر آپ اسے تین کھانے میں تبدیل کریں اور اسے ایک ہفتہ تک لگاتار دیں تو آپ کو اچھے نتائج ملیں گے،” ڈاکٹر این پننیامورتی کہتے ہیں۔ اسی طرح جلد پر پھوٹ پڑنے کے لیے لہسن کے چار لونگ، ہلدی پاؤڈر، زعفران کا سر، گھی یا نیم کے تیل کو اچھی طرح ابال کر متاثرہ جگہ پر لگاتار مالش کرنے سے چھالے ٹھیک ہو جائیں گے۔ ایک سال سے کم عمر کے بچھڑے اس وقت اس بیماری سے سب سے زیادہ متاثر ہوتے ہیں۔ وہ آٹوفیجک نہیں ہیں۔ تو یہ دم گھٹنے کا سبب بن سکتا ہے۔ اس لیے ہم بچھڑوں کی حفاظت صرف خاص خیال رکھنے اور ان کی دیکھ بھال کر کے کر سکتے ہیں۔‘‘ انہوں نے کہا۔

اپنا تبصرہ لکھیں